جاسوس

موساد حماس کے سائبر سیکٹر کے بارے میں معلومات کیوں مانگ رہا ہے؟

پاک صحافت ملائیشیا کے دارالحکومت میں موساد کے اغوا کی ناکام کوشش نے اس دہشت گرد تنظیم کے بہت سے راز اور مقاصد میڈیا کی میز پر رکھ دیے ہیں۔

پاک صحافت کی رپورٹ کے مطابق، اردن کے ایک میڈیا نے غلطی سے غزہ کی پٹی میں اینڈرائیڈ ایپلی کیشن پروگرامر کے طور پر کام کرنے والے عمر البالبی کی سرگرمی کا ایک راز فاش کر دیا۔

ایک تفصیلی رپورٹ میں عبرانی میڈیا کا حوالہ دیتے ہوئے اس میڈیا نے اس اغواء میں صیہونی حکومت کے اقدام کی وجوہات بیان کی ہیں اور لکھا ہے:

اسرائیلی میڈیا کے مطابق یہ فلسطینی انجینئر پروگرامز اور ایپلی کیشنز کے ڈویلپر اور پروگرامر کے طور پر کام کرتا تھا، وہ غزہ میں پیدا ہوا تھا، تاہم خیال کیا جاتا ہے کہ وہ تحریک حماس سے وابستہ سائبر یونٹ کا رکن ہے اور اس کی وجہ یہ ہے۔ اغوا ایک ایسے پروگرام سے متعلق معلومات حاصل کرنے کی کوشش کرنا ہے جس کا استعمال کرتے ہوئے حماس موبائل فون ہیک کرتی ہے۔

البلیبیسی نے غزہ کی اسلامی یونیورسٹی سے کمپیوٹر سائنس میں ماسٹرز کی ڈگری حاصل کی اور 2011 میں بطور پروگرامر اپنے کیریئر کا آغاز کیا اور 2013 میں انہوں نے اینڈرائیڈ ایپلی کیشنز سے متعلق پروگرام لکھنا شروع کیا۔

اس کے بعد اس نے غزہ میں پروگرامنگ ٹیچر کے طور پر کام کیا، ان کے سوشل پیجز ان کے اور حماس تحریک کے درمیان کوئی تعلق نہیں دکھاتے۔

عبرانی میڈیا کے مطابق: حماس کا سائبر ڈھانچہ متعدد پیشہ ور انجینئرز کے زیر انتظام ہے، اور اس کی کامیابیوں میں سائبر سسٹم کی تشکیل اور الیکٹرانک جنگی پروگراموں کی ترقی ہے۔

اس کے علاوہ صہیونی فوج کی ملٹری انٹیلی جنس سروس کے سابق افسر یونی بین میناچم کے دعوے کے مطابق اس سائبر گروپ نے درجنوں اسرائیلی سرورز اور ویب سائٹس پر حملہ کیا ہے اور انہیں ہیک کیا ہے، جبکہ موبائل میں داخل ہونے اور توڑتے ہوئے اسرائیلی فوجیوں کے فون اور کمپیوٹر ڈیوائسز۔سیکیورٹی سہولیات میں سیکیورٹی کیمروں کو کنٹرول کرنے کے ساتھ ساتھ مختلف فریکوئنسیوں کے خلاف جیمنگ اور خلائی صنعتوں کے ڈائریکٹر کے موبائل فون کو ہیک کرنا اور اسرائیلی بس کمپنی کے کمپیوٹر کو توڑنا اور نشریات میں داخل ہونا۔ اسرائیلی ٹیلی ویژن چینلز بھی ان اقدامات کے دوسرے حصے ہیں۔

اسرائیل کے عبرانی زبان کے میڈیا کے مطابق حماس جنگ کے منظر کو دوسرے مناظر کی طرف لے جانے میں کامیاب ہو گئی ہے جو سینکڑوں راکٹ فائر کرنے سے کہیں زیادہ خطرناک ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

گیلنٹ

گیلنٹ: اسرائیل نے گزشتہ 75 سالوں میں ایسی جنگ نہیں دیکھی

پاک صحافت صیہونی حکومت کے وزیر جنگ یوف گیلنٹ نے غزہ کی جنگ میں اسرائیلی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے