اپوزیشن

ترک اپوزیشن لیڈر: زلزلے کا مرکز اردگان کا صدارتی دفتر ہے

پاک صحافت ترکی کے حزب اختلاف کے رہنما رجب طیب ایردوان نے ملک کے جنوب میں آنے والے زلزلے سے ہونے والے بڑے نقصان کا ذمہ دار ملک کے صدر کو ٹھہرایا۔

پاک صحافت کی رپورٹ کے مطابق، ترکی کی حزب اختلاف کی نیشنل موومنٹ پارٹی کی رہنما میرل اکسنر نے اس ملک کے صدر رجب طیب ایردوان کو اس زلزلے سے ہونے والے بھاری نقصانات کا ذمہ دار ٹھہرایا ہے، جس نے جنوب کو ہلا کر رکھ دیا تھا۔ ملک اور اس کے نتیجے میں 42،000 سے زیادہ افراد کی موت ہوئی، وہ ایک شخص بن گیا، وہ جانتا تھا.

خبری ذرائع کے مطابق اچنر نے بدھ کے روز ایک انٹرا پارٹی میٹنگ میں کہا کہ زلزلے سے ہونے والی بڑے پیمانے پر تباہی کے ذمہ دار اردگان اور “ایک آدمی” کا حکومتی نظام ہے۔

اچنر نے کہا کہ ترکی میں “اردوگان کی ایک آدمی کی حکومت” صرف بحران اور تباہی پیدا کرے گی۔ انہوں نے مزید کہا کہ یہ درست ہے کہ زلزلے قدرتی آفات ہیں لیکن اس قدرتی آفت کے ذمہ دار رجب طیب اردگان ہیں جو تباہی پر ختم ہوئی۔ انقرہ میں ایردوان کے صدارتی دفتر کا حوالہ دیتے ہوئے، اچسنر نے اس ہیڈکوارٹر کو حالیہ زلزلے کا مرکز سمجھا۔

حزب اختلاف کے دیگر رہنما جیسا کہ کمال کلیک دار اوغلو، احمد داؤد اوغلو اور علی باباکان تباہ کن زلزلے کے نقصانات کا ذمہ دار اردگان اور ان کی حکومت کو ٹھہراتے ہیں۔ ان کا ماننا ہے کہ اردگان کی ون مین حکمرانی، جس میں کوئی توازن نہیں ہے، حکومتی اداروں کو بحران کے وقت فوری فیصلے کرنے کے موقع سے محروم کر دیتا ہے، اور ان کی حکومت جو اپنے دوستوں کو سرکاری عہدوں پر استعمال کرتی ہے، سب نے اس میں کردار ادا کیا ہے۔

یہ رپورٹ اس بات کی طرف اشارہ کرتی ہے کہ ترکی کے جنوب میں آنے والے حالیہ زلزلے نے ملک کے اقتصادی مسائل کو مزید بڑھا دیا اور قومی انتخابات کے موقع پر ترکی کے صدر کی تشویش میں اضافہ کر دیا۔ ترکی پہلے ہی آسمان چھوتی مہنگائی سے نبردآزما تھا اور اپنی معیشت کو رواں دواں رکھنے کے لیے دولت مند اتحادیوں پر انحصار کر رہا تھا، لیکن اب ایک بڑے زلزلے نے دسیوں ہزار افراد کو ہلاک کر دیا، شہر تباہ ہو گئے اور لاکھوں افراد کو فوری امداد کی ضرورت ہے۔

یہ بھی پڑھیں

نیوزیلینڈ

نیوزی لینڈ نے اسرائیل کے جرائم سے منسلک حماس کے اثاثے منجمد کر دیے

پاک صحافت نیوزی لینڈ نے فلسطین کے خلاف مغربی پالیسیوں کے مطابق اور غزہ میں …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے