بھارت میں مسلمانوں کے خلاف نفرت انگیز نشریات پھیلانے والے نیوز چینل کے میڈیا گروپ کے چیف ایگزیکٹیو کو گرفتار کرلیا گیا

بھارت میں مسلمانوں کے خلاف نفرت انگیز نشریات پھیلانے والے نیوز چینل کے میڈیا گروپ کے چیف ایگزیکٹیو کو گرفتار کرلیا گیا

بھارت کی پولیس نے سنسنی پھیلانے والے نیوز چینل کے میڈیا گروپ کے چیف ایگزیکٹیو کو ریٹنگ کے نظام میں ہیر پھیر کرنے پر گرفتار کر لیا، جس کے تحت چینل کو اشتہارات ملتے ہیں۔

خبرایجنسی اے پی کی رپورٹ کے مطابق ری پبلک ٹی وی نے نشریات کے دوران کہا کہ پولیس نے اے آر جی آؤٹلیئر میڈیا کے سربراہ وکاس کھنا کو بھارت کے معاشی مرکز ممبئی میں ان کے گھر سے گرفتار کر لیا ہے۔

خیال رہے کہ ری پبلک ٹی وی کی نشریات انگریزی اور ہندی دونوں زبانوں میں ہوتی ہے جو بھارتی وزیراعظم نریندر مودی اور ان کی پالیسیوں کی بھرپور حمایت کرتا ہے۔

ری پبلک ٹی وی کے شریک بانی ارناب گوسوامی نے نے اپنے پروگرام میں وکاس خانچندانی کی گرفتاری کے حوالے سے کہا کہ میں جانتا ہوں کہ وہ گرفتار ہوں گے اور اونچے سر کے ساتھ باہر آئیں گے۔

رپورٹ کے مطابق یہ گرفتاری پولیس کی اس تفتیش کا حصہ ہے، جو اکتوبر میں مغربی ریاست مہاراشٹر میں ٹی وی چینل کے خلاف عائد ریٹنگ نظام میں ہیر پھیر کے الزام پرشروع کی گئی ہے، پولیس نے وکاس خانچندانی سے اس سے قبل بھی تفتیش کی تھی۔

ماہرین کہتے ہیں کہ یہ گرفتاری ری پبلک ٹی وی اور مہاراشٹرا کی مقامی انتظامیہ کے درمیان چپقلش ہے جہاں حکمران اتحادی جماعتوں نے نریندر مودی کی بی جے پی کی جانب سے ریاست میں اتحاد کرنے کی کوششوں کا مقابلہ کیا تھا۔

یاد رہے کہ پولیس نے گزشتہ ماہ ارنب گوسوامی کے خلاف خود کشی پر اکسانے کا مقدمہ درج کرکے انہیں گرفتار کرلیا تھا۔

ممبئی پولیس کے سینئر افسر سنجے موہت نے کہا تھا کہ ریپبلک ٹی وی کے بانی ارنب گوسوامی کے خلاف مقدمہ ایک انٹیریئر ڈیزائنر انوے نائیک اور ان کی ماں کی موت سے منسلک ہے جسے پولیس نے خود کشی قرار دیا تھا۔

انوے نائیک کا لکھا ہوا خود کشی کا جو نوٹ پولیس کو ملا اس میں تحریر تھا کہ وہ اپنی زندگی کا خاتمہ اس لیے کررہے ہیں کیوں کہ ارنب گوسوامی اور دیگر افراد نے ان سے بھاری رقم لے رکھی ہے جسے واپس کرنے سے انکاری ہیں تاہم اینکر نے اس الزام کی تردید کی۔

ارنب گوسوامی اپنے شوز میں بھارتی وزیراعظم نریندر مودی اور ان کی قوم پرست پالیسی کی شدت سے حمایت کرتے ہیں اور اکثر حریفوں پر چیختے چلاتے نظر آتے ہیں۔

ریپبلک ٹی وی کی جانب سے ارنب گوسوامی کی گرفتاری کو بھارتی جمہوریت کے لیے سیاہ دن قرار دیتے ہوئے الزام عائد کیا گیا تھا کہ پولیس نے اینکر کو جسمانی بدسلوکی کا نشانہ بنایا ہے۔

ارنب گوسوامی کے خلاف مذہبی اشتعال انگیزی کو ہوا دینے اور مذہبی گروہوں کے مابین نفرت کی ترویج کے مقدمات بھی درج ہیں

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں