نیتن یاہو کی بدعنوانی کے خلاف ایک بار پھر سے اسرائیل میں شدید مظاہرے شروع ہوگئے

نیتن یاہو کی بدعنوانی کے خلاف ایک بار پھر سے اسرائیل میں شدید مظاہرے شروع ہوگئے

اسرائیل کی خود ساختہ حکومت کے وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو کے مخالفین ایک بار پھر سڑکوں پر نکل آئے ہیں اور نیتن یاہو کے خلاف شدید مظاہرے شروع کردیئے ہیں۔

اسرائیل کی خود ساختہ حکومت کے وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو کے مخالفین مالی بدعنوانیوں اور شہریوں کو تحفظ فراہم کرنے میں غفلت برتنے کے مسئلے کو لے کر ایک بار پھر سڑکوں پر نکل آئے اور نیتن یاہو کے استعفے کا مطالبہ کیا۔

گذشہ چھ ماہ سے بنجمن نیتن یاہوکے مخالفین ہفتے وار احتجاجی ریلیوں میں ان کی حکومت کے مستعفی ہونے کا مطالبہ کررہے ہیں، نیتن یاہو پر مالی بدعنوانیوں اور کورونا کی وبا سے نمٹنے میں کوتاہی کا الزام ہے۔

تل ابیب سے ملنے والی اطلاعات کے مطابق مظاہرین کی ایک بڑی تعداد نے نیتن یاہو کی قیام گاہ کے سامنے دھرنا دیا اور صیہونی حکومت کے وزیرجنگ بنی گانتز کے گھر کے سامنے بھی مظاہرے کی کال دی ہے۔

نیتن یاہو کی مالی بدعنوانیوں اور کورونا جیسی عالمی وبا سے نمٹنے میں حکومت کی غفلت اور کمزور پالیسیوں کے خلاف احتجاج کا سلسلہ چھبیسویں ہفتے میں داخل ہوگیا ہے تاہم بنجمن نیتن یاہو علاقے کے خیانت کار بعض عرب ملکوں کے ساتھ تعلقات کو معمول پر لائے جانے کو اپنی حکومت کی بڑی کامیابی کے دعوے کے ساتھ اپنی ساکھ کو برقرار رکھنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں