پاکستان اور چین کے مابین جنگی مشقیں وقت کی اہم ضرورت ہے: آرمی چیف

پاکستان اور چین کے مابین جنگی مشقیں وقت کی اہم ضرورت ہے: آرمی چیف

آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے چین کے ساتھ جنگی تیاریوں اور بہترین روابط پر زور دیتے ہوئے کہا ہے کہ پاکستان اور چین کے مابین جنگی مشقیں وقت کی اہم ضرورت ہے۔

موصولہ اطلاعات کے مطابق پاک-چین مشترکہ فضائی مشق شاہین-9 کے معائنے کے لیے ایئر بیس کے دورے کے موقع پر پاک فوج کے سربراہ کا کہنا تھا کہ بڑھتے جیو اسٹریٹجک چیلنجز کا سامنا کرنے لیے چین کے ساتھ مشترکہ مشقیں دونوں ممالک کی جنگی تیاریاں بڑھانے کے لیے اہم ہیں۔

شاہین-9 مشقیں جس میں پاک فضائیہ اور پیپلز لبریشن آرمی ایئرفورس حصہ لے رہی ہیں وہ اس سال پاکستان میں منعقد ہوئی ہیں، یہ مشقیں سال 2011 سے باری باری دونوں ممالک کے درمیان باقاعدگی سے معنقد ہوتی ہیں۔

واضح رہے کہ مسئلہ کشمیر کی وجہ سے پاکستان اور بھارت کے تعلقات طویل عرصے سے کشیدہ ہیں، تاہم 45 سال بعد رواں سال چین کے ساتھ بھارت کے مہلک تصادم نے خطے کی سیکیورٹی صورتحال کو کافی تبدیل کردیا ہے۔

اسی تناظر میں دونوں ممالک (پاکستان اور چین) کی جنگی تیاری اور باہمی تعاون کو بڑھانے سے متعلق جنرل قمر جاوید باجوہ کا بیان بہت اہم ہے۔

جنرل قمر جاوید باجوہ کا کہنا تھا کہ مشترکہ مشق سے دونوں فضائی افواج کی جنگی صلاحیتوں میں خاطر خواہ اضافہ ہوگا اور طاقت اور ہم آہنگی کے ساتھ ان کے درمیان باہمی تعاون کو فروغ دے گا، اس موقع پر آرمی چیف نے بہترین آپریشنل نتائج کے لیے انٹرسروسز ہم آہنگی اور تعاون بہتر بنانے پر زور دیا۔

انہوں نے پی اے ایف کی پیشہ ورانہ مہارت، لگن اور بلند حوصلے کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ پاک فضائیہ کی پیشہ ورانہ مہارت نے اسے دنیا میں بہترین فضائیہ میں سے ایک بنا دیا ہے۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں