اقوام متحدہ

اسلامو فوبیا سے نمٹنے کی تجویز اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں منظور کر لی گئی

پاک صحافت اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں پاکستان کی جانب سے اسلاموفوبیا اور مسلم مخالف تشدد کے خلاف پیش کردہ مذمتی قرارداد منظور کر لی گئی۔

اس قرارداد میں اقوام متحدہ میں پاکستان کے مستقل نمائندے منیر اکرم نے اسلامو فوبیا سے متعلق خصوصی ایلچی مقرر کرنے اور اسلام فوبیا سے نمٹنے کے لیے ضروری اقدامات کرنے پر زور دیا۔

یہ قرارداد اس وقت منظور کی گئی جب 15 مارچ کو اسلامو فوبیا کی روک تھام کے دن کے طور پر منایا گیا۔ اس دن منیر اکرم نے ایک قرارداد پیش کی جس میں اس بات پر زور دیا گیا کہ اسلامو فوبیا کے پھیلاؤ کو تسلیم کرنے کے باوجود اب دنیا بھر میں مسلمانوں کو شدید امتیازی سلوک کا سامنا ہے۔

منیر اکرم نے کہا کہ اسلام فوبیا اسلام کے آغاز سے ہی موجود ہے، یہ گہرے خوف اور نفرت سے جنم لیتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ 11 ستمبر 2001 کو نیویارک اور واشنگٹن میں ہونے والے حملوں کے بعد اسلامو فوبیا تیزی سے پھیلنا شروع ہوا۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ اگرچہ جنرل اسمبلی نے دو سال قبل اسلامو فوبیا سے متعلق قرارداد منظور کی تھی لیکن مسلمانوں کے خلاف اسلامو فوبیا، امتیازی سلوک، نفرت اور تشدد کے واقعات میں مسلسل اضافہ ہورہا ہے۔

منیر اکرم نے کہا کہ کئی ممالک میں مسلمانوں کو امیگریشن پالیسیوں میں بھی امتیازی سلوک کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں

امریکی صدور

سی این بی سی : “مہنگائی کا بحران”؛ ٹرمپ کے خلاف بائیڈن کی بڑی انتخابی پریشانی

پاک صحافت سی این بی سی کے تازہ ترین سروے کے مطابق امریکی ووٹرز مہنگائی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے