8.1 C
Pakistan
منگل, نومبر 30, 2021

شیعون کی مسجد میں ہونے والا حملہ ایک جرم ہے، اقوام متحدہ

پاک صحافت اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل کے ترجمان نے قندھار میں خودکش حملے کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ شیعہ مسجد پر حملہ ایک جرم ہے۔

سٹیفن دوجارک نے کہا کہ سب سے بڑی شیعہ مسجد پر حملہ اس بات کی علامت ہے کہ افغانستان میں دہشت گردی جاری ہے۔

انہوں نے کہا کہ لیگ آف نیشنز ایک مذہبی مرکز میں زیادہ نمازیوں پر حملوں کی مذمت کرتی ہے اور ذمہ داروں کو سزا دی جانی چاہیے۔

لبنان کی اسلامی مزاحمتی تحریک حزب اللہ نے بھی قندھار میں حملے کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ امریکہ کے پالے ہوئے بھیڑیوں نے اپنی شکست کا بدلہ لینے کے لیے مساجد کو نشانہ بنایا ہے۔

حزب اللہ نے کہا کہ امریکہ کے پالتو بھیڑیوں نے اپنی شکست کا بدلہ لینے کے لیے مساجد اور دیندار اسیروں کو نشانہ بنایا ہے۔

حزب اللہ نے افغان حکام سے نمازیوں کی حفاظت کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ اسے مساجد اور اس کے کمزور اسیروں کو آسانی سے نشانہ بنانے کی اجازت نہیں ہونی چاہیے اور یہ کہ داعش امریکہ کے گھریلو بھیڑیے ہیں۔

ادھر عراق کے سینئر شیعہ عالم دین اور سیاستدان عمار حکیم نے قندھار میں دہشت گردانہ حملے کی مذمت کرتے ہوئے اسے شیطانی مشتبہ منصوبہ قرار دیا۔ انہوں نے ایک ریلیز میں لکھا کہ قندوز میں شیعہ مسجد پر حملے کو ایک دن سے زیادہ نہیں ہوا ہے کہ ہم افغانستان میں دوسرے حملے کا مشاہدہ کر رہے ہیں۔

شیعوں کے خلاف وحشیانہ حملے کی مذمت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ عالمی برادری کو جلد از جلد ٹھوس انداز اپناتے ہوئے قتل عام کو روکنے کی کوشش کرنی چاہیے۔

واضح رہے کہ تینوں خودکش حملہ آوروں نے پہلے مسجد میں اندھا دھند فائرنگ کی اور پھر کمر کے گرد باندھی ہوئی بیلٹ کو کھول کر خود کو دھماکے سے اڑا لیا۔ ذرائع کے مطابق شہداء کی تعداد میں اضافہ ہو رہا ہے۔ حتمی رپورٹ ملنے تک مرنے والوں کی تعداد 37 جبکہ زخمیوں کی تعداد 70 ہے۔

Related Articles

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں

two × 2 =

Latest Articles