حماس

جنگ بندی مذاکرات جاری رکھنے کے لیے فلسطینی مزاحمتی فورسز کی شرائط

پاک صحافت فلسطین کی تحریک حماس کے سیاسی بیورو چیف اسماعیل ھنیہ نے صیہونی حکومت کا مقابلہ کرنے کے لیے فلسطینیوں کی تیاری کا حوالہ دیتے ہوئے جنگ بندی کے حوالے سے فلسطینی تنظیموں کی شرائط بیان کیں۔

اسماعیل ھنیہ نے کہا کہ ہم صیہونی حکومت کے ساتھ مذاکرات میں نرمی کا مظاہرہ کر رہے ہیں لیکن اسرائیل کے ساتھ طویل جنگ کے لیے پوری طرح تیار ہیں۔ انہوں نے کہا کہ صیہونی حکومت قتل عام، لوگوں کو بے گھر کرنے، اذیتیں اور فاقہ کشی جیسے خوفناک جرائم کا ارتکاب کر رہی ہے لیکن یہ بھی حقیقت ہے کہ کئی مہینوں سے یہ قابض حکومت فلسطینی مزاحمتی قوتوں کے سامنے بے بس ہو کر رہ گئی ہے۔ اس کی بس صرف بچوں، خواتین اور عام شہریوں پر چلتی ہے۔ وہ محسوس کرتا ہے کہ مسجد الاقصیٰ کا محاصرہ کرکے اور صیہونی آباد کاروں کو آزادانہ لگام دے کر، طوفان اسرائیل پر القصہ آپریشن کے اثرات کو کم کر سکتا ہے۔

حماس کے رہنما نے غزہ کی پٹی کی زمینی صورتحال کو مدنظر رکھتے ہوئے دو اہم نکات پیش کیے۔ سب سے پہلے انہوں نے دو ٹوک الفاظ میں کہا کہ فلسطینی تنظیمیں صیہونی حکومت کے خلاف لڑنے کی صلاحیت رکھتی ہیں اور یہ حقیقت طوفانی الاقصیٰ آپریشن سے عیاں ہو چکی ہے۔

دوسرا پہلا یہ کہ حماس اور فلسطینی تنظیموں کے پاس اسرائیلی قیدیوں کی ایک بڑی تعداد ہے اور وہ اسرائیل کے ساتھ مذاکرات میں مضبوط پوزیشن میں ہیں۔

حالیہ ہفتوں میں اپنی کمزوری کے سامنے آنے کے بعد صیہونی حکومت جنگ بندی مذاکرات کے نام پر اسرائیل کے اندر جاری بحران کو کسی نہ کسی طرح چھپانے کی کوشش کر رہی ہے۔ صیہونی حکومت کے اہلکاروں کو حال ہی میں اسرائیلی قیدیوں کے اہل خانہ کی جانب سے شدید مخالفت کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ اس کے نتیجے میں صیہونی وزیر اعظم بنیامین نیتن یاہو اور دیگر وزراء کے درمیان گہری تقسیم پیدا ہو گئی ہے۔ قیدیوں کے اہل خانہ کا کہنا ہے کہ وزیراعظم اور کابینہ کے دیگر ارکان سب جھوٹے ہیں۔

حماس اسرائیل کی اندرونی صورتحال سے پوری طرح آگاہ ہے اور فلسطینی تنظیموں کی صلاحیتوں سے بھی پوری طرح آگاہ ہے۔ حماس کی شرط یہ ہے کہ اسرائیل فلسطینی شہریوں، خواتین اور بچوں پر حملے بند کرے اور صیہونی فوجیں غزہ کی پٹی سے مکمل طور پر پیچھے ہٹ جائیں۔

حماس کے رہنماؤں نے دوسری فلسطینی تنظیموں کے ساتھ جنگ ​​بندی کے اہم نکات کے بارے میں بات چیت شروع کر دی ہے۔ اس کے ساتھ حماس دوسرے ممالک کے حکام سے بھی بات کر رہی ہے۔ فلسطینی تنظیموں نے صورتحال کے پیش نظر واضح کیا ہے کہ جب تک مستقل جنگ بندی نہیں ہو جاتی، اسرائیلی افواج غزہ کی پٹی سے انخلاء نہیں کرتیں، اور غزہ کی ناکہ بندی ختم نہیں ہوتی، اسرائیلی قیدیوں کو کسی بھی صورت میں رہا نہیں کیا جائے گا۔

ماضی میں ایسی بہت سی مثالیں موجود ہیں جن سے ظاہر ہوتا ہے کہ صیہونی حکومت نہ تو اپنے وعدوں پر عمل کرتی ہے اور نہ ہی کسی بین الاقوامی قانون کو ماننے کے لیے تیار ہے۔ یہی وجہ ہے کہ دوسری فلسطینی تنظیم حماس صیہونی حکومت کے ساتھ بالواسطہ بات چیت میں یہ ضمانت حاصل کرنا چاہتی ہے کہ صیہونی حکومت پر اپنے وعدوں پر عمل کرنے کے لیے دباؤ ڈالا جائے گا۔

یہ بھی پڑھیں

اسرائیلی

اسرائیلی فوج کے ملٹری انٹیلی جنس ڈیپارٹمنٹ کے سربراہ نے استعفیٰ دے دیا

پاک صحافت صیہونی ذرائع ابلاغ نے اطلاع دی ہے کہ 7 اکتوبر 2023 کو فلسطینی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے