رئیسی

صدر کا دورہ امریکہ کن وجوہات کی بنا پر اہم ہے؟

پاک صحافت ایران کے صدر سید محمد ابراہیم رئیسی اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے سالانہ اجلاس میں شرکت کے لیے دوسری مرتبہ کل نیویارک پہنچے۔

صدر نیویارک میں جنرل اسمبلی کے سالانہ اجلاس سے خطاب کریں گے اور دیگر ممالک کے رہنماؤں سے ملاقات کریں گے۔ اسی طرح صدر ایک پریس کانفرنس بھی کریں گے جس میں وہ صحافیوں کے سوالات کے جوابات دیں گے اور ایران کا نقطہ نظر بیان کریں گے۔

گزشتہ سال بھی صدر اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے سالانہ اجلاس میں شرکت کے لیے نیویارک گئے تھے اور گزشتہ سال جنرل اسمبلی میں اپنی تقریر کے دوران صدر نے امریکی جرائم کی طرف اشارہ کیا تھا اور صدر نے کہا تھا کہ امریکہ اس کی حمایت کر رہا ہے۔ دہشت گرد گروہ داعش ہے۔

اسی طرح صدر نے اپنی تقریر کے دوران جنرل قاسم سلیمانی کی تصویر اٹھاتے ہوئے کہا کہ انہیں ڈونلڈ ٹرمپ کے حکم پر شہید کیا گیا اور اس کے بعد چند لمحے خاموش رہے۔ صدر رئیسی نے اسی طرح جوہری معاہدے کی طرف اشارہ کیا اور تمام فریقوں سے اس پر عمل درآمد اور اقوام متحدہ کی قرارداد پر کاربند رہنے کا مطالبہ کیا۔

صدر نے اسی طرح کہا تھا کہ ان کی حکومت دنیا کے تمام ممالک بالخصوص پڑوسی ممالک کے ساتھ موثر لین دین اور تعاون کی خواہشمند ہے۔ تمام رکن ممالک کو اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں اپنے خیالات پیش کرنے کا یکساں حق حاصل ہے۔ اس نقطہ نظر سے صدر مملکت سید محمد ابراہیم رئیسی کے دورہ نیویارک کا مختلف پہلوؤں سے جائزہ لیا جانا چاہیے کیونکہ یہ بین الاقوامی تبدیلیوں کے حوالے سے ایران کے خیالات کو بیان کرنے کا سنہری موقع ہے اور دنیا کے کئی ممالک کے رہنما اس حوالے سے دو طرفہ ملاقاتیں بھی کرتے ہیں۔

لیگ آف نیشنز اور لیگ آف نیشنز کی جنرل اسمبلی مختلف ممالک کے لیے اپنے خیالات کے اظہار کے لیے بہترین پلیٹ فارم ہیں۔ صدر مملکت نے یہ بھی کہا ہے کہ لیگ آف نیشنز کی جنرل اسمبلی میں ان کی موجودگی ایران کے خیالات بیان کرنے کا ایک بہترین اور اہم موقع ہے۔

اس سال اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کا سالانہ اجلاس ایسے حالات میں منعقد ہو رہا ہے جب ایران شنگھائی اور برکس تنظیموں کا رکن ملک بن گیا ہے۔ اسی طرح ایران کے پڑوسی ممالک کے ساتھ تعلقات پہلے سے زیادہ قریبی ہو گئے ہیں۔ سعودی عرب کے ساتھ ایران کے تعلقات کو اسی تناظر میں دیکھا جا سکتا ہے۔

اسی طرح ایران اور امریکہ کے درمیان تہران کے خلاف پابندیوں کے خاتمے کے لیے بالواسطہ بات چیت کا عمل جاری ہے۔ اس حوالے سے ایران کی وزارت خارجہ کے ترجمان ناصر کنانی چافی نے کہا ہے کہ پابندیوں کے خاتمے کے حوالے سے بات چیت اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس کے موقع پر بھی ہو سکتی ہے۔ مجموعی طور پر اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے سالانہ اجلاس میں صدر مملکت کی شرکت ایران کے خیالات کے اظہار کا ایک بہترین موقع ہے۔

یہ بھی پڑھیں

اسرائیلی

ہیگ کے سابق پراسیکیوٹر نے اسرائیل کو جوابدہ ٹھہرانے کے لیے بین الاقوامی قانون کے طریقہ کار کی تشکیل پر زور دیا

پاک صحافت بین الاقوامی عدالت انصاف کے سابق پراسیکیوٹر “لوئیز مورینو-اوکومبو” نے خان یونس میں …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے