یوکرین

یوکرین نے اپنے ہی 23 فوجیوں کو ہلاک کر دیا، وجہ جان کر آپ حیران رہ جائیں گے!

پاک صحافت 24 فروری 2022 سے شروع ہونے والی روس یوکرین جنگ ہر روز خطرناک شکل اختیار کر رہی ہے۔ اب تک اس تباہ کن جنگ میں جان و مال کا بہت بڑا نقصان ہو چکا ہے۔ یوکرین کے فوجی بھی اس تھکا دینے والی جنگ سے تھک چکے ہیں اور فوج کو چھوڑنے والے فوجیوں کی تعداد میں روز بروز اضافہ ہوتا جا رہا ہے۔

موصولہ رپورٹ کے مطابق یوکرین کی فوج نے روس کے ساتھ جاری جنگ سے میدان جنگ سے فرار ہونے والے اپنے ہی 23 فوجیوں کو ہلاک کر دیا ہے۔ عالم دین ٹی وی چینل کی رپورٹ کے مطابق، یوکرین کی مسلح افواج کی کمان نے روس کے ساتھ جنگ ​​میں خرسون محاذ سے فرار ہونے والے 23 یوکرینی فوجیوں کو اپنے ملک کے فوجی قانون کے مطابق سزائے موت دے دی ہے۔ سپوتنک نیوز نے بھی اس خبر کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا ہے کہ یوکرین کی فوج کی 123ویں بٹالین کے 23 فوجی 11 اگست کو کھیرسن محاذ سے میدان جنگ سے فرار ہو گئے تھے اور انہیں یوکرین کی ایک فوجی عدالت نے موت کی سزا سنائی تھی۔ روس نے دعویٰ کیا ہے کہ اس نے ہلاک ہونے والے 23 فوجیوں میں سے 10 کی شناخت کر لی ہے۔

قابل ذکر ہے کہ روس نے 24 فروری کو یوکرین کے خلاف خصوصی فوجی آپریشن شروع کیا تھا۔ ان کی اس کارروائی کی ایک وجہ یوکرین کو نیٹو کا رکن بننے سے روکنا تھا۔ اس کے ساتھ ساتھ اس جنگ کے آغاز اور تسلسل کی بنیادی وجہ مغربی اور یورپی ممالک کی طرف سے یوکرین کی وسیع حمایت ہے اور ان میں امریکہ اور نیٹو سرفہرست ہیں۔ جنگ ختم کرنے کے بجائے امریکہ اسلحے کی کھیپوں پر یوکرین بھیج رہا ہے اور یہ جنگ کی آگ کو ہوا دے رہا ہے۔ دوسرے لفظوں میں وہ یوکرین کو اربوں ڈالر مالیت کا اسلحہ بھیج کر آگ پر ایندھن ڈال رہا ہے۔

یہ بھی پڑھیں

روس

روسی نمائندہ: عالمی برادری کو امریکہ اور اسرائیل پر دباؤ جاری رکھنا چاہیے

پاک صحافت غزہ میں صیہونی حکومت کے مسلسل جرائم کے جواب میں جو مغرب بالخصوص …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے