تل ابیب اسٹڈی سینٹر: ایران اسرائیل کے لیے سب سے خطرناک اسٹریٹجک خطرہ ہے

میزایل

پاک صحافت تل ابیب یونیورسٹی میں سیکورٹی اسٹڈیز کے مرکز نے اسلامی جمہوریہ ایران کی طاقت اور طاقت کے بارے میں صیہونی حکومت کے خوف اور تشویش کا ذکر کرتے ہوئے اعلان کیا ہے کہ ایران اس حکومت کے لیے سب سے خطرناک اسٹریٹیجک خطرہ سمجھا جاتا ہے۔

پاک صحافت کی رپورٹ کے مطابق، تل ابیب یونیورسٹی کے سینٹر فار سیکورٹی اسٹڈیز نے اپنی سالانہ اسٹریٹجک رپورٹ برائے 2023 میں، جو صیہونی حکومت کے صدر "اسحاق ہرزوگ” کو سونپی گئی، پرامن پیش رفت کے بارے میں بتایا۔ ایران کے ایٹمی پروگرام پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے لکھا: اسرائیل کو درپیش سب سے خطرناک اسٹریٹجک خطرہ ایران کا ایٹمی پروگرام ہے۔

مرکز نے مزید کہا: "یہ اسرائیل کے لیے سب سے زیادہ خطرناک ممکنہ بیرونی خطرہ ہے۔ ایران کا جوہری پروگرام اپنے جدید ترین مراحل تک پہنچ چکا ہے، اور اس کے ساتھ ساتھ، ایران کی جانب سے اپنا علاقائی اثر و رسوخ قائم کرنے اور بڑھانے کی کوششیں جاری ہیں۔”

اس رپورٹ میں چین اور روس کو مغربی ممالک کے لیے خطرہ قرار دیتے ہوئے کہا: حالیہ برسوں میں خاص طور پر یوکرین کی جنگ کے بعد مشرق وسطیٰ میں ہونے والی پیش رفت کی طرف مغربی ممالک کی توجہ اور توجہ کم ہوئی ہے اور اس پر توجہ مرکوز کی گئی ہے۔ چین اور روس کی طرف سے لاحق خطرات اور یہ پیش گوئی کی جا رہی ہے کہ ایران کے جوہری مسئلے پر بین الاقوامی توجہ کم ہو جائے گی اور مغربی ممالک کی ترجیحات میں اس مسئلے کی درجہ بندی کم ہو جائے گی۔

تل ابیب یونیورسٹی کے سینٹر فار سیکیورٹی اسٹڈیز نے رپورٹ کیا: "ایران کے جوہری خطرے سے کم نمٹنے کا امریکی ارادہ واضح ہے (اور جوہری معاہدے پر واپس آکر ایسا کرنے کو ترجیح دیتا ہے)”۔

تل ابیب یونیورسٹی کے سیکورٹی اسٹڈیز سنٹر کے سربراہ اور صیہونی حکومت کے ملٹری انٹیلی جنس یونٹ کے سابق سربراہ "امان” نے اس رپورٹ کے ایک اور حصے میں صیہونی کے تعلقات میں تناؤ کے امکان کا ذکر کیا ہے۔ اس حکومت کے عدالتی نظام کے کمزور ہونے کی وجہ سے مغربی ممالک اور امریکی حکومت کے ساتھ روابط ہیں اور انہوں نے تل ابیب اور خود مختار تنظیموں کے درمیان تعلقات کے انداز میں تبدیلی کو صیہونیوں کے لیے سب سے بڑا اسٹریٹجک اور سیکورٹی خطرہ قرار دیا ہے۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں