طالبان

عالمی برادری کی جانب سے طالبان حکومت کے بائیکاٹ سے صورتحال مزید پیچیدہ ہو جائے گی، طالبان ترجمان

پاک صحافت افغانستان میں طالبان کی حکومت پر بڑھتی ہوئی بین الاقوامی تنقید کے باوجود طالبان کا موقف ہے کہ اگر ان کی حکومت کا بائیکاٹ جاری رہا تو طالبان حکومت اور عالمی برادری کے درمیان فاصلے بڑھ جائیں گے۔

طالبان کو افغانستان پر قابض ہوئے ایک سال سے زیادہ کا عرصہ گزر چکا ہے لیکن اب تک کسی ملک نے طالبان کی حکومت کو تسلیم نہیں کیا۔

عالمی برادری کا کہنا ہے کہ جب تک طالبان خواتین کے حقوق اور اقلیتوں کے حقوق کا احترام نہیں کرتے اور ایک جامع حکومت نہیں بناتے، ان کی حکومت کو تسلیم نہیں کیا جائے گا۔

آوا نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق اتوار کو طالبان کے نائب ترجمان بلال کریمی نے عالمی برادری سے طالبان حکومت سے پابندیاں ہٹانے کا مطالبہ کیا اور کہا کہ اگر پابندیاں اور بائیکاٹ جاری رہے تو طالبان اور عالمی برادری کے درمیان خلیج مزید بڑھ جائے گی۔

طالبان کا دعویٰ ہے کہ انہوں نے ایک قانونی حکومت قائم کی ہے جو بین الاقوامی معیارات پر پورا اترتی ہے۔

یہ بھی پڑھیں

نیوزیلینڈ

نیوزی لینڈ نے اسرائیل کے جرائم سے منسلک حماس کے اثاثے منجمد کر دیے

پاک صحافت نیوزی لینڈ نے فلسطین کے خلاف مغربی پالیسیوں کے مطابق اور غزہ میں …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے