8.1 C
Pakistan
منگل, نومبر 30, 2021

خاشقجی کے قتل کے مقدمے کی سماعت استنبول میں دوبارہ شروع ہوئی

انقرہ {پاک صحافت} 2018 میں بے دردی سے قتل ہونے والے سعودی صحافی جمال خاشقجی کے قتل کی تحقیقات آج استنبول میں ترکی کی عدالت انصاف میں ان کی منگیتر اور اس کے مؤکلوں کی موجودگی میں دوبارہ شروع کی گئیں۔

پاک صحافت نیوز ایجنسی نے یورونیوز کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ ترکی کی ایک عدالت نے منگل کے روز استنبول میں سعودی قونصل خانے میں سعودی سیکیورٹی فورسز کے ہاتھوں جمال خاشقجی کے قتل کی تحقیقات دوبارہ شروع کردی ہیں۔

مقدمے کی سماعت، جس میں کوئی بھی مدعا علیہ موجود نہیں ہے اور مقدمے کی سماعت غیر حاضری میں ہو رہی ہے، مارچ 2020 میں شروع ہوئی تھی۔

مقدمے کی سماعت استنبول کے ترک محل انصاف میں ہوئی، اور اس میں خاشقجی کی منگیتر خدیجہ چنگیز اور ان کے مؤکلوں نے شرکت کی۔ مقدمے کی سماعت کے موقع پر ترک حکام نے سعودی عدلیہ سے مطالبہ کیا کہ وہ خاشقجی کے قتل کے مجرموں کے مقدمے کے نتائج انقرہ کے حوالے کرے۔

ستمبر 2020 میں سعودی عرب کی ایک عدالت نے اس مقدمے میں کردار ادا کرنے پر آٹھ افراد کو سات سے بیس سال قید کی سزا سنائی تھی۔ ناقدین کا کہنا ہے کہ سعودی عرب میں ٹرائلز میں شفافیت کا فقدان ہے، بہت سے لوگ ان پر دکھاوے کا الزام لگاتے ہیں۔

سعودی حکومت پر تنقید کرنے والے صحافی خاشقجی 2 اکتوبر 2018 کو استنبول میں سعودی قونصل خانے میں داخل ہوئے اور کبھی واپس نہیں آئے۔

سعودی حکام نے اعتراف کیا کہ ان کے زیر کنٹرول فورسز نے صحافی کو قونصل خانے میں قتل کر کے اس کی لاش کو تباہ کر دیا تھا۔ ترکی کی ایک عدالت کا کہنا ہے کہ یہ مقدمہ اس جرم میں سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن بسلمان کے ذاتی کردار سے متعلق ہے۔

امریکی خفیہ اداروں کی جانب سے گزشتہ سال مارچ میں جاری ہونے والی ایک رپورٹ میں اس بات کی تصدیق کی گئی تھی کہ اس کارروائی کا حکم محمد بن سلمان نے خود دیا تھا۔

Related Articles

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں

fifteen − 4 =

Latest Articles