فلسطینی

اب دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی الگ ہو گیا ہے

پاک صحافت یمن کی انصاراللہ تنظیم کے سربراہ نے فلسطین کے مظلوم عوام کی حمایت پر تاکید کرتے ہوئے کہا ہے کہ اکثر ممالک اور حکومتیں خاموش تماشائی بنی ہوئی ہیں اور ان میں سے بعض نے دشمنوں کے ساتھ ہاتھ ملا رکھا ہے اور خفیہ طور پر صیہونی دشمن کی حمایت کر رہے ہیں۔

عبدالمالک بدرالدین حوثی نے کہا کہ صیہونی حکومت کے حملوں کی وجہ سے فلسطین کے مظلوم عوام کو شدید مشکلات اور پریشانیوں کا سامنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ غزہ پر اسرائیل کے وحشیانہ حملوں کے پہلے ہی دن امریکہ، برطانیہ اور بیشتر بڑے یورپی ممالک نے مختلف طریقوں سے صیہونی دشمن کی حمایت کی۔

انہوں نے کہا کہ صیہونی حکومت کے پاس بڑی فوجی صلاحیتوں اور ہتھیاروں کے باوجود امریکہ اور مغرب نے صیہونی حکومت کی طرح طرح کے ہتھیاروں، پیسے اور ٹیکنالوجی سے مدد کی۔

انہوں نے کہا کہ امریکہ نے سلامتی کونسل میں تیسری بار ویٹو کرکے قرارداد کی منظوری کو روکا اور صیہونی دشمن کی مدد کی۔ انہوں نے کہا کہ امریکہ فلسطینی عوام کے قتل عام اور نسل کشی پر اصرار کرتا ہے اور غزہ میں فلسطینی عوام کی بھوک سے مرنے کی حمایت کر رہا ہے۔

اسی طرح انہوں نے کہا کہ امریکہ اس کے جرائم میں اسرائیل کا حقیقی ساتھی ہے اور واشنگٹن کو صیہونی حکومت کے جرائم میں اس کی حمایت برطانیہ سے ورثے میں ملی ہے، واشنگٹن سلامتی کونسل اور لیگ آف نیشنز کے کردار کی حمایت میں رکاوٹیں ڈال رہا ہے۔

یمن کی انصاراللہ تنظیم کے سربراہ نے کہا کہ فلسطین کے مظلوم عوام کی طرف مسلمانوں کی حمایت کہاں ہے؟ فلسطینی عوام حمایت اور مدد کے مستحق ہیں اور بعض حکومتوں کی خاموشی صیہونی حکومت کے جرائم کے ارتکاب کا باعث بنی ہے۔ انہوں نے کہا کہ غزہ کی پٹی کے حالات جتنی بدتر ہو رہے ہیں، اتنی ہی زیادہ ذمہ داری مسلمانوں کی ہے، کیا مسلمان غزہ کے لوگوں کی مدد کرنے سے پہلے ان کے مکمل طور پر تباہ ہونے کا انتظار کر رہے ہیں؟

اسی طرح عبدالمالک الحوسی نے کہا کہ غزہ میں بھوک کی وجہ سے مرنے والوں کی تعداد میں اضافہ ہو رہا ہے اور مرنے والوں میں بہت سے بچے اور بوڑھے ہیں حتیٰ کہ جانوروں کا چارہ بھی ختم ہو رہا ہے۔ غزہ میں لاکھوں فلسطینی بھوکے ہیں اور وہ اسلامی ممالک اور اقوام سے مدد کے خواہاں ہیں۔

اسی طرح انہوں نے کہا کہ صیہونی حکومت نے بعض فلسطینی قیدیوں کو قتل کیا جن میں خواتین اور بچے بھی شامل ہیں۔ اسی طرح انہوں نے کہا کہ مغرب خواتین کے حقوق کی حمایت پر فخر کرتا ہے، جب اسرائیل فلسطینی خواتین اور بچوں کو قتل کرتا ہے تو اس کا خواتین کی حمایت کا نعرہ کہاں جاتا ہے۔

اس وقت مغرب سے خواتین کی حمایت میں کوئی آواز نہیں سنائی دے رہی۔ انہوں نے کہا کہ مغرب غیر اخلاقی، غیر اخلاقی یا معاشروں کو تباہ کرنے والی چیزوں پر خواتین کی حمایت میں نعرے لگاتا ہے۔

تاہم امریکہ، مغربی اور یورپی ممالک انسانی حقوق، حقوق اطفال اور حقوق نسواں کے دعوے کرنے میں کس حد تک سچے ہیں، یہ پوری دنیا پر پوری دنیا پر واضح ہو گیا ہے کہ ان کی فلسطین کے مظلوم عوام کے خلاف کارروائیوں سے انسانیت سے محبت کا نام ہی دکھائی دے رہا ہے۔ ان کے چہروں پر جو ماسک تھا وہ بھی مکمل طور پر نظر آنے لگا ہے۔

یہ بھی پڑھیں

اسرائیلی

اسرائیلی فوج کے ملٹری انٹیلی جنس ڈیپارٹمنٹ کے سربراہ نے استعفیٰ دے دیا

پاک صحافت صیہونی ذرائع ابلاغ نے اطلاع دی ہے کہ 7 اکتوبر 2023 کو فلسطینی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے