بچہ

صہیونی میڈیا: غزہ پر حملہ امریکہ کی ہری جھنڈی سے ہوا

پاک صحافت صیہونی حکومت کے طیاروں نے ایک بار پھر غزہ کے نہتے عوام کو نشانہ بنایا اور صیہونی میڈیا کی رپورٹوں کے مطابق یہ حملہ امریکہ کی ہری جھنڈی کے ساتھ کیا گیا۔

منگل کے روز سما نیوز ایجنسی کے حوالے سے ارنا کی رپورٹ کے مطابق صہیونی میڈیا نے آج صبح غزہ کی پٹی پر اسرائیلی فوج کے حملے کے بعد انکشاف کیا ہے کہ یہ حملہ امریکہ کی ہری جھنڈی کے ساتھ کیا گیا ہے۔

صیہونی میڈیا کے مطابق اس حملے سے قبل صیہونی حکومت کے وزیر خارجہ نے اپنے امریکی ہم منصب سے ٹیلیفون پر بات چیت کی۔

صہیونی ریڈیو نے یہ بھی دعویٰ کیا کہ اس نے مصر کو حملے کی تفصیلات سے آگاہ کیا۔

واشنگٹن کی تل ابیب کی مسلسل حمایت کے سائے میں غزہ کی پٹی نے آج صبح ایک بار پھر فلسطینی قوم کے خلاف اسرائیلی فوج کے فضائی حملے کا مشاہدہ کیا۔ غزہ میں الشفاء میڈیکل کمپلیکس کے ڈائریکٹر کے مطابق اس جرم میں 13 افراد شہید اور 20 زخمی ہوئے ہیں۔ زخمیوں میں 3 بچے اور 7 خواتین شامل ہیں۔

“محمد ابو سرینح” کے مطابق شہید ہونے والوں میں 4 بچے اور 6 خواتین بھی شامل ہیں اور بعض زخمیوں کی حالت تشویشناک بتائی جاتی ہے۔

غزہ کی پٹی میں منگل کی علی الصبح رہائشی عمارتوں میں دھماکوں کی آواز آنے کے بعد صیہونی حکومت نے اعلان کیا کہ اس کے جنگجوؤں نے غزہ کی پٹی میں فلسطینی اسلامی جہاد تحریک کے تین کمانڈروں اور متعدد خواتین اور بچوں کو نشانہ بنایا۔

اس حکومت نے اعلان کیا ہے کہ غزہ کی پٹی کے 40 کلومیٹر کے اندر موجود مقبوضہ علاقوں کے باشندوں کو فلسطینی مزاحمت کے جوابی حملوں کے خوف سے 18 تاریخ بروز منگل صبح 2:30 بجے سے شام تک پناہ گاہوں کے قریب رہنا چاہیے۔

صہیونی ریڈیو نے یہ بھی اعلان کیا ہے کہ 40 جنگی طیاروں، ڈرونز اور ہیلی کاپٹروں نے آج صبح غزہ کی پٹی پر دہشت گردی کی کارروائی اور حملے میں حصہ لیا۔

صہیونی میڈیا کے مطابق یہ آپریشن تین روز تک جاری رہنے کی توقع ہے۔

دوسری جانب اطلاع ہے کہ صیہونی حکومت کی سیکورٹی کابینہ کا اجلاس آج بروز منگل کو ہونے والا ہے جس میں موجودہ صورتحال کا جائزہ لیا جائے گا۔

شہداء کے درمیان؛ جہاد شاکر الغانم، خلیل البہطینی اور طارق محمد عزالدین فلسطینی اسلامی جہاد تحریک کے عسکری ونگ سرایا القدس کے کمانڈروں میں سے ہیں۔

فلسطینی رہنماؤں نے مزاحمتی رہنماؤں کو قتل کرنے کے صیہونی حکومت کے اس اقدام کے خلاف خبردار کیا اور اعلان کیا کہ ان حملوں کا جواب نہیں دیا جائے گا۔

ادھر فلسطین کی اسلامی مزاحمتی تحریک (حماس) نے صیہونی حکومت کے اس جرم کی مذمت کرتے ہوئے تاکید کی ہے کہ اس جرم کے نتائج کی ذمہ داری صیہونی حکومت پر عائد ہوتی ہے۔

منگل کے روز ایک بیان میں اس تحریک نے جہاد شاکر الغانم، خلیل صلاح البتنی اور فلسطینی اسلامی جہاد تحریک کے کمانڈروں طارق محمد عزالدین اور غزہ کی پٹی میں متعدد فلسطینی شہریوں کی شہادت پر تعزیت کا اظہار کیا، جن میں سے زیادہ تر ہیں۔ خواتین اور بچے ہیں اور اس بات پر زور دیا کہ صیہونی حکومت اپنے جرائم کی قیمت ادا کرے گی۔

اس بیان میں منگل کی صبح غزہ کی پٹی پر صیہونی حکومت کی جارحیت کا ذکر کرتے ہوئے تاکید کی گئی ہے کہ اس وحشیانہ جرم اور اس کے نتائج کی تمام تر ذمہ داری صیہونی حکومت اور اس کی فاشسٹ کابینہ اور انتہا پسندی پر عائد ہوتی ہے۔

حماس نے کہا کہ غزہ کی پٹی اور پورے مغربی کنارے اور القدس اور مسجد اقصیٰ میں فلسطینی عوام کے خلاف صیہونی حکومت کی بڑھتی ہوئی دہشت گردی اور جرائم کی اس حکومت کو بھاری قیمت ادا کرنی پڑے گی اور اس سے تل ابیب کو تحفظ نہیں ملے گا۔

اس تحریک نے تاکید کی کہ صیہونی حکومت اپنے جارحانہ اہداف اور منصوبوں کو حاصل نہیں کر سکتی بلکہ یہ فلسطینی قوم کے عظیم اتحاد اور تمام میدانوں میں اس کی بہادرانہ مزاحمت کا باعث بنے گی۔

اس بیان کے ایک حصے میں کہا گیا ہے کہ فلسطینی قوم کی جدوجہد اور مزاحمت اور حقوق و نظریات کی پاسداری نیز جارحیت کا جواب صیہونی حکومت کی نابودی تک جاری رہے گا۔

یہ بھی پڑھیں

چہاز

امریکہ، برطانیہ اور اسرائیل یمن کے حملوں کے سامنے بے بس ہیں

پاک صحافت یمن کی مسلح افواج نے اعلان کیا ہے کہ انہوں نے تین فوجی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے