کیا جو بائیڈن، ڈونلڈ ٹرمپ کی حماقتوں کو ٹھیک کرنے میں کامیاب ہوپائیں گے؟

کیا جو بائیڈن، ڈونلڈ ٹرمپ کی حماقتوں کو ٹھیک کرنے میں کامیاب ہوپائیں گے؟

امریکہ میں اقتدار کی تبدیلی پوری دنیا اور خاص طورپر مشرق وسطیٰ کے لئے خوش آئند مانی جارہی ہے ،ڈونلڈ ٹرمپ کو شکست دیکر جو بائیڈن امریکی صدارت کی کرسی حاصل کرچکے ہیں ،جبکہ ٹرمپ نے انتخابات کی شفافیت پر سوال اٹھائے ہیں اور انہوں نے انصاف کے لئے عدالت کا دروازہ کھٹکھٹایاہے مگر انہیں اس سے کوئی خاص فائدہ حاصل نہیں ہوگا۔

جوبائیڈین کی کامیابی کے بعدامید کی جارہی ہے کہ ٹرمپ کے دوراقتدار میں عالمی سطح پر جو بدامنی،ناچاقی ،سیاسی و تجارتی تعلقات میں کشیدگی، اور اقتصادی و معاشی بدحالی پھیل گئی تھی ،جو بائیڈن اس صورتحال پر جلد از جلد قابو پانے کی کوشش کریں گے۔

امریکہ ٹرمپ کو ان کے غیر عاقلانہ فیصلوں ،احمقانہ حرکتوں اور عالمی سیاست سے عاری سیاستمدار کی حیثیت سے کبھی بھلانہیں پائے گا ۔انہوں نے امریکی عوام کو جو سنہرے خواب دکھائے تھے ،ان کے پورے ہونے کی نوبت ہی نہیں آئی اور عالمی سطح پر بھی انہوں نے امریکہ کو کمزور کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی۔

یہ ایک ناقابل یقین حقیقت ہے کہ امریکی داداگیری اور اس کی طاقت کا دبدبہ ختم ہوچکاہے،دیکھنا یہ ہے کہ بائیڈن امریکی طاقت کے دبدبے کی بحالی اور عالمی سیاست پر غلبہ حاصل کرنے کے لئے کونسی نئی حکمت عملی اختیار کریں گے۔

ڈونلڈ ٹرمپ کی احمقانہ اور بصیرت سے عاری سیاست نے مشرق وسطیٰ کو بھی کم نقصان نہیں پہونچایا ہے،ایران اور چین کے ساتھ اس کے بگڑتے تعلقات پوری دنیا کے لئے پریشانی کا باعث بن رہے ہیں۔

دیکھنا یہ ہے کہ بائیڈن ایران کے ساتھ جوہری معاہدے پرکیا رخ اختیار کرتے ہیں،ساتھ ہی چین جیسے اقتصادی سُپر پاور کے ساتھ امریکی تعلقات میں بہتری کی امید کی جاسکتی ہے یا نہیں ؟ یہ دو اہم باتیں ہیں جن پر دنیا کی نگاہیں ٹکی ہوئی ہیں۔

ٹرمپ نے یک طرفہ کاروائی کرتے ہوئے جوہری معاہدہ سے فرار اختیار کیا تھا، جبکہ عالمی سیاست کے پیش نظر یہ فیصلہ درست نہیں تھا،عالمی سطح پر ٹرمپ کے اس فیصلے کی بھر پور مخالفت کی گئی مگر انہوں نے اپنے فیصلے پر نظر ثانی کی زحمت نہیں کی۔

ایران پر مسلسل معاشی پابندیوں کے اضافے نے ایرانی عوام کو امریکہ سے بددل کردیا ہے، خاص طرپر عراق میں جنرل قاسم سلیمانی کے قافلے پر بزدلانہ اوردہشت گردانہ حملے نے ایران اور امریکہ کے درمیان کشیدگی بڑھادی تھی،جوابی کاروائی میں ایران نے عراق میں واقع امریکی’عین الاسد‘ ائیربیس پر میزائلوں سے حملہ کردیا تھا جس میں امریکی فوج کا بھاری نقصان ہوا تھا۔

لہذا اب امریکہ ایران سے نرم گفتاری اور خارجہ سیاست میں تبدیلی کی امید نہیں کرسکتا جب تک اس کی طرف سے اس سلسلے میں پیش رفت نہیں ہوتی ہے،ساتھ ہی روس کے بڑھتے ہوئے سیاسی و فوجی اثرات پر قابو پانا بھی ایک بڑا مسئلہ ہوگا۔

ڈونلڈ ٹرمپ کی صہیونت نوازی بھی کسی سے مخفی نہیں رہی ہے، وہ اپنے داماد جارڈ کشنز کی محبت میں صہیونی سیاست کا بری طرح شکار ہوئے ،سب سے پہلے تو انہوں نے اسرائیل کو مستقل حیثیت دیکر عالم اسلام کے خلاف محاذ آرائی کی ،یہ الگ بات ہے کہ اکثر مسلمان حکومتیں ان کی حمایت میں کھڑی ہوگئیں اور انہوں نے بھی اسرائیل کی مستقل حیثیت کو قبول کرنے میں تأمل سے کام نہیں لیا،مگر عالمی سطح پر مسلمان امریکی سیاست سے بدظن ہوگئے ہیں اور یہ پہلی بار ہواہے کہ دنیا کے تمام مسلمانوں نے مشترکہ طورپر امریکہ کی دوغلی پالیسیوں کے خلاف آواز احتجاج بلند کی اس مخالفت کو مسلمان ممالک کی حمایت سے الگ ہٹ کر دیکھنے کی ضرورت ہے۔

دوسری طرف یروشلم کو اسرائیلی پایۂ تخت تسلیم کرنے کی امریکی سیاست کا اثر بھی مشرق وسطیٰ پر مرتب ہواہے فلسطینی مقاومتی تنظیمیں اور فلسطین کے حامی دیگر ممالک بھی اس غیر سیاسی اقدام کے خلاف متحد ہوئے ہیں۔

جارڈ کشنز جو استعماری ایجنٹ ہے اور استعمار کے اشارے پر ہی اس نے صدی معاہدہ کا پلان ڈونلڈ ٹرمپ کے ذریعہ جاری کرواکے امریکہ کی صہیونیت نوازی کو طشت از بام کردیا تھا۔

صدی معاہدہ کو مقاومتی محاذ نےسراسر فلسطینی عوام کے حقوق پر ڈاکہ قراردیا تھا مگر اسرائیل امریکہ کے تعاون سے اس معاہدہ کے نفاذ کے لئے ہاتھ پیر ماررہاہے۔

بائیڈن اس معاہدہ کے دورس نتائج سے باخبر ہیں،اس معاہدہ پر ان کا مؤقف عالمی سیاست پر اثر انداز ہوگا ،اس لئے ابھی یہ دیکھنا اہم ہوگا کہ جوبائیڈن فلسطین اور اسرائیل کو لیکر کیا رویہ اختیار کرتے ہیں۔

عالمی و علاقائی مسائل سے ہٹ کر امریکہ کے داخلی مسائل بھی کم نہیں ہیں جن کو حل کرنا نومنتخب امریکی صدر کے لئے بڑا چیلینج ہوگا ،کوڈ-19 ابھی ختم نہیں ہواہے۔

اس وباسے امریکہ سب سے زیادہ متاثر ہے اور اموات کی شرح بھی قابل تشویش ہے، ٹرمپ نے کوڈ -19پر کبھی سنجیدگی سے کام نہیں کیا، وہ ہمیشہ کی طرح لاپرواہ اور غیر ذمہ دار نظر آئے جس کا خمیازہ امریکی عوام کو بھگتنا پڑرہاہے۔

ایمگریشن قانون میں اصلاحات کی ضرورت ہے جس پر بائیڈن نے انتخابی تشہیر کے دوران بھی کھل کر بات کی تھی، نسلی و صنعتی مساوات امریکہ کے لئے ایک اہم موضوع ہے، اسقاط حمل کی شرح تیزی سے بڑھ رہی ہے جس پر قابو پانا آسان نہیں ہوگا

اقتصادی و معاشی بدحالی جو کورونا کے وبائی عہد میں اپنے عروج پر ہے، ناٹو ممالک سے تعلقات میں کشیدگی جس کی ساری ذمہ داری ٹرمپ کی غیر ذمہ دارانہ سیاست پر عائد ہوتی ہے، روس کے ساتھ تعلقات کی اہمیت اور روس کے بڑھتے ہوئے اثرات کے مد نظر سیاسی حکمت عملی کی ترتیب نو،پرانے اور نئے تجارتی معاہدات پر غوروخوض، اور ایران و چین کے ساتھ بڑھتی ہوئی کشیدگی، ایسے مسائل ہیں جن پر جوبائیڈن کی خصوصی توجہ ہوگی۔

ظاہر ہے بائیڈن کے پاس الہٰ دین کا چراغ نہیں ہے کہ وہ ٹرمپ کی خراب کردہ صورتحال پر اچانک ایک آدھ دن میں قابوپالیں گے ،لیکن اگر بائیڈن ان مسائل پر ذمہ داری اور سنجیدگی کے ساتھ کام کریں اور ڈونلڈ ٹرمپ کی طرح حماقت سے باز رہیں تو ممکن ہیکہ دینا میں امریکہ کے لیئے جو ذلت اور رسوائی ٹرمپ نے پیدا کی ہے اس میں تھوڑی سی کمی واقع ہو، اگرچہ ایسا لگتا نہیں ہے کیونکہ امریکہ میں برسر اقتدارکوئی بھی آئے لیکن اسے کرنا وہی ہوگا جو یہودی لابی چاہے گی۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں