کسنجر

کسنجر: نیٹو میں یوکرین کی رکنیت حالیہ تنازعات کا نتیجہ ہے

پاک صحافت کسنجر نے نیٹو میں یوکرین کی رکنیت کو تنازعات کا فطری نتیجہ قرار دیا۔

پاک صحافت کے مطابق، سابق امریکی وزیر خارجہ اور امریکی میڈیا کے تجزیہ کار ہنری کسنجر نے ڈیووس میں ورلڈ اکنامک فورم میں اپنی ویڈیو تقریر میں کہا کہ یوکرین کی نیٹو میں رکنیت تنازع کا ’فطری‘ نتیجہ ہوگا۔

کسنجر نے مزید کہا، “جنگ سے پہلے، میں نیٹو میں یوکرین کی رکنیت کے خلاف تھا کیونکہ مجھے ڈر تھا کہ یہ بالکل وہی عمل شروع کر دے گا جو ہم اب دیکھ رہے ہیں۔” “اب جبکہ یہ عمل اس سطح پر پہنچ چکا ہے، ان حالات میں غیر جانبدار یوکرین کا تصور اب موجود نہیں ہے۔”

کسنجر نے یہ بھی کہا کہ نیٹو کو اس تنظیم کو کسی بھی طرح سے ترقی کرنی چاہیے اور مجھے یقین ہے کہ نیٹو میں یوکرین کی رکنیت اچھے نتائج لائے گی۔

قبل ازیں، یوکرین کے صدر “ولادیمیر زیلینسکی” نے اعلان کیا تھا کہ اس ملک نے، جمہوریہ چیک کے ساتھ مل کر، شمالی بحر اوقیانوس کے معاہدے کے ساتھ یوکرین کے اتحاد کو تیز کرنے کے لیے نیٹو میں شمولیت کے ایک بیان پر دستخط کیے ہیں۔

جمہوریہ چیک کے وزیر اعظم پیٹر فیالا سے ملاقات کے بعد انھوں نے ایک پریس کانفرنس میں کہا: ’’آج کئی اہم دستاویزات پر دستخط کیے گئے ہیں۔ میں خاص طور پر نیٹو کی رکنیت سے متعلق دونوں ممالک کے مشترکہ بیان کا ذکر کروں گا، یہ پہلی دستاویز ہے جسے ہم نے اپنے ٹرانس اٹلانٹک کنورجنسی کے عمل کو تیز کرنے کے لیے اپنایا اور اس بیان سے ہم نے ثابت کیا کہ ہم یوکرین میں نیٹو کے معیارات کے حصول کو یقینی بنانے کے لیے اپنے تعاون کو مضبوط کر رہے ہیں۔ ہم کریں گے۔”

زیلنسکی نے مزید کہا کہ یوکرائنی فریق دوسرے ممالک کے ساتھ بھی اسی طرح کے بیانات پر دستخط کرنے کی کوشش کرنے کا ارادہ رکھتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں

نیوزیلینڈ

نیوزی لینڈ نے اسرائیل کے جرائم سے منسلک حماس کے اثاثے منجمد کر دیے

پاک صحافت نیوزی لینڈ نے فلسطین کے خلاف مغربی پالیسیوں کے مطابق اور غزہ میں …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے