اسلاموفوبیا

انگلینڈ میں فلسطین کے حامیوں اور نسل پرستی کے مخالفین کا مشترکہ مظاہرہ

پاک صحافت ہزاروں فلسطینی حامیوں نے غزہ میں صیہونی حکومت کے وحشیانہ جرائم کے خلاف نسل پرستی کے کارکنوں اور اسلامو فوبیا کے مخالفین کے ساتھ مل کر تین شہروں لندن، گلاسگو اور کارڈف میں احتجاج کیا۔

پاک صحافت کے مطابق، برطانوی دارالحکومت میں شرکاء سب سے پہلے وزارت داخلہ کی عمارت کے سامنے جمع ہوئے اور انہوں نے فاشزم اور نسل پرستی کے خلاف نعرے لگاتے ہوئے کہا کہ وہ انتہا پسندوں کو معاشرے میں تفرقہ پیدا کرنے کی اجازت نہیں دیں گے۔

انہوں نے پلے کارڈز اٹھا رکھے تھے جن پر لکھا تھا “فاشزم کو نہیں”، “نسل پرستی کو نہیں” اور “نازی ازم دوبارہ کبھی نہیں ہوگا”۔

فلسطین کے حامیوں نے اجتماعات میں اس ملک کا پرچم بھی لہرایا اور انصاف کے حصول، نسل پرستی کے نظام کے خاتمے، فوری طور پر جنگ بند کرنے اور غزہ میں جنگ بندی کے قیام کے نعرے لگائے۔

لندن میں مسلسل 22ویں ہفتے مظاہرے کرنے والوں نے اس بات پر زور دیا کہ جب تک مظلوم اور بے دفاع فلسطینی عوام کا قتل عام جاری رہے گا وہ اپنا احتجاج جاری رکھیں گے۔

اس ریلی میں موجود لوگوں نے اپنا احتجاجی مظاہرہ کرتے ہوئے برطانوی وزیراعظم کے دفتر کی طرف مارچ کیا۔ واضح رہے کہ برطانوی لیبر پارٹی کے سابق رہنما اور اسرائیل مخالف معروف شخصیات میں سے ایک جیریمی کوربن اس مظاہرے میں موجود تھے اور دیگر شرکاء کے ساتھ انہوں نے ایک بڑا نعرہ بھی اٹھا رکھا تھا جس پر لکھا تھا: ’’نہیں۔ اسلامو فوبیا کے لیے۔”

اس کے بعد مقررین نے ڈاؤننگ سٹریٹ کے سامنے تقریریں کیں، جس میں وزیر اعظم اور برطانوی حکومت کے ارکان کی نسل پرستانہ اور اسلام مخالف عہدوں پر فائز ہونے کی مذمت کی۔ انہوں نے لندن سے مطالبہ کیا کہ وہ صیہونی حکومت کی حمایت بند کرے۔

صیہونی حکومت کے اہم حامیوں میں سے ایک ہونے کے ناطے برطانوی حکومت مظلوم اور بے گناہ فلسطینیوں کے قتل عام کو نظر انداز کرتے ہوئے غزہ میں فوری جنگ بندی کے قیام کی مخالفت کرتی ہے اور اس کا خیال ہے کہ اس طرح کے اقدام سے فلسطینی مزاحمت مزید مضبوط ہو گی۔

یہ اس وقت ہے جب صیہونی حکومت نے مغرب کی مکمل حمایت اور مزاحمتی قوتوں کے اچانک حملوں کا جواب دینے کے لیے غزہ میں بڑے پیمانے پر قتل عام شروع کیا ہے۔ اس حکومت نے غزہ کی پٹی میں تمام گزرگاہوں کو بند کر دیا ہے اور اس علاقے پر بمباری کر رہی ہے۔ اطلاعات کے مطابق 31 ہزار سے زائد فلسطینی شہید اور 72 ہزار سے زائد زخمی ہوئے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

امریکی صدور

سی این بی سی : “مہنگائی کا بحران”؛ ٹرمپ کے خلاف بائیڈن کی بڑی انتخابی پریشانی

پاک صحافت سی این بی سی کے تازہ ترین سروے کے مطابق امریکی ووٹرز مہنگائی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے