صدارتی آرڈی نینس کیخلاف نون لیگ عدالت پہنچی

صدارتی آرڈی نینس کیخلاف نون لیگ عدالت پہنچی

اسلام آباد(پاک صحافت)  حزب اختلاف پاکستان مسلم لیگ (ن) کے ایک ممبرقانون ساز نے اسلام آباد ہائی کورٹ (آئی ایچ سی) کو آگاہ کیا ہے کہ پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی حکومت نے ضرورت سے زیادہ صدارتی آرڈی نینس جاری کردیئے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق ایم این اے محسن نواز جنہوں نے بیرسٹر عمر گیلانی کے توسط سے درخواست دائر کی تھی ، نے صدر ڈاکٹر عارف علوی کے اختیارات کو چیلنج کیا کہ وہ پارلیمنٹ کے ذریعے مناسب قانون سازی کرنے کی بجائے حکومت کے امور چلانے کے لئے آرڈیننس جاری کریں۔

درخواست گزار کا کہنا ہے کہ آرڈیننس بنانے کی طاقت ایک علیحدہ مسئلہ ہے  اور یہ معمول کے قانون سازی کے لئے نہیں ہے۔ یہ آئین کے آرٹیکل 89 سے واضح ہے جو آرڈیننس بنانے کی طاقت کے استعمال پر سخت شرائط رکھتا ہے۔ اس کا استعمال صرف اسی وقت کرنا ہے جب کسی ہنگامی صورتحال (جیسے جنگ ، قحط ، وبا یا بغاوت) کا جواب دینے کے لئے ایسا کرنا ضروری ہو جو پارلیمنٹ کے ایک اجلاس کی طوالت کے بعد پیدا ہوتا ہے اور جہاں اگلے اجلاس کا انتظار کرنا ناقابل تلافی نقصان کا باعث ہوتا ہے۔

مزید پڑھیں: سینیٹ کے انتخابات ہمیشہ خفیہ رائے شماری سے ہوتے آئے ہیں:الیکشن کمیشن

ایم این اے کا کہنا ہے کہ حکومت غیر منصفانہ طور پر پٹیشن کی لاقانونیت کا فائدہ اٹھا رہی ہے۔اس اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ بدقسمتی سے آرڈیننس بنانے والی طاقت کا یکے بعد دیگرے حکومتوں کی طرف سے مسلسل استحصال کیا جاتا رہا ہے۔ درخواست میں بتایا گیا ہے کہ ایسا لگتا ہے کہ پاکستان کے صدور نے 1947 سے لے کر اب تک 2،500 سے زیادہ آرڈیننس نافذ کیے ہیں۔

درخواست گزار نے 30 اکتوبر ، 2019 کو صدر کی طرف سے جاری کردہ 8 آرڈیننس کو معطل کرنے کی اپیل کی ہے۔درخواست کے مطابق حکومت غیر منصفانہ طور پر پٹیشن کے لاقانونیت کا فائدہ اٹھا رہی ہے اور عام قانون سازی کے معاملات سے متعلق تازہ احکامات کو پوری طرح سے گلا گھونٹ رہی ہے ، اس طرح اس نے پارلیمنٹ کو الگ کر دیا ہے۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں