فلسطینی صحافی کی شہادت پر دنیا نے کیا کہا؟

فلسطینی صحافی

پاک صحافت صیہونی عسکریت پسندوں کے ہاتھوں گولی لگنے والی فلسطینی صحافی شیرین ابو عاقلہ کی شہادت نے ملکی، علاقائی اور عالمی حلقوں میں شدید ردعمل کو جنم دیا۔

رواں ہفتے بدھ کے روز فلسطینی صحافی "شیرین ابو عاقلہ” کو قابض صہیونی ملیشیا نے جنین کیمپ میں ہونے والے واقعات اور جھڑپوں کی کوریج کے دوران گولی مار کر شہید کردیا۔

شہید "شیریں ابو عاقلہ” کون ہے؟

51 سالہ شہید شیریں ابو عاقلہ یروشلم میں پیدا ہوئیں، پہلے فن تعمیر کی تعلیم حاصل کی، پھر تحریری صحافت میں تعلیم حاصل کی اور اردن کی یرموک یونیورسٹی سے بیچلر کی ڈگری حاصل کی۔

فارغ التحصیل ہونے کے بعد وہ فلسطین واپس آیی اور مختلف سائٹس جیسا کہ راوا، وائس آف فلسطین ریڈیو، عمان سیٹلائٹ چینل، پھر مفتاح فاؤنڈیشن، ریڈیو مونٹی کارلو کے لیے کام کیا اور بعد ازاں 1997 میں الجزیرہ سیٹلائٹ نیٹ ورک کے لیے کام کیا اور آج تک جاری ہے۔ صیہونی حکومت کی طرف سے کئی بار گرفتار کیا گیا، 2012 میں ان کی گرفتاری کو میڈیا نے بہت زیادہ کوریج حاصل کی اور بالآخر صیہونی فوج کی گولی لگنے سے وہ شہید ہو گئے۔

برسلز میں یورپی یونین کے صدر دفتر کے سامنے ریلی

میڈیا ذرائع نے بتایا کہ "برسلز” میں یورپی یونین کے صدر دفتر کے سامنے شیریں ابو عقیلہ کے قتل کی مذمت کے لیے ایک ریلی نکالی گئی۔

استنبول میں تل ابیب قونصلیٹ کے سامنے ابو عاقلہ کے قتل کی مذمت میں ریلی

فلسطینی صحافیوں کے ایک گروپ نے استنبول میں اسرائیلی قونصل خانے کے سامنے الجزیرہ کے فلسطینی صحافی شیرین ابو عقلہ کی شہادت کی مذمت کے لیے ایک ریلی نکالی، جنہیں جینین کیمپ پر حملے کے دوران اسرائیلی فوجیوں نے گولی مار کر ہلاک کر دیا تھا۔

ترکی میں الجزیرہ کے دفتر کے ڈائریکٹر عبدالعظیم محمد نے ریلی کے موقع پر ایک تقریر میں ابو عقلا کی شہادت کی شدید مذمت کی۔ قدس پریس نیوز ایجنسی کو انٹرویو دیتے ہوئے انہوں نے تاکید کی کہ یہ ہولناک جرم کبھی بھی جواب طلب نہیں رہے گا اور ہم مطالبہ کرتے ہیں کہ اس کی تفصیلات معلوم کی جائیں اور اس جرم کے مرتکب افراد سے پوچھ گچھ کی جائے اور انہیں سزا دی جائے۔

سی این این: شیریں ابو عاقلہ کو اسرائیلی فوج نے جان بوجھ کر قتل کیا

سی این این نے مقبوضہ علاقوں کے عینی شاہدین کے حوالے سے اپنی ایک رپورٹ میں کہا ہے کہ صہیونی عسکریت پسندوں نے جان بوجھ کر الجزیرہ کے ایک رپورٹر کو نشانہ بنایا۔ ان عینی شاہدین کے مطابق صہیونی ملیشیا نے لاپرواہی کے ساتھ فلسطینیوں کے عوامی مظاہروں میں موجود نامہ نگاروں پر گولیاں چلائیں جن میں شیرین ابو اقلہ بھی شامل تھے۔ ان کے مطابق الجزیرہ کے رپورٹر ابو عقلہ جس وقت رپورٹنگ کر رہے تھے اس وقت ان کے ارد گرد کوئی مسلح فلسطینی موجود نہیں تھا۔

محمود عباس شہیدہ صحافی کی تشییع جنازہ میں؛ ہم "ابو عاقلہ” کے قتل کا مقدمہ انٹرنیشنل کریمنل کورٹ میں لے کر جائیں گے

فلسطینی اتھارٹی کے سربراہ محمود عباس نے شیرین ابو اقلہ کی نماز جنازہ کے موقع پر کہا کہ آج ہم فلسطین اور قدس کے شہید اور حق اور آزادی اظہار کی ایک شہید شیرین ابو اکلہ کو الوداع کہتے ہیں۔ فلسطینی خواتین اور میڈیا جنگجوؤں کی علامت۔” شیریں گہراماں نے اپنے مقصد اور اپنی قوم کے لیے اپنی جان قربان کی۔ انہوں نے ایمانداری اور حب الوطنی کا پیغام دیا اور شہداء اور قیدیوں کی ماؤں کے دکھوں اور قدس اور کیمپوں اور دھرنوں اور شہروں اور دیہاتوں پر (صیہونی ملیشیا) کے پے درپے حملوں کے مصائب کو پہنچایا۔

انہوں نے مزید کہا: "شیریں کا قتل کوئی پہلا جرم نہیں ہے اور درجنوں فلسطینی صحافیوں کو شہید کیا جا چکا ہے۔ ہم ابو اکلہ کے قتل کا مکمل ذمہ دار اسرائیلی قابضین کو ٹھہراتے ہیں۔ وہ اس جرم سے سچائی کو نہیں مٹا سکتے۔ محمود عباس نے کہا: یہ جرم ناقابل سزا نہیں ہونا چاہیے۔ ہم اسرائیلی حکام کے ساتھ مشترکہ تحقیقات کو مسترد کرتے ہیں کیونکہ انہوں نے یہ جرم کیا ہے اور ان پر بھروسہ نہیں کیا جاتا۔

"ابو عقیلہ” کی نماز جنازہ "رام اللہ” میں

میڈیا ذرائع کے مطابق فلسطینی صحافی شیریں ابو اقلہ کی نماز جنازہ رام اللہ میں ادا کی گئی جس میں لوگوں اور شخصیات کی بڑی تعداد موجود تھی۔ فلسطینی میڈیا نے بتایا ہے کہ ابو عقیل کی میٹھی لاش کی نماز جنازہ میں فلسطینی عوام نے بڑی تعداد میں شرکت کی۔ جاری کی گئی تصاویر اور ویڈیوز کے مطابق فلسطینی اتھارٹی کے صدر محمود عباس اور متعدد دیگر فلسطینی حکام نے بھی تقریب میں شرکت کی۔

عمانی وزیر خارجہ نے "شیرین ابو عاقلہ” کو قتل کرنے کے جرم کی مذمت کی  

عمان کے وزیر خارجہ بدر بن حمد البوسیدی نے جمعرات کو شیرین ابو اقلہ کے قتل پر ردعمل کا اظہار کیا۔ انہوں نے کہا کہ عمان فلسطینی صحافی کے قتل کی مذمت کرتا ہے۔

رپورٹ کے مطابق عمانی وزیر خارجہ نے اس حوالے سے اپنے تبصروں کو جاری رکھتے ہوئے کہا: "شہید ابو عقیلہ کو قتل کرنے کے جرم کی ہر طرح سے مذمت کی جاتی ہے”۔ یہ جرم ناقابلِ جواز ہے۔ ہم شیریں ابو اقلہ کے اہل خانہ سے تعزیت کرتے ہیں۔

1948 مقبوضہ فلسطینیوں کا "ابو عاقلہ” کی شہادت کے خلاف مظاہرہ

1948ء کے مقبوضہ علاقوں کے بعض شہروں کے مکینوں نے صیہونی عسکریت پسندوں کی فائرنگ سے فلسطینی صحافی ابو عقلہ کی میٹھی شہادت کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کیا۔ رپورٹ کے مطابق النصرہ شہر میں قومی اور سیاسی دھاروں نے اسی سمت العین چوک میں ریلی نکالی۔ مظاہرین نے صیہونی حکومت کو دہشت گرد اور مجرم قرار دیتے ہوئے نعرے لگائے اور فلسطینی علاقوں سے غاصبانہ قبضہ ختم کرنے کا مطالبہ کیا۔ اسی طرح کے مظاہرے حیفہ کے عسیر اسکوائر میں بھی ہوئے۔ مظاہرین نے جنین، القدس، مسجد اقصیٰ اور اس کے فلسطینی نامہ نگار کی حمایت میں نعرے لگائے۔

فلسطین لبریشن آرگنائزیشن کی ایگزیکٹیو کمیٹی کے رکن: ہم ابو عاقلہ کے قتل پر تل ابیب کے ساتھ مشترکہ تحقیقات کی مخالفت کرتے ہیں

فلسطین لبریشن آرگنائزیشن کی ایگزیکٹو کمیٹی کے رکن حسین الشیخ نے کہا کہ ہم نے شیرین ابو عقلا کے قتل کی مشترکہ تحقیقات کی اسرائیل کی درخواست کی مخالفت کی۔ انہوں نے مزید کہا: "ہم نے اس گولی کی فراہمی کی مخالفت کی جس سے شیریں کو قتل کیا گیا تھا۔” ہم تحقیقی عمل کو آزادانہ طور پر مکمل کریں گے اور تحقیق کے نتائج سے سب کو آگاہ کریں گے۔ حسین الشیخ تاکید کرتے رہے۔

کرد: اسرائیلی اسپیشل یونٹس کے ہاتھوں ابو عاقلہ کے قتل کے تمام شواہد اور نشانیاں اور شواہد کی تصدیق ہو گئی ہے۔

حماس کے پولیٹیکل بیورو چیف: صہیونی دشمن پر ابو عاقلہ کے قتل کا مقدمہ چلنا چاہیے

اسلامی مزاحمتی تحریک حماس کے سیاسی بیورو کے سربراہ صالح العروری نے فلسطینی صحافی شیرین ابو عقیلہ کے قتل میں صیہونی حکومت کے مجرمانہ اقدام پر ردعمل کا اظہار کیا ہے۔ رپورٹ کے مطابق حماس کے پولیٹیکل بیورو کے نائب سربراہ نے صیہونی غاصبوں کے ہاتھوں گولی لگنے سے فلسطینی صحافی شیرین ابو عقلا کی شہادت پر تعزیت کرتے ہوئے حکومت کے ذمہ داروں سے پوچھ گچھ اور اس جرم کا مقدمہ چلانے کا مطالبہ کیا۔

صالح العروری نے اس بات پر زور دیا کہ ابو اکلہ ایک بہادر شہید ہیں جنہوں نے فلسطین کے لیے جدوجہد کی اور حق کے لیے اپنی جان قربان کی۔ العروری نے مزید کہا کہ ابو عاقلہ فلسطینی قوم کی جدوجہد کی علامتوں میں سے ایک ہے جو بالآخر قابض حکومت کے زوال اور تباہی کا باعث بنے گی۔ انہوں نے کہا: "ابو عقلہ کی شہادت ہم سب کے لیے تکلیف دہ تھی، لیکن یہ جرم نہ صرف ہمیں قابض حکومت کے خلاف جدوجہد جاری رکھنے سے نہیں روکتا بلکہ اس سے انصاف کے حصول کے لیے ہمارے عزم کو بھی تقویت ملے گی۔” صالح العروری نے کہا کہ اس جرم نے ثابت کر دیا کہ غاصب صیہونی حکومت کا مقابلہ کرنے کا واحد راستہ مسلح مزاحمت کی قیادت میں ایک جامع جدوجہد ہے۔

عزالدین القسام بریگیڈز: ابو عاقلہ کے قتل کے جرم نے ایک بار پھر تل ابیب کی وحشییت کو ظاہر کر دیا

حماس کے عسکری ونگ شہید عزالدین القسام کی بٹالین نے الجزیرہ کے فلسطینی صحافی شیرین ابو عاقلہ کی شہادت پر تعزیت کا اظہار کیا ہے، جنہیں اسرائیلی فوجیوں نے جنین میں گولی مار کر شہید کر دیا تھا۔ رپورٹ کے مطابق بٹالینز نے ایک بیان میں کہا ہے کہ یہ گھناؤنا جرم صہیونی دشمن کا فلسطین میں اپنے نامہ نگار اور شہریوں کو نشانہ بنانا معمول کی کارروائی ہے۔ قاسم نے تاکید کی کہ اس جرم نے ایک بار پھر صیہونی حکومت کی بربریت اور اپنے جرائم کو چھپانے اور حق کی آواز کو خاموش کرنے کی اس کی ناکام کوششوں کو ظاہر کیا ہے۔

فلسطین کی اسلامی جہاد تحریک کا بیان

دوسری جانب فلسطین کی اسلامی جہاد تحریک نے بیانات جاری کرتے ہوئے شیرین ابو عاقلہ کی شہادت کو قابل نفرت جرم اور صیہونی حکومت کی دہشت گردی کا منہ بولتا ثبوت قرار دیا۔ بیان میں کہا گیا ہے: "اسرائیلی فوج نے اپنے دشمنانہ اقدامات اور دہشت گردی کے جرائم کے تسلسل میں اس بار ایک صحافی کو نشانہ بنایا جو حقائق کی رپورٹنگ کر رہا تھا اور صیہونی حکومت کے جرائم کی دستاویزی دستاویز بنا رہا تھا اور غاصبوں کو بے نقاب کر رہا تھا”۔

صحافیوں کو نشانہ بنانا قابضین کی مستقل پالیسی ہے۔ اسلامی جہاد تحریک میں، ہم شیرین ابو اکلہ کے اہل خانہ اور فلسطینی میڈیا اور الجزیرہ کے تمام ساتھیوں سے تعزیت کا اظہار کرتے ہیں، اور ہم خدا سے دعا کرتے ہیں کہ وہ اس صحافی کے ساتھی اور ساتھی علی السمودی کو صحت یاب کرے۔

اسرائیلی فوج نے فلسطینی صحافی کو زندہ گولہ بارود سے قتل کرنے کا اعتراف کرلیا

ابتدائی تردید کے باوجود اسرائیلی فوج نے آخر کار تسلیم کیا کہ تحقیقات کے بعد یہ نتیجہ اخذ کیا گیا کہ فوجیوں کی جنگی گولیوں نے اسے ہلاک کیا تھا۔ اسرائیلی فوج کی طرف سے جاری کردہ رپورٹ کے مطابق "دفدیوان” خفیہ یونٹ کا ایک فوجی ابو عاقلہ کی شہادت کے مقام سے 100 سے 150 میٹر کے فاصلے پر تعینات تھا اور اس دوران فوجی نے فلسطینی صحافی پر درجنوں گولیاں برسائیں۔

صہیونی فوج نے یہ دعویٰ بھی کیا کہ دفدیوان یونٹ کے سپاہیوں کی جانب سے گولی چلانے کی تردید کے باوجود ممکن ہے کہ اس نے غلطی سے ایک گولی چلائی ہو اور دفدیوان یونٹ کے سپاہیوں کی جانب سے چلائی جانے والی کچھ گولیاں اس علاقے کے شمال میں لگیں جہاں شیرین کو گولی لگی۔ ابو عاقلہ موجود تھے۔ اس کے علاوہ اسرائیلی فوج کے مطابق شیرین کو جو گولی لگی وہ صہیونی فوج کے "M16” ہتھیار سے لگائی گئی 5.56 ملی میٹر کیلیبر کی گولی تھی۔

اقوام متحدہ میں فلسطینی سفیر: اسرائیلی فوج فلسطینی صحافی کے قتل کی ذمہ دار ہے

اقوام متحدہ میں فلسطینی سفیر ریاض منصور نے اقوام متحدہ کے ہیڈ کوارٹر میں پریس کانفرنس کے دوران صیہونی حکومت پر فلسطینی صحافی کی شہادت سے متعلق رپورٹس اور تحقیقات میں ہیرا پھیری کا الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ یہ سچ ہے۔

اقوام متحدہ میں فلسطینی سفیر نے بھی صیہونیوں کی جانب سے اس جرم کی تحقیقات کو مسترد کرتے ہوئے کہا: ہم اس واقعے کے مجرموں کی تحقیقات کو قبول نہیں کرتے، ہم تحقیقات چاہتے ہیں۔ "ہماری خواہش اور پوزیشن یہ ہے کہ یہ تحقیق بین الاقوامی سطح پر قابل اعتبار ہو۔”

اجلاس میں اقوام متحدہ میں فلسطینی سفیر نے بھی اس بات پر زور دیا کہ ان کا ملک قابض اسرائیلی حکام کی تحقیقات کو قبول نہیں کرے گا اور فلسطینی صحافی شیرین ابو عاقلہ کے "قتل” کا ذمہ دار اسرائیلی فوج کو ٹھہرایا۔

اسلامی تعاون تنظیم نے "شیرین ابو عاقلہ” کے قتل کی مذمت کی 

اسلامی تعاون تنظیم کے دفتر نے ایک بیان جاری کیا جس میں الجزیرہ کی فلسطینی صحافی شیرین ابو عاقلہ کے قتل کی مذمت کی گئی۔ اسلامی تعاون تنظیم نے ایک بیان میں جنین میں اس فلسطینی صحافی کی شہادت کی شدید مذمت کی ہے اور اس بات پر زور دیا ہے کہ یہ جرم بین الاقوامی قوانین اور اصولوں کی صریح خلاف ورزی ہے اور اس کے ذمہ داروں کے خلاف تحقیقات اور ٹرائل کی فوری ضرورت ہے۔

قطر میں ایرانی سفیر نے صیہونیوں کے گھناؤنے جرم کی مذمت کی

قطر میں متعین ایرانی سفیر نے الجزیرہ ٹی وی کے رپورٹر "شیرین ابو عاقلہ” کی جنین کیمپ میں صہیونی فوج کے ہاتھوں شہادت کی خبر پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہا: "ہم اپنے گہرے دکھ اور افسوس کا اظہار کرتے ہیں۔ شیرین ابو عقیلہ کی شہادت اور اس گھناؤنے جرم پر افسوس ہے جو بین الاقوامی قانون کی خلاف ورزی کرتا ہے۔” اور یہ انسانیت سوز ہے، ہم اس کی شدید مذمت کرتے ہیں۔

صیہونیوں کے نئے جرم پر ردعمل کا سلسلہ جاری رکھتے ہوئے قطر میں فرانس کے سفیر نے بھی کہا: جنین میں اسرائیلی آپریشن کی پردہ پوشی کرتے ہوئے شیرین ابو عاقلہ کا قتل ایک گہرا صدمہ ہے۔ فرانسیسی سفیر نے کہا کہ ان کا ملک شیرین ابو عاقلہ کے قتل کی مذمت کرتا ہے اور ان کے اہل خانہ سے تعزیت کرتا ہے اور ان کے ساتھی "علی السامودی” کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہے۔

وہ فوری طور پر صحت یاب ہو رہا ہے۔ فرانسیسی وزارت خارجہ نے یہ بھی کہا: "شیریں ابو عاقلہ کا قتل انتہائی افسوسناک ہے اور ہم اس کی مذمت کرتے ہیں اور اس کی شفاف تحقیقات کا مطالبہ کرتے ہیں۔”

ترکی کے صدارتی دفتر کے انفارمیشن آفیسر نے بھی زور دیا: "ہم شیرین ابو عاقلہ کے قتل کی درست، شفاف اور فوری تحقیقات اور اس کے مرتکب افراد کے خلاف مقدمہ چلانے کا مطالبہ کرتے ہیں۔” عوام اور سچ کی خدمت کرنے والے صحافیوں کو نشانہ بنانا کسی صورت قابل قبول نہیں۔

شیرین ابو عاقلہ کی شہادت کی خبر کے جواب میں اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں امریکی نمائندہ لنڈا تھامس گرین فیلڈ نے کہا کہ "جو کچھ ہوا اس کی واضح طور پر تحقیقات ہونی چاہیے اور ہم دونوں فریقین کو تحقیقات میں حصہ لینے کی ترغیب دیتے ہیں۔”

انہوں نے مزید کہا: "پچھلے نومبر میں، جب میں مغربی کنارے میں تھا، میری ملاقات شیریں ابو عقیلہ سے ہوئی، اور اس نے میرے ساتھ بہت اچھا انٹرویو کیا، اور میں ان کے لیے بہت عزت رکھتا تھا۔” صحافیوں کو بغیر کسی خوف کے اپنا کام کرنے کی اجازت دینا ضروری ہے، اور ہمیں اس کی حقیقت تک پہنچنا چاہیے۔

مجرم کا ذکر کیے بغیر؛ امریکا: الجزیرہ کے رپورٹر کا قتل آزادی صحافت کی توہین ہے

جنین کیمپ میں اسرائیلی فورسز کے ہاتھوں الجزیرہ کی نامہ نگار شیریں ابو عاقلہ کی شہادت پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے امریکی محکمہ خارجہ نے کہا کہ ہمیں مغربی کنارے میں شیریں ابو عاقلہ کی ہلاکت کی خبر پر شدید دکھ ہوا ہے اور اس کی شدید مذمت کرتے ہیں۔

وزارت نے مزید کہا: "ابو عاقلہ کے قتل کی تحقیقات فوری اور جامع ہونی چاہیے، اور اس کے قتل کے مرتکب افراد کو جوابدہ ہونا چاہیے۔” امریکی محکمہ خارجہ نے تاکید کی: شیریں ابو عاقلہ کا قتل ہر جگہ آزادی صحافت کی توہین ہے۔

صہیونی مظالم کے ردعمل میں وائٹ ہاؤس نے کہا کہ ہم شیریں ابو عاقلہ کے قتل کی شدید مذمت کرتے ہیں اور اس واقعے کے حقائق کو واضح کرنے کے لیے وسیع تحقیقات کا مطالبہ کرتے ہیں۔ ایک اور پیش رفت میں، امریکی ایوان نمائندگان نے الجزیرہ کے صحافی کی روح کے اعزاز میں ایک منٹ کی خاموشی اختیار کی۔

اسی طرح کے ردعمل میں، یورپی یونین کے خارجہ امور کے ترجمان نے الجزیرہ کے ساتھ ایک انٹرویو میں کہا: "شیرین ابو عاقلہ کے قتل کی تحقیقات جامع اور آزاد ہونی چاہیے تاکہ کوئی بھی اس کی حقیقت پر سوال نہ اٹھا سکے۔” ہم پیش رفت کی قریب سے نگرانی کر رہے ہیں اور مکمل تحقیقات کی توقع رکھتے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ "آزادی صحافت اور صحافیوں کی اپنے فرائض کی انجام دہی کی صلاحیت ہمارے لیے بہت اہم ہے۔” ہم انصاف کا مطالبہ کرتے ہیں اور مکمل اور آزاد تحقیق کی ضرورت ہے۔ الجزیرہ کی شہادت پر ردعمل میں اقوام متحدہ نے کہا: ’’صحافیوں پر حملہ آزادی اظہار پر حملہ ہے اور پریس کا دفاع جمہوریت کا دفاع ہے‘‘۔

امریکی کانگریس میں فلسطینی نمائندے: الجزیرہ کے رپورٹر کو امریکی حمایت یافتہ حکومت نے قتل کر دیا

"امریکی ایوان نمائندگان کی مسلمان اور فلسطینی رکن راشدہ طالب نے جنین میں الجزیرہ ٹی وی کے فلسطینی صحافی "شیرین ابو عقلا” کی شہادت پر ردعمل میں کہا: اور ہمارے ملک (امریکہ) کی حالت یہ ہے کہ اور اس کے اعمال کے لیے جوابدہ نہیں ہوں گے۔

انہوں نے مزید کہا: "جو لوگ اسرائیل کی نسل پرستانہ پالیسی اور طرز عمل کے ساتھ کھڑے ہیں اور اس کی حمایت کرتے ہیں وہ کب کہیں گے کہ بہت ہو گیا؟” راشدہ طالب نے امریکی صدر جو بائیڈن کو بتایا کہ "ان جرائم کا جواب دینے میں ناکامی مزید ہلاکتوں کا باعث بنے گی۔”

صہیونی صحافی: الجزیرہ کے صحافی کا قتل بینٹ لیپڈ حکومت کے تابوت میں آخری کیل ہے

صہیونی صحافی بارک رفید نے الجزیرہ کی فلسطینی صحافی شیرین ابو عقیلہ کی شہادت کے ردعمل میں کہا کہ "اسرائیلی میڈیا نے وزیر اعظم نفتالی بینیٹ کے دفتر، وزارت خارجہ اور فوج سے اس قتل کی تحقیقات کے لیے مشاورت کی۔” شیرین ابو عقیل نے اس کی تردید کی۔ جسے اسرائیلی فوجیوں نے گولی مار دی۔

رفید نے مزید کہا: "اسرائیل تسلیم کرتا ہے کہ ابو عقیل کے قتل کے حوالے سے بیانیہ کو تبدیل کرنا مشکل ہو گا، اور بہترین طور پر یہ نقصان کو کم کر سکتا ہے۔” انہوں نے مزید کہا: "الجزیرہ کے رپورٹر کے قتل نے اسرائیل کو وقار کے بحران میں ڈال دیا ہے، جیسا کہ غزہ جنگ کے دوران ایسوسی ایٹڈ پریس پر بمباری کی گئی تھی۔ صہیونی صحافی نے نتیجہ اخذ کیا: "وہ واقعہ جس میں الجزیرہ کا صحافی جینین میں مارا گیا، بینیٹ لیپڈ مخلوط حکومت کی سیاسی حکومت کے تابوت میں کیل ثابت ہو سکتا ہے۔”

فلسطینی شہید صحافی کے گھر پر صیہونی فوج کا ناکام حملہ

بدھ کی شام فلسطینیوں کی ایک بڑی تعداد فلسطینی شہید کے گھر "شیرین ابو عاقلہ” کے سامنے جمع ہوئی اور انہوں نے مہاکاوی اور قومی ترانے گانا شروع کر دیے۔

اس واقعے کے بعد صہیونی ملیشیا نے ریلی پر حملہ کیا اور فلسطینی مہاکاوی گیتوں کی نشریات کو روکنے کی کوشش کی۔ انہوں نے فلسطینی شہید کی عمارت پر نائٹ اسٹینڈ لگا کر فلسطینی پرچم اتارنے کی بھی کوشش کی۔ لیکن مظاہرین نے نعرے لگائے، صہیونی فوج کو پیچھے ہٹنے پر مجبور کیا اور فلسطینی شہید کے اہل خانہ کی حمایت جاری رکھی۔

صیہونی کنیسٹ کے ایک رکن نے "ابو عاقلہ” کے قتل کی حمایت کی

صیہونی کنیسٹ کے رکن اِتمار کے غفار نے بدھ کے روز بڑے پیمانے پر مذمت کے باوجود شیرین ابو عاقلہ کے قتل کی حمایت میں بیان دیا۔ اس بات پر زور دیتے ہوئے کہ صیہونی حکومت کی گولیوں کا نشانہ صحافی ہیں، انہوں نے اعتراف کیا کہ یہ ملیشیا فلسطینیوں کو نشانہ بنا رہے ہیں اور ان پر گولیاں برسا رہے ہیں۔ خواہ نامہ نگار جائے وقوعہ پر موجود ہوں!

قبل ازیں اسرائیلی وزیراعظم نفتالی بینیٹ نے ایک مضحکہ خیز دعویٰ کرتے ہوئے الجزیرہ کی فلسطینی صحافی شیریں ابو عاقلہ کے دانستہ قتل پر ممکنہ دباؤ سے بچنے کی کوشش کی۔

سن 2000 سے اب تک صیہونیوں کے ہاتھوں 46 فلسطینی صحافی شہید

فلسطینی صحافیوں کی یونین کے نائب صدر تحسین الستال نے کہا کہ فلسطینی صحافیوں کی یونین نے دوسری انتفاضہ کے بعد سے 46 سے زائد فلسطینی صحافیوں کی شہادت کا حوالہ دیتے ہوئے اقوام متحدہ سے مجرموں کے خلاف قانونی چارہ جوئی کا مطالبہ کیا ہے۔

رپورٹ کے مطابق انہوں نے اقوام متحدہ سے مطالبہ کیا کہ وہ صحافیوں کے تحفظ کی ذمہ داری قبول کرے اور فلسطینی صحافیوں کے خلاف اسرائیلی جرائم کے مرتکب افراد کے خلاف قانونی کارروائی کرے۔

ال سٹال نے کہا کہ فلسطینی صحافیوں کے خلاف صیہونی غاصبوں کی طرف سے سالانہ 500 سے 700 حملے اور جرائم ہوتے ہیں۔ "اب وقت آگیا ہے کہ ان جرائم کو روکا جائے اور ان لوگوں کے لیے جنہوں نے ان جرائم کا ارتکاب کیا اور جنہوں نے انہیں انصاف کے کٹہرے میں لانے کا حکم دیا۔” انہوں نے کہا کہ صحافیوں کے خلاف صیہونی حکومت کی جارحیت کا مقصد فلسطینیوں کی پیشرفت کی حقیقی تصویر کو دنیا کے سامنے پیش کرنے سے روکنا ہے۔

صیہونی حکومت کے جرائم کی بین الاقوامی تحقیقات شروع کرنے کی ضرورت پر تاکید

اردن کی حکومت نے صہیونی فوج کے ہاتھوں سرد مہری کے ساتھ شہید ہونے والے شیرین ابو عقلا کے قتل کی شدید مذمت کی ہے۔ کویتی وزارت خارجہ نے بھی ایک بیان جاری کیا: "ہم فلسطینی صحافی شیرین ابو عاقلہ کے قتل میں قابض فوج کی طرف سے کیے گئے جرم کی شدید مذمت کرتے ہیں”۔

کویتی وزارت خارجہ نے اس گھناؤنے جرم کے مرتکب افراد کو انصاف کے کٹہرے میں لانے کے لیے بین الاقوامی تحقیقات کا مطالبہ بھی کیا۔ لیبیا کی سپریم کونسل کے سربراہ نے بھی بدھ کے روز فلسطینی صحافی کے خلاف صہیونی فوج کے جرائم کی مذمت کرتے ہوئے ایک بیان جاری کیا۔

تیونس کی عوامی تحریک نے بھی ایک بیان جاری کیا جس میں عرب اداروں اور میڈیا پر زور دیا گیا ہے کہ وہ صیہونی دہشت گرد فوج کے جرائم کو بین الاقوامی میدان میں سنجیدہ بین الاقوامی متحرک ہونے کے ساتھ اٹھائے۔ شام اور عراق کے صحافیوں کی یونین نے بھی صہیونی جرائم کی مذمت کرتے ہوئے الگ الگ بیانات جاری کیے اور اس جرم کے مرتکب افراد کو انصاف کے کٹہرے میں لانے کا مطالبہ کیا۔

اسماعیل ہنیہ نے شیریں ابو عاقلہ کی شہادت پر تعزیت کا اظہار کیا

اسلامی مزاحمتی تحریک حماس کے سیاسی بیورو کے سربراہ اسماعیل ھنیہ نے فلسطین میں الجزیرہ کے ڈائریکٹر ولی العمری کے ساتھ ٹیلیفون پر گفتگو میں ایک فلسطینی صحافی شیرین ابو عاقلہ کی شہادت پر تعزیت کا اظہار کیا۔ اسماعیل ہنیہ نے اس بات پر زور دیا کہ ہم اس بہادر لڑکی کی شہادت پر تعزیت پیش کرتے ہیں جس نے عصری تاریخ کے سب سے ہولناک قبضے کو بے نقاب کرنے کے لیے اپنی جان قربان کردی۔ حنیہ نے کہا کہ شیرین ابو عقیلہ اس نسل کی یاد میں ہمیشہ زندہ رہیں گے جو قابضین کو فلسطین کی سرزمین سے بے دخل کرنے تک جدوجہد جاری رکھے گی۔

انہوں نے مزید کہا کہ فلسطین کے صحافی اور میڈیا کے ارکان حق کے محافظ کی حیثیت سے شیریں ابو عقیلہ اور اس سے پہلے فلسطین میں میڈیا تحریک کے شہداء کے اختیار کردہ راستے کو جاری رکھیں گے اور تمام آزاد صحافی جو صحافت کو قومی حیثیت سمجھتے ہیں۔ ڈیوٹی اور اس لیے کہ انہوں نے سچائی کو دریافت کیا ہے، اس بات پر زور دیتے ہوئے کہ ان کی آواز گولیوں کی آواز سے کہیں زیادہ موثر اور بلند ہوگی۔

مشیل عون: صہیونی جرائم سے بھری خونی تاریخ میں ایک اور جرم کا اضافہ ہوگیا

لبنان کے صدر میشل عون نے شیرین ابو عاقلہ کو شہید کرنے کی صیہونی حکومت کی کوشش کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ "صیہونی جرائم سے بھری خونی تاریخ میں ایک اور جرم کا اضافہ کر دیا گیا”۔

قدس بٹالین جنین برانچ: ہم اپنی قوم کا ساتھ دیں گے/ شیرین ابو عاقلہ کے خون کو پامال نہیں کیا جائے گا

جنین برانچ کی قدس بٹالین نے اعلان کیا ہے کہ صیہونی حکومت کے فوجیوں نے شہید عبداللہ الحسری کے گھر سمیت بعض فلسطینی جنگجوؤں کے گھروں کو گھیرے میں لے لیا ہے اور ان کے اغوا کاروں کو گرفتار کرنے کی مایوس کن اور ناکام کوشش کی ہے۔

رپورٹ کے مطابق جنین شاخ کی قدس بٹالین نے تاکید کرتے ہوئے کہا: جنین کیمپ میں قابضین کے ساتھ شدید جھڑپیں ہوئیں اور فلسطینی جنگجوؤں کی گولیوں اور بموں سے قابضین کا مقابلہ کرنے کے بعد صیہونی فوجی منصوبہ ناکام ہوگیا۔

القدس بٹالین نے تاکید کی: صیہونی حکومت کی فوج، فلسطینی جنگجوؤں کو حراست میں لینے کے اپنے مقاصد میں ناکامی کے بعد، جان بوجھ کر فلسطینی صحافیوں سے بدلہ لینے کی کوشش کر رہی ہے۔ ہم جنین کیمپ پر حملہ کرنے والے قابضین کے ہاتھوں شہید ہونے والے شیرین ابو اقلہ کی شہادت پر تعزیت پیش کرتے ہیں۔

قدس بٹالین نے ایک بیان میں کہا: "ہم اپنی قوم اور ایمبریو کیمپ کی حمایت کریں گے۔”شیرین ابو عاقلہ کا خون نہیں روندا جائے گا

عراقی پاپولر موبلائزیشن آرگنائزیشن: "ابو عاقلہ” کی شہادت فلسطینی کاز کے دفاع کی صدا رہے گی۔

عراق کی پاپولر ریلی آرگنائزیشن نے صہیونی عسکریت پسندوں کے ہاتھوں فلسطینی صحافی شیرین ابو عاقلہ کی شہادت پر ردعمل کا اظہار کیا ہے۔ عراقی پاپولر ریلی آرگنائزیشن نے بدھ کی صبح جنین کیمپ پر اسرائیلی حملے کی کوریج کرتے ہوئے قابض حکومت کے ہاتھوں گولی کا نشانہ بننے والی فلسطینی صحافی "شیرین ابو عاقلہ” کی شہادت پر تعزیت کا اظہار کیا۔

فلسطینی عوام کے خلاف قابض حکومت کے جرائم اور جنین کیمپ پر مسلسل حملوں پر بین الاقوامی خاموشی کی روشنی میں، فلسطینی کاز کے دفاع میں ایک بہادر اور سرکردہ فلسطینی صحافی "شیرین ابو عاقلہ” کی شہادت کی خبر۔ شروع سے ہی، ایک بیان میں اعلان کیا گیا تھا، ان کے کام کو دو دہائیوں سے زائد عرصہ قبل گھر جاتے ہوئے ان کی شہادت کے لمحے تک سنا گیا تھا۔

عراقی عوامی ریلی نے تاکید کی: دکھ اور فخر سے بھرے ان لمحات میں عراقی عوامی ریلی تنظیم کا جنرل انفارمیشن آفس فلسطین، ابو اکلہ کے خاندان، پریس کے اہل خانہ اور پوری دنیا کے آزاد ہونے والوں کے ساتھ دلی تعزیت اور یکجہتی کا اعلان کرتا ہے۔

اپنے بیان میں تنظیم نے سچائی اور مزاحمت کے راستے کے لیے اپنی وابستگی پر زور دیا جس کے علمبرداروں میں ابو اکلہ شامل تھے اور ان کی معراج کے بعد بھی فلسطینی کاز کے دفاع کے لیے آواز بلند رہے گی۔

عرب لیگ: شیریں ابو عقلہ کی شہادت کے مجرموں کے خلاف مقدمہ چلایا جائے

بدھ کو جاری کردہ ایک بیان میں عرب لیگ نے صیہونی حکومت کے ہاتھوں الجزیرہ کی فلسطینی صحافی شیرین ابو عاقلہ کے قتل کی شدید مذمت کی ہے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ ’’ہم جینین کیمپ میں شیرین ابو اقلہ کے قتل کے گھناؤنے جرم کی شدید مذمت کرتے ہیں۔ اس جرم کا مقصد حق کی آواز کو تباہ کرنا اور آزادی کی پکار کو دبانا اور انسانی انصاف سے متعلق مسائل کا دفاع کرنا ہے۔

عرب لیگ نے کہا کہ صیہونی حکومت اپنے مجرمانہ اہداف کو پے درپے حملوں اور صوبہ "جنین” کو مسلسل نشانہ بنانے کے ساتھ ساتھ فلسطینیوں کے خلاف بڑھتی جارحیت کے ذریعے حاصل کر رہی ہے۔

تنظیم نے صیہونی حکومت کو اس جرم کا ذمہ دار ٹھہرایا اور مطالبہ کیا کہ تمام مجرموں کے خلاف بین الاقوامی حکام سے مقدمہ چلایا جائے اور ان کا احتساب کیا جائے۔

فلسطینی صحافی کی شہادت سے متعلق اسرائیلی وزیراعظم کا مضحکہ خیز دعویٰ

اسرائیلی وزیر اعظم نفتالی بینیٹ نے ایک مضحکہ خیز دعویٰ کرتے ہوئے الجزیرہ کی فلسطینی صحافی شیرین ابو عاقلہ کے جان بوجھ کر قتل کیے جانے کے بعد ممکنہ دباؤ سے بھاگنے کی کوشش کی۔

اس رپورٹ کے مطابق صیہونی حکومت کے وزیر اعظم نے ایک مضحکہ خیز دعویٰ کرتے ہوئے کہا کہ وہ پیشین گوئی کرتے ہیں کہ فلسطینیوں نے الجزیرہ کے رپورٹر کو گولی مار کر قتل کر دیا!

صیہونی وزیر اعظم کا یہ مضحکہ خیز دعویٰ ایسی صورت حال میں کیا گیا ہے جب صیہونی شخصیات جیسے "اتمر بن غفیر” کنیسٹ کے رکن اور صہیونی فوج کے سابق ترجمان "عوی بینیہو” نے صیہونی کے ہاتھوں اس فلسطینی صحافی کے قتل کی تصدیق کی ہے۔ فوجی

"ابو عاقلہ” کی شہادت پر صیہونی حکومت کے جرم پر لبنان کی حزب اللہ کا رد عمل

لبنانی حزب اللہ نے الجزیرہ کی رپورٹر شیرین ابو عاقلہ کی شہادت پر ایک بیان کے ذریعے ردعمل کا اظہار کیا ہے۔

لبنانی حزب اللہ نے الجزیرہ اور شیرین ابو عاقلہ کے اہل خانہ سے تعزیت اور ہمدردی کا اظہار کرتے ہوئے فلسطینی عوام کے خلاف صیہونی حکومت کے جرائم کی پردہ پوشی کرنے پر اس شہید صحافی کی خصوصی تشویش کا اظہار کیا اور تاکید کی: شہید ابو عاقلہ نے اس سے کوئی دریغ نہیں کیا۔ فلسطینی عوام کے خلاف صیہونی حکومت کے جرائم پر پردہ ڈالیں۔

بیان میں کہا گیا ہے: "ہم الجزیرہ اور شہید شیرین ابو عاقلہ کے اہل خانہ اور فلسطینی میڈیا میں ان کے ساتھیوں سے ہمدردی اور تعزیت کا اظہار کرتے ہیں۔”

تنازعہ کے مرکز میں شیرین ابو عاقلہ کی شہادت اس متاثر کن کردار کو ظاہر کرتی ہے جو بہادر صحافی اسرائیلی حملوں کو بے نقاب کرنے میں ادا کرتے ہیں۔

صیہونی حکومت نے "شیرین ابو عاقلہ” کی شہادت کی تحقیقات کا مطالبہ کیا!

صہیونی فوج نے ایک غیر معمولی اقدام کرتے ہوئے "شیرین ابو عاقلہ” کی شہادت کی فلسطینی اتھارٹی کے ساتھ مشترکہ تحقیقات کی تجویز پیش کی۔ اس طرح فلسطینی اتھارٹی نے مبینہ طور پر صیہونی حکومت کی تجویز کی مخالفت کرتے ہوئے کہا کہ "شیرین ابو عاقلہ” کی شہادت ایک صریح جرم اور دہشت گردی ہے۔

صیہونی حکومت کو فلسطینی صحافی کے جان بوجھ کر قتل کرنے کی سزا ملنی چاہیے: حماس

فلسطینی صحافی شیر ابو عاقلہ کی شہادت پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے حماس نے ایک بیان میں کہا: "شیرین ابو عاقلہ کا قتل ایک اور جرم ہے جس نے یروشلم میں قابض حکومت کی طرف سے بالخصوص فلسطینی میڈیا کے خلاف جرائم کے سلسلے میں اضافہ کیا ہے۔” بیان میں کہا گیا ہے کہ "جو کچھ ہوا وہ ایک دانستہ اور صریح قتل ہے جس کی بین الاقوامی حلقوں میں صیہونی حکومت کو سزا ملنی چاہیے۔”

دوسری جانب یورپی یونین کے وفد برائے فلسطین نے ایک بیان جاری کر کے شیرین ابو عاقلہ کے قتل کے مرتکب افراد کی فوری اور آزادانہ تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے۔ دریں اثناء یورپی یونین کی طرف سے صیہونی حکومت کی مسلسل حمایت اس حکومت کے جرائم کے تسلسل کے اہم عوامل میں سے ایک ہے۔

قطر: "شیرین ابو عاقلہ” کی شہادت نے صیہونی حکومت کی دہشت گردی کو ثابت کردیا

قطری وزارت خارجہ نے صیہونی حکومت کے ہاتھوں الجزیرہ کی فلسطینی صحافی شیرین ابو عاقلہ کے قتل کی شدید مذمت کرتے ہوئے اسے انسانی قانون کی صریح خلاف ورزی قرار دیا ہے۔ الجزیرہ کے نامہ نگار شیرین ابو عاقلہ کی شہادت پر ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے قطر کے نائب وزیر خارجہ لولو الخطر نے کہا کہ صیہونی حکومت نے ابو عاقلہ کو شہید کرکے اپنے مجرمانہ ریکارڈ میں ایک اور گھناؤنے جرم کا اضافہ کیا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ صیہونی حکومت کا یہ جرم عام شہریوں کے خلاف اس کی دہشت گردی پر تصدیق کی مہر ہے۔

شہید ابو عاقلہ کی نماز جنازہ جنین شہر میں ادا کی گئی

الجزیرہ کی فلسطینی صحافی شیریں ابو عاقلہ کی نماز جنازہ شروع ہو گئی ہے۔ رپورٹ کے مطابق فلسطینی مزاحمتی جنگجوؤں نے مقبوضہ فلسطین کے "جنین” کیمپ میں "شہید ابو عاقلہ” کی نماز جنازہ اور ماتمی تقریب کا انعقاد کیا۔

المیادین: صیہونیوں کا ہدف اس حکومت کے جرائم کی پردہ پوشی نہ کرنے کے لیے خوف و ہراس پھیلانا ہے

المیادین نیٹ ورک نے الجزیرہ کی فلسطینی نامہ نگار شیریں ابو عاقلہ کی شہادت پر اپنے شدید تاثرات کا اظہار کرتے ہوئے کہا: "شہید شیریں ابو عاقلہ ادب، پیشہ ورانہ مہارت اور فلسطینی قومی اصولوں کی پاسداری کا نمونہ تھیں، جس کا بدقسمتی سے فلسطینیوں میں فقدان ہے۔”

بیان میں مزید کہا گیا: "اس فلسطینی صحافی کے قتل کا جرم فلسطینی عوام، اس کے جنگجوؤں اور جنگجوؤں کو نشانہ بنانے میں صیہونی حکومت کی گہری پالیسی کو ظاہر کرتا ہے۔”

المیادین نیٹ ورک نے شیرین ابو عاقلہ کے قتل کو دانستہ قتل قرار دیتے ہوئے تاکید کی: "اس جرم کا ارتکاب میڈیا کو دھمکانے کے لیے کیا گیا ہے کہ وہ صیہونی حکومت کے جرائم اور دہشت گردانہ پالیسیوں کو بے نقاب کرنے والی کسی بھی چیز کو چھپانے سے گریز کریں۔”

محمود عباس: شیریں ابو عاقلہ کی شہادت کا ذمہ دار اسرائیل ہے

فلسطینی اتھارٹی کے سربراہ محمود عباس نے الجزیرہ کی فلسطینی صحافی شیرین ابو عاقلہ کی شہادت پر ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ابو عقلا کے قتل کی پوری طرح ذمہ دار صیہونی حکومت ہے۔

قابل ذکر ہے کہ حماس کے ترجمان حازم قاسم نے تاکید کرتے ہوئے کہا: شیرین ابو عاقلہ کے قتل کا جرم ایک اور جرم ہے جو فلسطین میں میڈیا کے خلاف صیہونی حکومت کے جرائم کے ریکارڈ کے سلسلے میں شامل ہے۔

دوسری جانب موق کے دفتر فلسطینی عوامی امہ نے بھی ایک بیان جاری کرتے ہوئے تاکید کی ہے: "شیرین ابو عاقلہ کے قتل کا جرم صیہونی حکومت کا حق کے خلاف ایک جنگی جرم ہے اور یہ اس بات کا واضح ثبوت ہے کہ صیہونی حکومت تشدد کی زبان کے علاوہ کسی دوسری زبان کو سمجھتی ہے۔”

شہید "ابو عاقلہ” کو قتل کرنا عالمی قوانین کی صریح خلاف ورزی ہے

صہیونی فوج کے ہاتھوں ابو عاقلہ کی شہادت پر الجزیرہ کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے: ’’یہ تباہ کن قتل تمام بین الاقوامی قوانین اور توہم پرستی کی خلاف ورزی کرتا ہے، یہ ایک ایسا جرم ہے جس میں قابض افواج نے خاموشی سے الجزیرہ کے رپورٹر کی توہین کی‘‘۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ ہم اس گھناؤنے جرم کی مذمت کرتے ہیں جس کا مقصد میڈیا کو اس کے حقیقی مشن کی تکمیل سے روکنا ہے اور صہیونی فوج اور اس کی کابینہ کو اس قتل کا ذمہ دار ٹھہراتے ہیں۔

الجزیرہ نے زور دے کر کہا: "ہم عالمی برادری سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ اس فعل کی مذمت کریں اور صہیونی ملیشیا کو شیرین ابو عاقلہ کے دانستہ قتل کے لیے جوابدہ ٹھہرائیں۔”

دوسری جانب فلسطین میں الجزیرہ نیٹ ورک کے دفتر کے ڈائریکٹر نے عینی شاہدین کے حوالے سے کہا: "شیرین کی فورسز کی فائرنگ جان بوجھ کر کی گئی اور گولی اس کے کان میں اس جگہ لگی جہاں اس نے ہیلمٹ پہن رکھا تھا”۔

صیہونی رپورٹر نے تسلیم کیا؛ ابو عاقلہ کی شہادت ایسوسی ایٹڈ پریس کی بمباری سے جھلکتی ہے-

صہیونی صحافی نے اعتراف کیا کہ شیریں ابو عاقلہ الجزیرہ کے قدیم ترین اور معروف صحافیوں میں سے ایک ہیں، جو تمام عرب اور غیر عرب ممالک میں مشہور ہیں، اور اس کی گواہی حالیہ جنگ کے دوران ایسوسی ایٹڈ پریس کی بمباری سے ظاہر ہوگی۔

صیہونی حکومت جان بوجھ کر صحافیوں کو نشانہ بنا رہی ہے

فلسطین میں المیادین کے دفتر کے سربراہ نے الجزیرہ کے رپورٹر کی شہادت کے بارے میں تاکید کی: "شیرین ابو عاقلہ کی شہادت کا مطلب یہ ہے کہ صیہونی رہ نماؤں نے اس حکومت کی فوج کو صحافیوں کے قتل کے احکامات دیے ہیں۔”

انہوں نے مزید کہا: "صحافیوں پر اس طرح سے گولی چلانے کا مطلب یہ ہے کہ صیہونی حکومت نے خبروں کی کوریج اور اظہار رائے کی آزادی کو محدود کرنے کے لیے سنگین فیصلے کیے ہیں۔”

دوسری جانب حماس کے ترجمان حازم قاسم نے تاکید کرتے ہوئے کہا: "شیرین ابو عاقلہ کے قتل کا جرم ایک اور جرم ہے جو فلسطین میں میڈیا کے خلاف صیہونی حکومت کے جرائم کے ریکارڈ کے سلسلے میں شامل ہو گیا ہے۔”

فلسطین کے عوامی مزاحمتی دفتر نے بھی ایک بیان جاری کیا جس میں تاکید کی گئی ہے: "شیرین ابو عاقلہ کے قتل کا جرم صیہونی حکومت کا حق کے خلاف ایک جنگی جرم ہے اور یہ اس بات کا واضح ثبوت ہے کہ صیہونی حکومت اپنی زبان کے علاوہ کسی دوسری زبان تشدد اور قتل کو سمجھتی ہے۔”

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں