جنرل چارلس براون

بڑے پیمانے پر جنگ کی صورت میں ہم اسرائیل کی مدد کرنے کے قابل نہیں۔ امریکہ

(پاک صحافت) امریکی فوج کے ایک سینئر کمانڈر نے کہا کہ اگر حزب اللہ اور اسرائیل کے درمیان تنازعہ بڑھتا ہے تو واشنگٹن کے لیے تل ابیب کی مدد کرنا مشکل ہوجائے گا۔

تفصیلات کے مطابق امریکی فوج کے جوائنٹ اسٹاف کے کمانڈر جنرل چارلس براؤن نے کل رات خبردار کیا کہ حزب اللہ اور اسرائیل کے درمیان بڑے پیمانے پر جنگ کی صورت میں امریکہ کو تل ابیب کی مدد کرنے میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑے گا۔

اس جنرل نے اپنے ایک دعوے میں خبردار بھی کیا کہ مقبوضہ فلسطین کے شمال میں ان کے درمیان تنازع کی توسیع پورے خطے کو ایک بڑی اور وسیع جنگ کی طرف دھکیل دے گی۔

غزہ کی پٹی کے خلاف اسرائیلی حکومت کی جنگ نویں مہینے میں داخل ہوچکی ہے اور اس عرصے کے دوران 37 ہزار سے زائد فلسطینی شہید ہوچکے ہیں جن میں زیادہ تر خواتین اور بچے شامل ہیں اور اسرائیلی حکومت غزہ کی پٹی میں اپنے مقاصد حاصل کرنے کے باوجود اپنے مقاصد حاصل کرنے میں ناکام رہی ہے۔

حال ہی میں، بائیڈن کے خصوصی ایلچی، آموس ہاکسٹین، حزب اللہ اور تل ابیب کے درمیان کشیدگی کو کم کرنے کے لیے مقبوضہ علاقوں اور لبنان گئے، ان کے بقول، یہ مذاکرات اور ملاقاتیں کہیں بھی نہیں ہوئیں۔

یہ بھی پڑھیں

نظر سنجی

ایک سروے کے نتائج کے مطابق: اس ملک میں بدامنی کے بارے میں امریکی عوام کی تشویش میں اضافہ ہوا ہے

پاک صحافت اپسوس کے سروے کے نتائج کے مطابق امریکہ کے سابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے