رزیم

صیہونی حکومت کے جنرل: نیتن یاہو باز نہ آئیں۔ اس سے علاقائی جنگ شروع ہوتی ہے

پاک صحافت صیہونی فوج کے ریٹائرڈ جنرل “اسحاق برک” نے اس بات کا اعتراف کیا کہ صیہونی فوجی غزہ کی پٹی میں پھنسے ہوئے ہیں اور اس حکومت کے وزیر اعظم “بنیامین نیتن یاہو” کی کارکردگی پر تنقید کرتے ہوئے کہا: اسرائیل فتح حاصل کرنے میں ناکام ہے۔ فلسطینیوں پر اور حماس کو شکست تسلیم کرنا ہوگی اور اگر نیتن یاہو باز نہ آئے تو وہ اسرائیل کو علاقائی جنگ میں جھونک دیں گے۔

خبر رساں ایجنسی “سما” سے منگل کو پاک صحافت کی رپورٹ کے مطابق، برک نے مزید کہا: “موجودہ حالات میں اسرائیل حماس پر فتح حاصل نہیں کرے گا، ہمیں شکست تسلیم کرنی چاہیے کیونکہ جنگ جاری رہنے سے فتح حاصل نہیں ہوگی، بلکہ شکست ہوگی۔

انہوں نے مزید کہا: اسرائیل جنگ کے اعلان کردہ اہداف میں سے کوئی بھی حاصل نہیں کر سکتا کیونکہ گزشتہ 20 سالوں میں اس نے اپنی فوج کے 6 ڈویژن کم کر دیے ہیں اور اس کے پاس اتنی طاقت نہیں ہے کہ وہ لڑ سکے۔

برک نے غزہ کی پٹی کے ان علاقوں میں جہاں سے صیہونی فوج پسپائی اختیار کر رہی ہے مزاحمتی جنگجوؤں کی تنظیم کا ذکر کرتے ہوئے کہا: فوج غزہ کی پٹی کے ان علاقوں پر حملہ کرتی ہے جن پر اس نے کئی بار قبضہ کیا ہے اور پھر وہاں سے پسپائی اختیار کر لی ہے، اور یہ بے مقصد ہیں۔ حملے صرف فوجیوں کا خون ضائع کرتے ہیں۔

ریٹائرڈ جنرل نے کہا: فوج حماس کو شکست نہیں دے سکتی، کیونکہ حماس اپنی جنگ سے پہلے کی سطح پر واپس آگئی ہے اور جنگ کے بعد دوسرے نوجوان رضاکاروں کو اپنی طرف متوجہ کیا ہے۔

برک نے مزید کہا: اگر اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو باز نہ آئے تو وہ تل ابیب کو ایک علاقائی جنگ میں داخل کر دیں گے جس کے نتیجے میں بہت سے لوگ متاثر ہوں گے اور ہر چیز کو ایٹم بم کی طرح تباہ کر دیں گے۔

پاک صحافت کے مطابق اس ریٹائرڈ جنرل نے پہلے اعلان کیا تھا کہ اسرائیلی حکومت کے اہلکار پاگل ہو چکے ہیں اور اس پاگل پن کو بہت جلد بند ہونا چاہیے۔

برک نے اس حکومت کے حکام کو ایک نشے میں دھت ڈرائیور قرار دیا جو بار بار سرخ بتیاں چلاتا ہے اور قتل کا ارتکاب کرتا ہے اور جس کا لائسنس ضبط ہونا چاہیے۔

فلسطینی اور لبنانی مزاحمت کی شکست نے قابض حکومت کے حکام کے درمیان کشیدگی میں اضافہ کر دیا ہے اور حکمران کابینہ کے مخالفین قبل از وقت انتخابات اور وزیر اعظم کی برطرفی کا مطالبہ کر رہے ہیں۔

غزہ کی پٹی پر صیہونی حکومت کی جارحیت کے نو ماہ گزر جانے کے بعد بھی بغیر کسی نتیجے اور کامیابی کے یہ حکومت دن بدن اپنے اندرونی اور بیرونی بحرانوں میں مزید دھنس رہی ہے۔ 9 ماہ گزرنے کے بعد بھی صیہونی حکومت حماس کو تباہ کرنے اور غزہ کی پٹی سے صیہونی قیدیوں کی واپسی کے اپنے بیان کردہ اہداف کو حاصل نہیں کر سکی ہے۔

اس عرصے کے دوران صیہونی حکومت نے اس خطے میں جرائم، قتل عام، تباہی، جنگی جرائم، بین الاقوامی قوانین کی خلاف ورزی، امدادی تنظیموں پر بمباری اور قحط کے علاوہ کچھ حاصل نہیں کیا۔

یہ بھی پڑھیں

اسرائیل

غزہ میں مزاحمتی کمانڈروں کے قتل کی جھوٹی خبریں شائع کرنے سے “اسرائیل” کا کیا مقصد ہے؟

پاک صحافت ایک رپورٹ میں عرب دنیا کے معروف تجزیہ نگار عبدالباری عطوان نے غزہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے