زیلنسکی

کیا زیلنسکی کی قسمت کا فیصلہ ہونے والا ہے؟

پاک صحافت ایسا لگتا ہے کہ اب یوکرین کے صدر کو سائیڈ لائن کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

امریکی محکمہ دفاع پینٹاگون کے سربراہ کے ایک سابق مشیر نے انکشاف کیا ہے کہ نیٹو کے بعض رکن ممالک نے امن قائم کرنے کے لیے یوکرین کے صدر سے باعزت طور پر استعفیٰ دینے کو کہا ہے۔

تسنیم خبررساں ادارے کے مطابق ڈگلس میک گرگر نے ایک انٹرویو میں کہا کہ میرے خیال میں یوکرین کے صدر زیلنسکی کو بتایا گیا ہے کہ کھیل ختم ہو گیا ہے۔ ایسے میں بہتر ہو گا کہ وہ باعزت طریقے سے اپنا عہدہ چھوڑ دیں۔ ساتھ ہی انہوں نے کہا کہ زیلینسکی اس کام کے لیے تیار نہیں ہے۔

تاہم، مغرب زیلنسکی کی جگہ کسی ایسے شخص کو لانا چاہتا ہے جو روس کے ساتھ امن مذاکرات شروع کر سکے۔ اس امریکی اہلکار کے مطابق امریکہ میں ایسے لوگوں کی تعداد میں اضافہ ہو رہا ہے جو یوکرائن کی جنگ کے خاتمے کے حق میں ہیں۔

دریں اثناء یوکرین کے سابق وزیر اعظم نکولا ازاریف نے کہا کہ یوکرین کے حکام مغرب کا کھلونا ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یوکرین کو امن مذاکرات شروع کرنے کے لیے مغرب کی اجازت درکار ہے۔ امن مذاکرات اسی صورت میں ہوں گے جب امریکی امن مذاکرات کی اجازت دیں ورنہ یہ ممکن نہیں۔

یاد رہے کہ 24 فروری 2022 سے شروع ہونے والی یوکرین جنگ میں مغربی ممالک نے اسے اب بھی ہتھیار فراہم کر کے اکسایا ہوا ہے۔

یہ بھی پڑھیں

نیوزیلینڈ

نیوزی لینڈ نے اسرائیل کے جرائم سے منسلک حماس کے اثاثے منجمد کر دیے

پاک صحافت نیوزی لینڈ نے فلسطین کے خلاف مغربی پالیسیوں کے مطابق اور غزہ میں …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے