قطر

قطر نے فلسطینی گروہوں اور صیہونی حکومت کے درمیان جنگ بندی کے معاہدے کا خیر مقدم کیا ہے

پاک صحافت قطر کے وزیر خارجہ نے اتوار کی صبح امریکہ اور مصر کے وزرائے خارجہ کے ساتھ ٹیلیفون پر بات چیت میں فلسطینی مزاحمتی گروہوں اور صیہونی حکومت کے درمیان جنگ بندی کے معاہدے کا خیر مقدم کیا۔

قطر کی سرکاری خبر رساں ایجنسی (کینا) سے آئی آر این اے کے مطابق، قطر کے وزیر خارجہ محمد بن عبدالرحمن آل ثانی اور ان کے امریکی ہم منصب انتھونی بلنکن نے فلسطینی گروہوں اور صیہونی حکومت کے درمیان جنگ بندی کے معاہدے کا خیر مقدم کیا۔

اس رپورٹ کے مطابق قطر کے وزیر خارجہ اور بلنکن کے درمیان ہونے والی گفتگو میں افغانستان کی تازہ ترین پیش رفت اور فلسطینی علاقوں میں حالیہ کشیدگی پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

محمد عبدالرحمان الثانی نے اس معاہدے تک پہنچنے کے لیے علاقائی کوششوں کی حمایت کرنے پر امریکہ کا شکریہ بھی ادا کیا۔

اس سلسلے میں قطر کے وزیر خارجہ نے مصر کے وزیر خارجہ سے بھی فون پر بات کی۔

اس فون کال میں دونوں ممالک کے درمیان دوطرفہ تعلقات، فلسطینی علاقوں میں کشیدگی اور مصر کی جانب سے جنگ بندی کے قیام کی کوششوں پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

قطر کے وزیر خارجہ نے اپنے مصری ہم منصب کے ساتھ گفتگو میں صیہونی حکومت کی جانب سے شہری تنصیبات اور گھروں پر بمباری کی مذمت کرتے ہوئے ہفتے کی رات جنگ بندی معاہدے کا خیر مقدم کیا۔

ہفتہ کی رات خبری ذرائع نے مصر کی ثالثی سے مقامی وقت کے مطابق 22:00 بجے فلسطینی مزاحمتی قوتوں اور صیہونی حکومت کے درمیان جنگ بندی کے معاہدے پر عمل درآمد کے آغاز کا اعلان کیا۔

اس حوالے سے الجزیرہ نے خبر دی ہے کہ جنگ بندی معاہدے پر عمل درآمد شروع ہونے کے چند منٹ بعد ہی غزہ کی پٹی کی صہیونی بستیوں میں راکٹ حملوں کے خطرے کا الارم بج گیا۔

اسلامی جہاد تحریک کے رہنماؤں میں سے ایک محمد الہندی نے الجزیرہ کو بتایا: “جنگ بندی کے معاہدے میں عام شہریوں، لوگوں اور گھروں کو نشانہ بنانا شامل ہے۔”

انہوں نے مزید کہا: “ہمارے پاس طاقت اور صلاحیتیں ہیں جو ہمیں حملوں کا مقابلہ کرنے کی اجازت دیتی ہیں، اور اصل ضمانت اسرائیلی حکومت کے خلاف ہمارا اتحاد ہے۔”

اسرائیلی فوج نے ہفتے کے روز اعلان کیا کہ فلسطینی گروپوں نے غزہ سے اسرائیلی اہداف پر 1,234 راکٹ فائر کیے ہیں اور حالیہ پیش رفت کے آغاز سے اب تک اسرائیلی فوج نے غزہ میں 371 اہداف پر حملے کیے ہیں۔

اسرائیلی فوج نے مزید کہا: فلسطینی گروپوں کی طرف سے داغے گئے کل 1,234 راکٹوں میں سے 976 راکٹ غزہ کی سرحد سے گزر کر مقبوضہ علاقوں میں داخل ہوئے۔

اس سے قبل، عبرانی زبان کے میڈیا نے اعتراف کیا تھا کہ اسلامی جہاد تحریک نے 20 لاکھ اسرائیلیوں کو پناہ گاہوں میں بھیجا اور 1,200 راکٹ داغ کر ان کی زندگیوں میں خلل ڈالا۔

یہ بھی پڑھیں

گیلنٹ

گیلنٹ: اسرائیل نے گزشتہ 75 سالوں میں ایسی جنگ نہیں دیکھی

پاک صحافت صیہونی حکومت کے وزیر جنگ یوف گیلنٹ نے غزہ کی جنگ میں اسرائیلی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے