کشتی

اٹلی کے ساحل پر کشتی کے حادثے میں 60 تارکین وطن ہلاک ہو گئے

پاک صحافت جنوبی اٹلی کے ساحل پر ایک کشتی الٹنے سے کم از کم 60 تارکین وطن ہلاک ہو گئے۔ جاں بحق ہونے والوں میں 12 بچے بھی شامل ہیں۔

موصولہ اطلاعات کے مطابق کشتی پر سوار درجنوں افراد لاپتہ ہیں۔

اطالوی حکام کا کہنا ہے کہ ترکی سے تارکین وطن مزدوروں کو لے جانے والی یہ کشتی سمندر کے بیچوں بیچ دو ٹکڑے ہو گئی۔

یہ حادثہ اس وقت پیش آیا جب کشتی کلابریا کے کروٹون شہر کے ساحل پر ڈوبنے والی تھی۔

اطالوی صدر سرجیو میٹیریلا کے مطابق کشتی پر سوار یہ افراد اپنے ملکوں میں خراب حالات سے بچ کر اٹلی پہنچنا چاہتے تھے۔

حادثے کا شکار ہونے والوں میں افغانستان، پاکستان، صومالیہ اور ایران کے شہری شامل ہیں۔

ابھی تک یہ معلوم نہیں ہو سکا ہے کہ اس کشتی میں کتنے افراد سوار تھے۔ لیکن راحت اور بچاؤ کے کاموں میں شامل لوگوں نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا کہ اس کشتی پر 200 سے زائد افراد سوار تھے۔

جائے وقوعہ کا دورہ کرنے والے اطالوی وزیر داخلہ میٹیو پیانٹیدوسی نے کہا کہ کم از کم 30 افراد تاحال لاپتہ ہیں جب کہ ایک اندازے کے مطابق کم از کم 50 افراد لاپتہ ہیں۔

کوسٹ گارڈ نے اطلاع دی ہے کہ 80 افراد کو زندہ بچا لیا گیا ہے۔ بہت سے لوگ کسی نہ کسی طرح خود تیر کر فرار ہونے میں کامیاب ہو گئے ہیں۔

ہر سال افریقی اور بعض ایشیائی ممالک سے بڑی تعداد میں لوگ غربت اور مسلح تصادم سے بچ کر اٹلی اور یونان کے راستے یورپ پہنچنے کی کوشش کرتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

نیوزیلینڈ

نیوزی لینڈ نے اسرائیل کے جرائم سے منسلک حماس کے اثاثے منجمد کر دیے

پاک صحافت نیوزی لینڈ نے فلسطین کے خلاف مغربی پالیسیوں کے مطابق اور غزہ میں …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے