طالبان

انسانی امداد شفاف طریقے سے تقسیم نہیں کی جا رہی: طالبان

کابل {پاک صحافت} طالبان کا کہنا ہے کہ بین الاقوامی امداد کو منصفانہ طور پر تقسیم کیا جانا چاہیے۔

مولوی عبدالسلام حنفی نے اقوام متحدہ کے ایک اہلکار سے ملاقات میں کہا ہے کہ افغانستان میں بین الاقوامی امداد کی تقسیم انتہائی شفاف اور منصفانہ طریقے سے ہونی چاہیے۔

ہفتے کے روز طالبان کے ایک رہنما نے عالمی ادارہ صحت کے ایک اہلکار فران ایگوزا سے ملاقات کی جس میں افغانستان کے بہت سے مسائل پر بات چیت کی گئی۔ انہوں نے کہا کہ طالبان حکومت اس بات پر یقین رکھتی ہے کہ انسانی امداد پوری ایمانداری کے ساتھ لوگوں میں تقسیم کی جانی چاہیے۔

اس سے قبل افغانستان کے مختلف علاقوں کے لوگوں نے بین الاقوامی امداد کی غلط تقسیم کی شکایت کی تھی۔ ان لوگوں کا کہنا ہے کہ افغانستان کے بعض صوبوں میں ذات، زبان اور بااثر افراد کی بنیاد پر امداد تقسیم کی جا رہی ہے جو تمام لوگوں تک نہیں پہنچ پاتی۔ اس کے علاوہ جو نقد رقم دی جاتی ہے اس میں بھی صوبوں کے لحاظ سے کافی فرق ہوتا ہے۔

خیال رہے کہ بین الاقوامی تنظیموں نے افغانستان میں غذائی قلت کے شکار لاکھوں افراد کے خلاف خبردار کیا ہے۔ اس بنیاد پر امداد کی فوری ضرورت ہے۔ شدید سردی اور معاشی بحران کی وجہ سے افغانستان کے کم از کم 57 ملین افراد کو فوری امداد کی ضرورت ہے۔

یہ بھی پڑھیں

نیوزیلینڈ

نیوزی لینڈ نے اسرائیل کے جرائم سے منسلک حماس کے اثاثے منجمد کر دیے

پاک صحافت نیوزی لینڈ نے فلسطین کے خلاف مغربی پالیسیوں کے مطابق اور غزہ میں …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے