اسرائیلی وزیر اعظم نیتن یاہو کے خلاف ایک بار پھر شدید مظاہرے، پولیس نے متعدد افراد کو گرفتار کرلیا

اسرائیلی وزیر اعظم نیتن یاہو کے خلاف ایک بار پھر شدید مظاہرے، پولیس نے متعدد افراد کو گرفتار کرلیا

تل ابیب:(پاک صحافت) اسرائیلی وزیر اعظم نیتن یاہو کے خلاف مظاہروں کا سلسلہ بدستور جاری ہے اور اس میں ہر گزرتے دن کے ساتھ جہاں شدت آ رہی ہے وہیں مظاہرین نے اس عزم کا اظہار بھی کیا ہے کہ وہ نیتن یاہو کے مستعفی ہونے تک چین سے نہیں بیٹھیں گے۔

 غاصب صیہونی حکومت کے وزیر اعظم نیتن یاہو کے خلاف اسرائیل کے مختلف علاقوں میں کورونا کے پھیلاو اور لاک ڈاون کے دوران زبردست احتجاجی مظاہرہ ہوا۔

مقبوضہ فلسطین کے باشندوں نے سکیورٹی کے سخت حصار کے باوجود مظاہروں میں شرکت کی اور صیہونی وزیر اعظم نتن یاہو کے استعفے کا مطالبہ کیا اور ڈیموکریسی یا انقلاب اور نیتن یاہو کے استعفے تک چین سے نہیں بیٹھیں گے جیسے نعرے لگائے۔

 سکیورٹی فورسز نے نیتن یاہو کے گھر کی جانب جانے والے راستوں کو بند کرکے 8 مظاہرین کو گرفتار کر لیا ۔

اسرائیل کے زیر قبضہ  مقبوضہ فلسطینی علاقوں میں گزشتہ کئی مہینے سے نیتن یاہو کی اقتصادی پالیسیوں، مالی بدعنوانیوں اور کورونا کی روک تھام میں ان کی ناقص کارکردگی کے خلاف مظاہرے ہو رہے ہیں ۔

مظاہرین، کورونا کے معاملے میں نتن یاہو کی کابینہ کی کمزور کارکردگی پر احتجاج کر رہے ہیں اور ان کی اور ان کی اہلیہ کی مالی بندعنوانی کے باعث جلد سے جلد ان کے استعفے کا مطالبہ کر رہے ہیں۔

ایک طرف جہاں نیتن یاہو کی مالی بدعنوانیوں اور کورونا جیسی عالمی وبا سے نمٹنے میں حکومت کی غفلت اور کمزور پالیسیوں کے خلاف شدید احتجاج جاری ہے وہیں دوسری جانب نیتن یاہو علاقے کے خیانت کار بعض عرب ملکوں کے ساتھ تعلقات کو معمول پر لائے جانے کو اپنی حکومت کی بڑی کامیابی کے دعوے کے ساتھ اپنی ساکھ کو برقرار رکھنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں