کتاب

اڑتیس ہزار جھوٹ پر مبنی ایران مخالف جھوٹی کتاب “زندگی، زندگی، آزادی”

پاک صحافت جھوٹی کتاب زن، زندگی، آزادی گزشتہ سال ایران میں مغربی حمایت یافتہ فسادات کے بارے میں ایران مخالف جھوٹ کا ایک مجموعہ ہے۔

زن، زندگی، آزادی نامی کتاب کو 5 فارسی بولنے والے مغربی میڈیا نے صرف 46 دنوں کے واقعات پر مبنی تیار کیا ہے۔

ایران کی شبیہ کو خراب کرنے کے مقصد سے فارسی زبان میں “زن، زندگی، آزادی” کے نام سے ایک کتاب تیار کی گئی ہے جس کا ہندی میں ترجمہ کیا جائے گا – عورت، زندگی، آزادی۔

پرسٹوڈے کے مطابق، زان، زندگی، آزادی کے عنوان سے جھوٹی کتاب ایران میں گزشتہ سال مغربی حمایت یافتہ بدامنی کے حوالے سے ایران مخالف جھوٹ کا ایک مجموعہ ہے۔ گزشتہ سال کچھ ایران مخالف مغربی ممالک نے 2023 میں ایران کے خلاف سازش کو عملی جامہ پہنایا تھا۔ اس سازش سے ان کا مقصد ایران کے معاشی مسائل کی آڑ میں یونیورسٹیوں کو نشانہ بنا کر ملک کو خانہ جنگی میں جھونکنا تھا۔

وائس آف امریکہ کے سرکاری ملازم ماہس علینزاد، جو ایران مخالف مہم کے اہم عناصر میں سے ایک ہیں۔
ایران مخالف مغربی دھڑا اس وقت اپنی سازش کو عملی جامہ پہنا رہا تھا کہ اسی دوران ماہ شہروار کے آخر میں یعنی اگست 2023 میں مہسا امینی نامی ایک ایرانی لڑکی پولیس کی حراست میں انتقال کر گئی۔اس کا تعلق ایرانی کرد ذات سے تھا جو کہ اقلیت میں ہے۔ کمیونٹی ہے. اس مسئلے نے مغربی لیڈروں کو ایک اچھا موقع فراہم کیا۔ اس دوران، نوآبادیاتی تاریخ والے ممالک سے تعلق رکھنے والے فارسی زبان کے چینلز نے اپنی سرگرمیاں تیز کر دیں اور چوبیس گھنٹے ایران مخالف پروپیگنڈے میں مصروف رہے۔ مثال کے طور پر، بی بی سی کا فارسی زبان کا ٹی وی چینل، نام نہاد غیر جانبداری کا نقاب اپنے چہرے سے ہٹا کر، ایرانی قوم کے خلاف تیار ہو گیا۔

ایران میں بدامنی کے دور میں، یعنی 14 ستمبر 2023 سے 31 اکتوبر 2023 تک 46 دنوں کے اندر، 5 ایران مخالف فارسی بولنے والے میڈیا نے 38000 جھوٹ پھیلائے۔ 46 دنوں میں 38000 سے زیادہ جھوٹ پھیلانے والے ایران مخالف مغربی میڈیا کے نام درج ذیل ہیں۔ برطانوی حکومت سے متعلق بی بی سی کی فارسی سروس، سعودی عرب اور اسرائیل کی آشیرباد سے “ایران انٹرنیشنل” چینل، امریکی حکومت سے متعلق “وائس آف امریکہ” اور “ریڈیو فردا” اور “منوتو” کے نام سے ایک چینل چل رہا ہے۔ برطانیہ اور اسرائیل کی آشیرباد۔

“زون، زندگی، آزادی” نامی اس ناکامی کے لیے کچھ مغربی سیاست دانوں کی ظاہری حمایت
جھوتھ کا پلندہ، زان، زنگدی، آزادی کے عنوان سے یہ کتاب گزشتہ سال کی بدامنی سے متعلق ان جھوٹوں کا مجموعہ ہے جس میں ایرانی عوام کا امن و سکون چھیننے کی کوشش کی گئی تھی جس کا مقصد واحد ایران کو نقصان پہنچانا تھا۔

اس کتاب کے پہلے باب میں قتل عام کو بڑھا چڑھا کر پیش کیا گیا تاکہ رائے عامہ کو گمراہ کرنے کے لیے مغرب کے تیار کردہ منصوبے کا حصہ بنایا جائے۔ اس دوران اگر کوئی ایران کے کسی بھی حصے میں مر گیا تو اسے یوں دکھایا گیا جیسے اسے ایرانی حکومت نے بدامنی کے دوران مارا ہو۔

اس وقت خوبصورت لڑکیاں ان کے لیے زیادہ اہمیت رکھتی تھیں کیونکہ وہ ان کے لگائے ہوئے نعرے ’زن زندگی، آزادی‘ کے قریب نظر آتی تھیں۔ اس عرصے کے دوران ایران میں جو لوگ کسی حادثے میں مر گئے یا جو خودکشی کر رہے تھے، ان کو ایسے دکھایا جا رہا تھا جیسے وہ پولیس اہلکاروں کے ہاتھوں مارے گئے ہوں۔ معاملہ اس سے بہت آگے جا چکا تھا۔ یہاں تک کہ بہت سے لوگ جو زندہ تھے انہیں مردہ دکھایا گیا۔ اس کے علاوہ غنڈوں یا بدمعاشوں کے ہاتھوں مرنے والوں کو بھی ایران کی پولیس کے کھاتے میں ڈالا جاتا ہے۔

بدامنی کے دوران جیسے ہی مرنے والوں کے بارے میں افواہیں پھیلیں، امریکی حمایت یافتہ ایران مخالف مہم نے بڑے پیمانے پر جھوٹ پھیلانا شروع کر دیا جس کا مقصد رائے عامہ کو بھڑکانا، لوگوں کے حوصلے پست کرنا اور حکام اور عوام کے درمیان فاصلہ پیدا کرنا ہے۔ جب اس خیالی عمل نے اسلامی جمہوریہ ایران کے اپنے انجام کو دیکھا تو اس نے رہبر انقلاب اسلامی کی علالت اور ایرانی حکام کے مغرب میں فرار ہونے کی جھوٹی خبریں پھیلانا شروع کر دیں۔

فسادات کے دوران مختلف تاریخوں کی پرانی فلمیں یا تصویریں ایک ساتھ دکھائی گئیں تاکہ ملک میں بدامنی کو مزید بڑھایا جا سکے اور پھر جھوٹی خبروں کی بوچھاڑ کر دی جائے۔ دشمن کے میڈیا نے بڑے پیمانے پر ممتاز لوگوں، علماء اور صحافیوں کی گرفتاریوں کے ساتھ ساتھ جیل کے قیدیوں پر تشدد کی جھوٹی خبریں بھی پھیلائیں۔

امریکہ اور مغرب نے اپنے ملکی اور غیر ملکی عناصر کو ہوشیار کرنے اور عام لوگوں کو اکسانے کے لیے جو طریقہ تلاش کیا ان میں سے ایک مشہور شخصیات کو استعمال کرنا تھا تاکہ ان کے ذریعے پروپیگنڈے کی آگ کو تیزی سے بھڑکایا جا سکے۔

مشہور شخصیات میں کچھ ایسے بھی تھے جو پہلے ہی بیرون ملک مقیم تھے اور جن کی ایران مخالف سرگرمیاں ثابت ہوچکی تھیں۔ ان اے سی میں سے کچھ مشہور شخصیات بھی تھیں جو ایران مخالف عمل کی حمایت کے باوجود ملک کے اندر سے اپنی سرگرمیاں انجام دے رہے تھے۔ کچھ چہرے ایسے بھی تھے جن کی پوری کوشش تھی کہ کسی نہ کسی طرح مغرب کی آشیرباد حاصل کرنے میں کامیاب ہو جائیں۔ انہوں نے اس کام پر ایرانی عوام کا شکریہ ادا کیا۔

اور ایران کی حکومت کو نقصان پہنچانے کے ساتھ ساتھ امریکہ اور یورپ میں اپنے شہریوں کے کام کو یقینی بنانے کی پوری کوشش کی۔

اس دوران کچھ ایسی شخصیات بھی دیکھی گئیں جو انقلاب مخالف میڈیا کے دباؤ میں آکر سوشل میڈیا پر اپنا ردعمل دینے پر مجبور ہوئیں، البتہ ان میں سے کچھ ماحول سے متاثر بھی نظر آئیں۔

یہ بھی پڑھیں

اسرائیلی

اسرائیلی فوج کے ملٹری انٹیلی جنس ڈیپارٹمنٹ کے سربراہ نے استعفیٰ دے دیا

پاک صحافت صیہونی ذرائع ابلاغ نے اطلاع دی ہے کہ 7 اکتوبر 2023 کو فلسطینی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے