محمد بن سلمان کے سفر کو ملتوی کرنے کے پشت پردا

بن سلمان

پاک صحافت علاقائی اور بین الاقوامی مسائل کا جائزہ لینے کے لیے محمد بن سلمان کے متواتر سفر کو ملتوی کیا گیا ہے۔

سعودی ولی عہد محمد بن سلمان نے اپنے والد شاہ سلمان کی علالت کے باعث سعودی عرب میں ہنگامہ آرائی کے خدشات کے پیش نظر اپنا دورہ غیر معینہ مدت کے لیے ملتوی کردیا۔

سعودی ایلکس کے مطابق سعودی ولی عہد علاقائی اور عالمی امور پر بات چیت کے لیے ترکی، یونان، قبرص، اردن اور مصر کا دورہ کرنے والے تھے۔

2018 میں ممتاز سعودی صحافی جمال خاشقجی کے قتل اور کورونا وائرس پھیلنے کے بعد یہ شہزادے کا خطے سے باہر پہلا دورہ ہوگا۔ سعودی ولی عہد نے صرف 2019 G20 سربراہی اجلاس میں شرکت کے لیے جاپان کا سفر کیا۔

لیکن باخبر سعودی ذرائع نے بتایا کہ محمد بن سلمان نے سعودی عرب سے غیر حاضری کے دوران سعودی شہزادوں کی اندرونی حرکات کے شدید خوف کی وجہ سے اپنا دورہ اگلے نوٹس تک ملتوی کر دیا ہے۔

ان ذرائع کے مطابق بوسسلمان "اس بات سے بخوبی واقف ہے کہ اس نے اپنے کچھ حریفوں کے خلاف بغاوتیں کی ہیں اور کئی شہزادوں کو من مانی طور پر گرفتار کیا ہے، اس لیے وہ اپنی خودمختاری کو محفوظ بنانے کے لیے اپنے اندرونی غلبہ کو بڑھانے کے لیے مختلف ذرائع استعمال کر رہا ہے۔”

ان ذرائع نے اس بات پر زور دیا کہ شاہ سلمان کی جسمانی حالت غیر مستحکم ہے اور ان کی شائع شدہ تصاویر پرانی ہیں۔

حال ہی میں سعودی ذرائع نے بادشاہ کو اسپتال منتقل کرنے کی خبر دی تھی جب کہ سعودی شاہی دربار کے قریبی ذرائع نے چند روز کی خاموشی کے بعد اعلان کیا تھا کہ شاہ سلمان کی طبیعت میں بہتری آرہی ہے اور انہیں اسپتال سے فارغ کردیا گیا ہے تاہم میڈیا اور نیٹ ورکس میں رپورٹس سامنے آئی ہیں۔ سعودی سوشل میڈیا رپورٹس میں بادشاہ کی جسمانی حالت میں تیزی سے بگاڑ کا اشارہ ملتا ہے۔

اس سے قبل بین الاقوامی ایجنسی جی ٹی این 24 نے خبر دی تھی کہ شاہ سلمان کی جسمانی حالت بدستور بگڑتی جا رہی ہے۔ رپورٹ کے مطابق ڈاکٹروں کا خیال ہے کہ شاہ سلمان کے زندہ رہنے کا امکان 10 فیصد سے بھی کم ہے اور آنے والے ہفتوں میں ان کی موت ہو سکتی ہے۔

جب سے ان کے والد اقتدار میں آئے، ابن مسلم نے تخت تک رسائی حاصل کرنے کے لیے پہلے اپنے چچا اور پھر اپنے چچا زاد بھائی محمد بن نائف کو معزول کرنے کی کوشش کی۔

شاہ سلمان کی جسمانی حالت کی خرابی نے محمد بن سلمان کے تخت پر نہ چڑھنے کے خدشے کو بڑھا دیا ہے، لیکن جس چیز نے ان کے خوف میں شدت پیدا کر دی ہے وہ ان کی بادشاہت کی بیعت کونسل میں کچھ لوگوں کی مخالفت ہے، اور انہیں خدشہ ہے کہ بیعت کونسل کوئی فیصلہ جاری کرے گی۔

بہت سے سعودی اور شہزادے ان کی سیاسی کارکردگی سے غیر مطمئن ہیں اور شاہ سلمان کی موت کے بعد سعودی شہزادے محمد بن سلمان کے خلاف کارروائی کر سکتے ہیں۔

سعودی ولی عہد موجودہ وقت کو تخت تک پہنچنے کے لیے اپنے قدم مضبوط کرنے کا صحیح وقت سمجھتے ہیں۔ اگرچہ محمد بن سلمان نے سیاسی حریفوں اور خاندانی حریفوں کو ختم کرکے اور تاجروں اور اپوزیشن کو دبا کر اپنی طاقت کو مضبوط کیا۔ لیکن اس میں شاہ سلمان کا کردار ہمیشہ زیر بحث رہا ہے۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں