احتجاج

صہیونی قیدیوں کے اہل خانہ: فتح حماس کو تباہ کرنے سے نہیں قیدیوں کی واپسی سے حاصل ہوگی

پاک صحافت صیہونی قیدیوں کے اہل خانہ کے وفد نے ہفتے کی شب ایک بیان میں اعلان کیا ہے کہ فتح حماس کو تباہ کرنے سے نہیں بلکہ قیدیوں کی واپسی سے حاصل ہوگی۔

پاک صحافت کی رپورٹ کے مطابق صہیونی اسیران کے اہل خانہ کے وفد نے مزید کہا: بنیامین نیتن یاہو صرف تاخیر کے خواہاں ہیں اور اپنے ذاتی مفادات کے بارے میں سوچ رہے ہیں اور قیدیوں کی واپسی کا وقت ختم ہوتا جا رہا ہے۔

صہیونی قیدیوں کے اہل خانہ نے یہ بیان کرتے ہوئے کہ نیتن یاہو کی کابینہ قیدیوں کی جانوں کی پرواہ نہیں کرتی اور غزہ میں زمینی کارروائیاں جاری رکھے ہوئے ہے، کہا: ہم چاہتے ہیں کہ تمام قیدی زندہ واپس جائیں اور ہم انہیں تابوتوں میں نہیں چاہتے۔

دوسری جانب صیہونی حکومت کے چینل 13 نے خبر دی ہے کہ کابینہ کے متعدد ارکان نے قیدیوں کے تبادلے کے معاہدے کے حوالے سے نیتن یاہو کے اقدامات پر تنقید کی۔

اس رپورٹ کے مطابق صیہونی حکومت کی کابینہ کے متعدد وزراء نے اس بات پر زور دیا کہ ان کے بارے میں یہ تاثر ہے کہ نیتن یاہو مشکل فیصلوں کو ملتوی کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔

صیہونی حکومت کے چینل 13 نے ان وزراء کے حوالے سے خبر دی ہے کہ نیتن یاہو کا غزہ میں جنگ بندی اور قیدیوں کے تبادلے کا کوئی سنجیدہ ارادہ نہیں ہے۔

پاک صحافت کے مطابق فلسطینی مزاحمتی گروپوں نے 15 اکتوبر 2023 کو غزہ (جنوبی فلسطین) سے اسرائیلی حکومت کے ٹھکانوں کے خلاف “الاقصی طوفان” کے نام سے ایک حیران کن آپریشن شروع کیا جو 45 دن کے بعد بالآخر 3 دسمبر 1402 کو ختم ہوا۔ 24 نومبر 2023 کو اسرائیل اور حماس کے درمیان چار روزہ عارضی جنگ بندی یا حماس اور اسرائیل کے درمیان قیدیوں کے تبادلے کے لیے وقفہ ہوا۔

جنگ میں یہ وقفہ سات دن تک جاری رہا اور بالآخر 10 دسمبر 2023 بروز جمعہ کی صبح عارضی جنگ بندی ختم ہوئی اور اسرائیلی حکومت نے غزہ پر دوبارہ حملے شروع کر دیے۔ “الاقصی طوفان” کے حیرت انگیز حملوں کا بدلہ لینے اور اس کی ناکامی کا ازالہ کرنے اور مزاحمتی کارروائیوں کو روکنے کے لیے اس حکومت نے غزہ کی پٹی کی تمام گزرگاہوں کو بند کر دیا ہے اور اس علاقے پر بمباری کر رہی ہے۔

یہ بھی پڑھیں

اسرائیلی

اسرائیلی فوج کے ملٹری انٹیلی جنس ڈیپارٹمنٹ کے سربراہ نے استعفیٰ دے دیا

پاک صحافت صیہونی ذرائع ابلاغ نے اطلاع دی ہے کہ 7 اکتوبر 2023 کو فلسطینی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے