نیتن یاہو

نیتن یاہو کا دعویٰ: صہیونی قیدیوں کی رہائی کا واحد راستہ فوجی دباؤ ہے

پاک صحافت صیہونی حکومت کے وزیر اعظم “بنجمن نیتن یاہو” نے اپنے گرمجوشی کے موقف کو جاری رکھتے ہوئے دعویٰ کیا ہے کہ صیہونی قیدیوں کی رہائی کا واحد راستہ فوجی دباؤ ہے۔

پیر کو قطر کے “الجزیرہ” نیوز چینل کے حوالے سے  پاک صحافت کی رپورٹ کے مطابق، صیہونی حکومت کے وزیر اعظم نے دعویٰ کیا کہ فتح حاصل کرنے تک صیہونی قیدیوں کی رہائی کا واحد راستہ فوجی دباؤ ہے۔

گزشتہ روز نیتن یاہو نے امریکی ٹی وی چینل ’’اے بی سی‘‘ کو انٹرویو دیتے ہوئے دعویٰ کیا تھا کہ فتح دسترس میں ہے۔

پاک صحافت کے مطابق “اے بی سی نیوز” ویب سائٹ نے نیتن یاہو کے حالیہ انٹرویو کا حوالہ دیا اور لکھا: ہم رفح میں حماس کی بقیہ بٹالین کے ساتھ بات چیت کریں گے جو ان کا آخری گڑھ ہے۔

صیہونی حکومت کے وزیراعظم نے کہا کہ انہوں نے قابض فوج کو اس زمینی حملے سے قبل رفح سے لاکھوں افراد کو نکالنے کا حکم دیا تھا۔

جب ان سے پوچھا گیا کہ فلسطینی کہاں جا رہے ہیں تو انہوں نے دعویٰ کیا کہ اسرائیلی حکومت اس مسئلے کے حوالے سے ایک تفصیلی منصوبہ تیار کر رہی ہے۔

نیتن یاہو نے مزید کہا: جو لوگ کہتے ہیں کہ ہمیں کسی بھی حالت میں رفح میں داخل نہیں ہونا چاہیے، وہ بنیادی طور پر یہ کہہ رہے ہیں کہ ہمیں جنگ ہارنا چاہیے اور حماس کو وہاں رکھنا چاہیے۔

اس رپورٹ کے مطابق صیہونی حکومت کا میڈیا اس بات پر تاکید کرتا ہے کہ نیتن یاہو صرف اپنی کابینہ کو برقرار رکھنے کے لیے کوشاں تھے اور اس لیے وہ جنگ کو روکنے کے خواہاں نہیں ہیں۔

تجزیہ کاروں کا خیال ہے کہ نیتن یاہو جانتے ہیں کہ اگر انہوں نے جنگ روک دی تو وہ وزیر اعظم نہیں رہیں گے اور ان کی حکومت تحلیل ہو جائے گی، یہی وجہ ہے کہ وہ وزیر اعظم کے عہدے پر برقرار رہنے کے لیے جیتنا چاہتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

فلسطینی لیڈر

اسلامی جہاد: رمضان سے قبل غزہ پر کسی معاہدے پر پہنچنے کا امکان ہے

پاک صحافت فلسطین کی اسلامی جہاد تحریک کے ڈپٹی سکریٹری جنرل نے کہا: رمضان المبارک …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے