الیکشن کمیشن

پابندی کے بعد ٹی ایل پی امیدوار کو اپنی جماعت سے تعلق ختم کرنے پڑے گا، الیکشن کمیشن

اسلام آباد (پاک صحافت) الکشن کمیشن آف پاکستان نے کہا ہے کہ تحریک لبیک پاکستان (ٹی ایل پی) پر پابندی لگنے کی صورت میں اس کے امیدوار کو اپنی جماعت سے وابستگی ختم کرنا ہوگی، بصورت دیگر وہ الیکشن میں حصہ لینے کا اہل نہیں ہوسکتا۔ ذرائع الیکشن کمیشن کا کہنا ہے کہ ٹی ایل پی پر پابندی کے بعد امیدوار کرین کے نشان پر انتخاب نہیں لڑسکے گا۔

تفصیلات کے مطابق الیکشن کمیشن کا کہنا ہے کہ تحریک لبیک پاکستان (ٹی ایل پی) پر پابندی لگنے کے بعد اس کے امیدوار کو اپنی جماعت سے وابستگی ختم کرنا ہوگی۔ یاد رہے کہ حکومت نے ٹی ایل پی پر پابندی لگانے کا فیصلہ کیا ہے جس کا اثر کراچی سے قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 249 میں ہونے والے ضمنی انتخابات پر بھی پڑے گا۔ این اے 249 سے ٹی ایل پی کے ٹکٹ پر مفتی نذیر کمالوی امیدوار ہیں اور ان کا انتخابی نشان کرین ہے۔

واضح رہے کہ ذرائع الیکشن کمیشن کے مطابق صورتحال واضح ہونے تک بیلٹ پیپر کی پرنٹنگ روکنے کا فیصلہ کیا ہے تاہم امیدوار آزاد حیثیت میں انتخاب لڑنے کا اہل ہوگا۔ یاد رہے کہ وفاقی وزیر داخلہ شیخ رشید نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ تحریک لبیک پر پابندی کا فیصلہ انسداد دہشت گردی ایکٹ کے تحت کیا گیا اور پنجاب حکومت نے تنظیم پر پابندی لگانے کی سفارش کی ہے، ہم پابندی سے متعلق سمری کابینہ کو بھیج رہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

عرفان صدیقی

کیا ملک و فوج کیخلاف سازش کرنے والی پارٹی سیاسی جماعت کہلائے گی۔ عرفان صدیقی

اسلام آباد (پاک صحافت) عرفان صدیقی کا کہنا ہے کہ کیا ملک و فوج کیخلاف …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے