اسرائیلی

نیتن یاہو کے سخت گیر وزراء: مستقل جنگ بندی کا معاہدہ کابینہ کی تحلیل کے برابر ہے

پاک صحافت بینجمن نیتن یاہو کی اتحادی کابینہ کے دو سخت گیر اور بنیاد پرست وزراء نے منگل کی رات انہیں دھمکی دی کہ اگر غزہ میں جنگ بندی ہوئی تو وہ کابینہ کو تحلیل کر دیں گے۔

پاک صحافت نے فلسطینی خبر رساں ایجنسی “سما” کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ صیہونی حکومت کے داخلی سلامتی کے وزیر اتمار بن گویر نے اعلان کیا: “غزہ میں جنگ بند کرنے کا مطلب اسرائیل کی ریاست کی تحلیل اور انحطاط ہو گا۔”

نیتن یاہو کی کابینہ کے وزیر خزانہ اور سخت گیر رہنما نے بھی کہا: اگر اسرائیل اور فلسطینی غزہ کی پٹی میں حتمی جنگ بندی پر پہنچ جاتے ہیں تو وہ حکومت سے مستعفی ہو جائیں گے اور اس کے نتیجے میں کابینہ تحلیل ہو جائے گی۔

نیتن یاہو کی کابینہ کے ان دو عہدیداروں کی دھمکی ایسے وقت سامنے آئی ہے جب یہ قیاس آرائیاں کی جا رہی ہیں کہ متحارب فریق امریکہ اور قطر کے ساتھ مل کر مقبوضہ علاقوں میں جنگ بندی کو وسعت دینے کی کوشش کر رہے ہیں۔

اس سلسلے میں صیہونی حکومت کے چینل 12 نے آج سہ پہر اعلان کیا کہ موساد کے سربراہ “ڈیوڈ برنیا” دوحہ پہنچ گئے ہیں۔

نیٹ ورک نے اعلان کیا کہ یہ ممکن ہے کہ اس سفر کے دوران موجودہ معاہدے کے خاتمے کے بعد قیدیوں کے تبادلے کے وسیع تر معاہدے پر دستخط کیے جائیں گے۔

خبر رساں ادارے روئٹرز نے یہ بھی اطلاع دی ہے کہ امریکی سی آئی اے اور موساد کے سربراہان قطر کے وزیر اعظم اور وزیر خارجہ محمد بن عبدالرحمن الثانی سے ملاقات کریں گے اور غزہ کی پٹی میں جنگ بندی کے معاہدے میں توسیع پر بات چیت کریں گے۔

روئٹرز کے ذرائع کے مطابق مصر کے حکام بھی اس اجلاس میں شرکت کے لیے قطر گئے ہیں۔

قبل ازیں ایک امریکی میڈیا نے اطلاع دی تھی کہ سی آئی اے کے ڈائریکٹر ولیم برنز غزہ میں جنگ بندی کی تجدید پر بات کرنے کے لیے موساد کے سربراہ ڈیوڈ بارنیا اور قطری وزیر اعظم محمد بن عبدالرحمن الثانی سے ملاقات کے لیے دوحہ جائیں گے۔

ایک امریکی اہلکار نے منگل کو ایکسوس کو بتایا کہ برنز غزہ جنگ پر وسیع تر بات چیت کے دوران قیدیوں کی رہائی کے مزید سودے کے لیے برنیہ اور قطر کے وزیر اعظم پر دباؤ ڈالنے کا ارادہ رکھتا ہے۔

دوحہ کی ثالثی میں ہونے والے حالیہ مذاکرات کے نتیجے میں غزہ میں صیہونی غاصب حکومت اور فلسطینی مزاحمت کاروں کے درمیان قیدیوں کی باہمی رہائی سمیت چار روزہ عارضی جنگ بندی ہوئی۔ یہ جنگ بندی 3 دسمبر بروز جمعہ شروع ہوئی اور پیر کی شب ختم ہوئی تاہم قطری، مصری اور امریکی ثالثوں کی کوششوں سے اس میں مزید 2 دن کی توسیع کر دی گئی۔

فلسطینی مزاحمت کاروں نے غزہ اور مقبوضہ علاقوں کے دیگر علاقوں کے عوام کے خلاف صیہونی حکومت کے سات دہائیوں سے زائد عرصے سے جاری قبضے اور جارحیت کے جواب میں 7 اکتوبر کو اس حکومت کے خلاف الاقصیٰ طوفانی آپریشن شروع کیا۔  ہمیشہ کی طرح صیہونی حکومت نے مزاحمتی جنگجوؤں کی کارروائیوں کا جواب عام شہریوں کے قتل عام اور رہائشی علاقوں پر بمباری کے ذریعے دیا۔ آخر کار اس حکومت نے اسیروں کی رہائی کے آپریشن میں ناکامی کو قبول کیا اور مزاحمت کے سامنے ہتھیار ڈال دیے۔

یہ بھی پڑھیں

گیلنٹ

گیلنٹ: اسرائیل نے گزشتہ 75 سالوں میں ایسی جنگ نہیں دیکھی

پاک صحافت صیہونی حکومت کے وزیر جنگ یوف گیلنٹ نے غزہ کی جنگ میں اسرائیلی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے