عراق اور کویت

عراق اور کویت کا سرحدی تنازع اس وقت سر کیوں اٹھا؟

پاک صحافت کویت کے وزیر خارجہ کے حالیہ دورہ بغداد اور بغداد میں اپنے عراقی ہم منصب کے ساتھ ایک پریس کانفرنس میں ان کے بیان نے ایک بار پھر کویت اور عراق کے درمیان سرحدی تنازع کو جنم دیا ہے۔ عراق اور کویت کا سرحدی تنازع بہت پرانا ہے لیکن سوال یہ ہے کہ اس وقت اس موضوع پر خصوصی توجہ کیوں دی گئی؟

ام قصر سرحدی علاقے میں عراقی گھروں کو خالی کرنے کے عراق کے وعدے کے بارے میں کویت کے وزیر خارجہ کے حالیہ بیان نے ایک بار پھر کویت اور عراق کے درمیان سرحد کھینچنے کے معاملے کو گرما دیا ہے۔

حالیہ 20 برسوں کے دوران عراق اور کویت کے تعلقات ماضی کی نسبت کچھ بہتر رہے ہیں لیکن خلیج فارس کے منہ پر واٹرشیڈ کی تعمیر کا مسئلہ ہمیشہ دونوں ممالک کے تعلقات کو متاثر کرتا رہا ہے۔

اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قرارداد نمبر 833 کی وجہ سے سلامتی کونسل کی جانب سے عراق اور کویت کے درمیان سرحدوں کے تعین کے باوجود آبی سرحد کے حوالے سے دونوں فریقوں کے درمیان اختلافات پائے جاتے ہیں۔

المیادین چینل نے اپنے ایک مضمون میں عراق اور کویت کے درمیان جاری سرحدی تنازع کی تفصیلات پیش کرتے ہوئے لکھا ہے کہ عراق اور کویت کی حکومت کے اعلان کے بعد سرحد کے تعین کا معاملہ ایک بار پھر گرم ہوگیا، یہ موضوع تقریباً 200 سال پرانا ہے اور یہ ایک بار پھر لوگوں کی توجہ مبذول کرائی ہے۔

اس آرٹیکل کے مطابق عراق اور کویت کے درمیان سرحدی تنازعہ بہت پرانا ہے اور اس کا نیا منصوبہ ہر بار دونوں دوست ممالک کے درمیان سیاسی تعلقات کی سطح میں اضافہ یا کمی کرتا ہے۔ اس بحران کی جڑیں 1990 میں عراق کے کویت پر حملے سے ملتی ہیں۔ 1991 میں کویت پر عراق کے حملے کے خاتمے کے بعد اقوام متحدہ نے دونوں فریقوں کے درمیان ثالثی کی ذمہ داری سنبھالی اور پھر 1993 میں دونوں ممالک کے درمیان صرف زمینی سرحد کا تعین ہوا۔ سمندری حدود کی حد بندی، عراق کے ساتھ صرف 58 کلومیٹر کی ساحلی پٹی دونوں ممالک کے لیے بہت اہمیت کی حامل ہے اور دونوں فریقوں کی مشترکہ تکنیکی کمیٹی نے اب تک چھ اجلاس کیے ہیں۔

مصنفین مزید لکھتے ہیں کہ خطے میں کشیدگی 2010 میں اس وقت شروع ہوئی جب کویت نے الخور مغربی کنارے میں مبارک نامی ایک بڑی بندرگاہ کا سنگ بنیاد رکھا، اسی وقت بغداد نے اس کے سامنے واقع فاؤ بندرگاہ کا سنگ بنیاد رکھا۔

بغداد کا کہنا ہے کہ کویت ظہلہ کے علاقے کو مضبوط بنانے کے لیے ایک بندرگاہ بنا رہا ہے اور اس نے اس کے لیے عراق سے اجازت بھی نہیں لی ہے اور کویت کا یہ اقدام عراق کی خودمختاری کی خلاف ورزی ہے۔

یہ بھی پڑھیں

گیلنٹ

گیلنٹ: اسرائیل نے گزشتہ 75 سالوں میں ایسی جنگ نہیں دیکھی

پاک صحافت صیہونی حکومت کے وزیر جنگ یوف گیلنٹ نے غزہ کی جنگ میں اسرائیلی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے