نصر اللہ

فلسطین میں جو کچھ ہو رہا ہے اس میں اسرائیل کے مستقبل کے لیے بڑا پیغام ہے: سید حسن نصر اللہ

بیروت {پاک صحافت} سید حسن نصر اللہ نے کہا ہے کہ فلسطین میں جو کچھ ہو رہا ہے اس میں غاصبوں کے خلاف جنگ اور صیہونی حکومت کے مستقبل کے لیے ایک بڑا پیغام ہے۔

لبنان کی اسلامی مزاحمتی تحریک حزب اللہ کے جنرل سکریٹری سید حسن نصر اللہ نے صیہونیوں پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ اگر تم یہ شرط رکھتے ہو کہ فلسطینی امید سے ہو گئے ہیں تو اسے بھول جاؤ۔ لبنان میں ہونے والی تبدیلیوں کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ ہمیں یہ حق حاصل ہے کہ ہم امریکی سفارت خانے پر لبنان میں انتخابات میں تاخیر کی کوشش کا الزام عائد کریں۔

انہوں نے لبنانی عوام کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ حزب اللہ کے بارے میں جو کچھ لکھا جائے اس پر یقین نہ کریں بلکہ حزب اللہ جو کچھ کرتی ہے اس پر یقین رکھیں کیونکہ حزب اللہ کے اقدامات کی بنیاد حق پر ہے، ہم سب انتخابات میں ہیں، حتیٰ کہ وہ اپنے مخالفین کی بھی شرکت چاہتے ہیں اور دشمن جبکہ ماضی میں انتخابی قانون میں دیگر جماعتوں کو جان بوجھ کر ہٹا دیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ ہم قومی اتحاد کی حکومت چاہتے ہیں۔

سید حسن نصر اللہ نے کہا کہ کچھ لوگ یہ بتانے کی کوشش کر رہے ہیں کہ مزاحمت کے ہتھیار ہی بحران کی وجہ ہیں لیکن وہ 30 سال سے جاری معاشی بدعنوانی اور کرپٹ پالیسیوں پر بات نہیں کرتے، جو جماعتیں 30 سال سے زیادہ اقتدار میں تھیں۔ وہ اعلان کرتے ہیں کہ انہوں نے لوگوں کے ساتھ کیا کیا ہے، جو لوگ مزاحمتی ہتھیاروں کی بات کرتے ہیں ان کا مقصد امریکہ، مغرب اور چند اربوں حکومتوں کو خوش کرنا ہے تاکہ ان کی مالی مدد کی جا سکے۔ انہوں نے کہا کہ مزاحمت طاقت کا توازن پیدا کر کے دشمن کے مقابلے میں ملک کی حفاظت کر رہی ہے۔

اسی طرح سید حسن حسن نصر اللہ نے کہا کہ ہم یمن میں جنگ بندی کا خیرمقدم کرتے ہیں اور ہم شروع سے ہی جنگ اور خونریزی روکنے کے خواہشمند تھے اور کوئی بھی سعودی عرب کو نشانہ نہیں بنانا چاہتا۔

باشعور حلقوں کا خیال ہے کہ دشمنوں کی ایک چال یہ بھی ہے کہ ان کی توسیع پسندانہ پالیسیوں کی راہ میں جو بھی رکاوٹ ہو اس کے خلاف زیادہ سے زیادہ پروپیگنڈا پھیلا کر عوام کی توجہ بحران کے اصل اسباب سے ہٹانا ہے۔ لبنان اور خطے کے بعض ذرائع ابلاغ یہ تجویز کرنے کی کوشش کرتے ہیں کہ اسلامی مزاحمتی تحریک حزب اللہ بہت سے بحرانوں کی ذمہ دار ہے، اس لیے وہ حزب اللہ کو غیر مسلح کرنے کا مطالبہ کرتے ہیں، جب کہ یہ امریکہ اور اسرائیل کی دلی خواہش ہے۔

اسی طرح باخبر حلقوں کا خیال ہے کہ امریکہ اور اسرائیل اور ان کے حامی یہ بات اچھی طرح جانتے ہیں کہ اگر صیہونی فوجی جنوبی لبنان سے بھاگے ہیں تو اس کی وجہ حزب اللہ کی دلیرانہ مزاحمت ہے اور یہ کہ اگر حزب اللہ کے ہتھیار اور مزاحمت نہ ہوتی تو کوئی طاقت نہ ہوتی۔ لہذا یہ اسرائیل کو جنوبی لبنان سے باہر نکال سکتا ہے اور صیہونی حکومت کے توسیع پسندانہ اقدامات اور پالیسیوں کی راہ میں رکاوٹ نہیں بن سکتا۔

نوٹ: یہ ذاتی خیالات ہیں۔ پاک صحافت کا ان سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔

یہ بھی پڑھیں

ایران

کوئی بھی بحران ایران کے سیاسی نظام کو ہلا نہیں سکتا

(پاک صحافت) ایک رپورٹ میں، بین علاقائی اخبار رائی الیوم نے اسلامی جمہوریہ ایران کے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے