فلسطین کی دفاع اراضی کمیٹی کی رپورٹ جاری، غرب اردن میں یہودی آباد کاروں کی سازش کا پردہ فاش کردیا

فلسطین کی دفاع اراضی کمیٹی کی رپورٹ جاری، غرب اردن میں یہودی آباد کاروں کی سازش کا پردہ فاش کردیا

فلسطین میں دفاع اراضی کمیٹی کی طرف سے جاری کردہ ایک رپورٹ میں ‌مقبوضہ مغربی کنارے میں یہودی آباد کاروں کی تعداد میں اضافے کی سرگرمیوں پر روشنی ڈالی ڈالتے ہوئے یہودی آباد کاروں کی سازش کا پردہ فاش کردیا ہے۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اسرائیل نے غرب اردن میں ‌یہوی آباد کاروں کی تعداد ایک ملین سے بڑھانے کا فیصلہ کیا ہے، رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ غرب اردن اور القدس کے علاقوں کے درمیان راستوں اور چوکوں ‌کو سیل کیا جا رہا ہے۔

فلسطینیوں‌ پر جسمانی تشدد، حملے، املاک کی مسماری، یہودی آباد کاروں کی طرف سے فلسطینیوں کی گاڑیوں پر سنگ باری کا سلسلہ بیت القدس میں الشیخ جراح سے غرب اردن کے شہر الخلیل تک پھیلا ہوا ہے۔

حالیہ عرصے کے دوران الخلیل میں ‌مسافر یطا، بیت لحم، رام اللہ گورنری میں المغیر، کفر مالک اور دوسرے دیہات میں فلسطینیوں پر عرصہ حیات تنگ کرنے کی کارروائیوں کے پیچھے غرب اردن میں یہودیوں کی تعداد اور آبادی بڑھانا ہے۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ غرب اردن کے شمالی شہر نابلس میں شبیہ التلال نامی ایک گروپ سرگرم ہے، اس گروپ میں شامل عناصر یتھسار یہودی کالونی سے تعلق رکھتے ہیں، یہ گروپ خطے میں یہودی دہشت گردوں کا بدنام گروپ سمجھا جاتا ہے، اس گروپ کی طرف سے آئے روز فلسطینی شہریوں پر منظم انداز میں حملے کیے جاتے ہیں، فلسطینیوں پر حملوں میں اسرائیلی فوج کی یہودی شرپسندوں کو معاونت اور سرپرستی حاصل ہوتی ہے۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں