دبئی میں پلازے والے افراد آمدنی کے ذرائع کی وضاحت نہیں کرسکتے: نیب چیف

دبئی میں پلازے والے افراد آمدنی کے ذرائع کی وضاحت نہیں کرسکتے

اسلام آباد (پاک صحافت) قومی احتساب بیورو (نیب) کے چیئرمین جسٹس ریٹائرڈ جاوید اقبال نے واچ ڈاگ کے خلاف لگائے گئے الزامات اور "مذموم پروپیگنڈہ” پر بات کرتے ہوئے کہا کہ دبئی میں پلازوں کے مالک افراد اپنی آمدنی کے ذرائع کو جواز پیش نہیں کرسکتے ہیں۔

اسلام آباد میں چیمبر آف کامرس سے خطاب کرتے ہوئے اقبال نے کہا کہ نیب نے پہلا قدم اٹھایا اور کچھ سال پہلے تک اچھوت لوگوں کی پیروی کی ۔ انہوں نے مزید کہا کہ "دھمکی ، دھمکیاں یا بلیک میلنگ” واچ ڈاگ کے کام کو متاثر نہیں کرے گی۔

مزید پڑھیں: جو نیب اپوزیشن کے لیے تھا وہی حکمرانوں کے لیے بھی رہے گا، مریم نواز کاواضح اعلان

انہوں نے تاجروں سے کہا "جن لوگوں کو تم آنکھوں میں نہیں دیکھ سکتے ہو ، جسے تم چھو نہیں سکتے ہو ، جسے تم اپنے خوابوں میں بھی نہیں طلب کرسکتے ہو، نیب نے انہیں طلب کیا،جب نیب نے ان سے پوچھا کہ کچھ سال پہلے ، آپ ہونڈا موٹرسائیکل کے مالک تھے اور آج دبئی میں آپ کے پاس پلازے ہیں،یہ سب کہاں سے آیا؟ ان کے پاس کوئی جواب نہیں تھا۔

انہوں نے کہا کہ پچھلے تین سال میں جب سے انہوں نے نیب کے چیئرپرسن کی حیثیت سے ذمہ داری سنبھالی ہے ،487 ارب روپے کی وصولی کی تھی۔اقبال نے یہ کہتے ہوئے کہا کہ احتساب نگران تاجر برادری کے خلاف کام نہیں کررہا ہے اور ان الزامات کو مسترد کرتا ہے کہ نیب کی وجہ سے تاجر ملک سے فرار ہونے پر مجبور ہوگئے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ بہتر مستقبل کے لئے ملک چھوڑ کر چلے گئے تاجر  اپنی مرضی سے چلے گئے”۔انہوں نے مزید کہا کہ نیب تاجر برادری کے ممبروں کے خلاف ٹیکس سے متعلق مقدمات کی پیروی نہیں کررہا ہے۔ نیب کے سربراہ نے مزید کہا کہ مہنگے بجلی اور گیس ، امن و امان کی صورتحال اور کمزور پالیسیوں کی وجہ سے پاکستان کی برآمدات بنگلہ دیش کی نسبت کم تھیں جو اب بہتر ہورہی ہے۔ اقبال نے بتایا کہ کوئی بھی مشتبہ شخص جو طبی حالت میں مبتلا ہے اسے فوری طور پر اسپتال لے جایا گیا۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں