سینیٹ انتخابات پر جمعیت علمائے اسلام کا سپریم کورٹ سے رجوع

کہ صدر پاکستان کے انتخابات آئین کے تحت

اسلام آباد (پاک صحافت) جمعیت علمائے اسلام(جے یو آئی-ایف) نے سپریم کورٹ سے درخواست کی کہ وہ سینیٹ انتخابات میں کھلی رائے شماری سے متعلق حکومت کے موجودہ صدارتی ریفرنس کو بدانتظامی اور پارلیمنٹ کو کمزور کرنے کی کوشش پر مبنی قرار دے۔

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی حکومت نے عدالت عظمیٰ کے پاس صدارتی ریفرنس دائر کیا ہے جس میں ایک آرڈیننس کے ذریعے الیکشن ایکٹ 2017 میں ترمیم سے متعلق رہنمائی مانگی گئی ہے تاکہ آئندہ سینیٹ انتخابات میں کھلی رائے شماری کے استعمال کی اجازت دی جاسکے۔

چیف جسٹس پاکستان (سی جے پی) گلزار احمد کی سربراہی میں جے یو آئی (ف) کے وکیل کامران مرتضیٰ نے پانچ ججوں کے لارجر بینچ کے سامنے جواب جمع کرایا۔سینیٹر رضا ربانی بھی بنچ کے سامنے پیش ہوئے اور صدارتی ریفرنس کی مخالفت کی۔جے یو آئی-ایف نے اپنے جواب میں کہا کہ اس حوالہ میں یہ سوال اس لئے متفق نہیں ہے کہ "یہ نیک نیتی کے ساتھ نہیں بلکہ اس کی طرف توجہ دلاتا ہے ، اس کا دائرہ اختیار نہیں ہے اور اس کا مقصد پارلیمنٹ کو نظرانداز کرنا ہے۔

مزید پڑھیں: مفاد پرست اپوزیشن کو ملک کی تیز رفتار ترقی گوارا نہیں:میاں اسلم اقبال

پارٹی کے بیان میں کہا گیا ہے کہ "جمعیت علمائے اسلام ، پاکستان کی رجسٹرڈ سیاسی جماعتوں میں شامل ہے اور نہ صرف سینیٹ انتخابات میں بلکہ آئین ، پارلیمنٹ اور جمہوریت کے تقدس پر اس کا براہ راست دخل ہے”۔جے یو آئی-ایف کے بیان کے مطابق "سوال میں حوالہ دیا گیا ہے کہ سینیٹ کے انتخابات آئین کے تحت انتخابات نہیں ہوتے ہیں۔

یہ سوال اس بات کی نشاندہی کرتا ہے کہ سینیٹ کے انتخابات الیکشن ایکٹ 2017 کے تحت ہوتے ہیں ، جس کے تحت عمل کیا جاتا ہے۔اس میں مزید کہا گیا ہے کہ "پیراگراف 10 کے جواب میں ریفرنس میں کہا گیا ہے کہ صدر پاکستان کے انتخابات آئین کے تحت” منعقد ہوتے ہیں۔ الیکشن ایکٹ 2017 کہیں بھی بیان نہیں کرتا ہے کہ یہ آئین کے آرٹیکل 222 کے تحت نافذ کیا گیا ہے۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں