برکس

برکس اور بین الاقوامی اسٹیج پر نیا محاذ

پاک صحافت ترقی پذیر ممالک کی تنظیم برکس میں چھ ممالک کی شمولیت کے بعد اب 11 رکنی تنظیم نے عالمی سطح پر نئے متحرک ہونے کے آثار دکھانا شروع کر دیے ہیں۔

15ویں برکس سربراہی اجلاس گزشتہ ہفتے جنوبی افریقہ کے شہر جوہانسبرگ میں منعقد ہوا۔ اس اجلاس میں برکس کے رکن ممالک روس، چین، برازیل، بھارت اور جنوبی افریقہ نے نئے ارکان ایران، ارجنٹائن، سعودی عرب، مصر، امارات اور ایتھوپیا کی رکنیت کی منظوری دے دی، سال 2024 شروع ہوتے ہی یہ چھ ممالک باقاعدہ بن جائیں گے۔ برکس کے ارکان جائیں گے۔ نئے ممالک کی شمولیت کے بعد بین الاقوامی سطح پر برکس کی پوزیشن کے بارے میں مختلف جائزے ہو رہے ہیں۔

ایک مشاہدہ یہ ہے کہ چھ ممالک، جن میں سے ہر ایک کی الگ الگ اقتصادی اور سیاسی اہمیت ہے، کی شمولیت کے بعد برکس بین الاقوامی سطح پر ایک الگ قطب بن سکتا ہے۔ اس نقطہ نظر کی وجہ یہ ہے کہ برکس کے پرانے اور نئے ممبران کی عالمی معیشت میں بہت اہم شراکت ہے اور دوسری طرف یہ ممالک عالمی نظام میں یکطرفہ پن کے خلاف ہیں۔ برازیل کی یونیورسٹی میں بین الاقوامی قانون کے ماہر سلیم ناصر کہتے ہیں کہ برکس میں رکنیت کی درخواستوں کو دیکھ کر ایسا لگتا ہے کہ عالمی سطح پر طاقت کا توازن مسلسل تبدیل ہو رہا ہے۔ برکس سیاسی اور معاشی طاقت کا نیا قطب ہے جو امریکہ کی بالادستی کو چیلنج کرتا ہے۔ ترک ماہر محمود علی گلر کا کہنا ہے کہ برکس نیو ورلڈ آرڈر کا بہت اہم ستون ہے اور یہ امریکہ کی سیاسی اور توانائی کی جنگ کے لیے ایک بڑا دھچکا ہے۔

دوسرا موضوع یہ ہے کہ برکس کے رکن بین الاقوامی سطح پر بڑے اقتصادی فیصلے لے سکتے ہیں۔ ان کا توانائی کے شعبے پر بھی خاصا اثر پڑے گا کیونکہ سعودی عرب، روس، ایران اور متحدہ عرب امارات دنیا میں تیل پیدا کرنے والے بڑے ممالک میں شامل ہیں۔ توانائی کے شعبے میں ان ممالک کا باہمی ہم آہنگی مغربی ممالک کے لیے چیلنج بن سکتا ہے اور ان کی معیشتوں کو متاثر کر سکتا ہے۔ برکس کی توسیع کے بعد عالمی برآمدات میں اس تنظیم کا حصہ 20.2 فیصد سے بڑھ کر 25.1 فیصد ہو جائے گا۔ مالیاتی ماہرین کا کہنا ہے کہ سال 2050 تک برکس ممالک کی معیشت دنیا کی بڑی معیشتوں کا مقابلہ کرنے کی پوزیشن میں آجائے گی۔

ایک اور اہم نکتہ یہ ہے کہ برکس تنظیم جی-7 کا مقابلہ کر سکتی ہے جس میں امریکہ، کینیڈا، فرانس، جرمنی، اٹلی، جاپان اور برطانیہ شامل ہیں۔ روس کی خبر رساں ایجنسی نے اپنے جائزے میں لکھا ہے کہ توسیع کے بعد برکس کی جی ڈی پی قوت خرید کے لحاظ سے کافی بڑھ جائے گی۔ اب ان ممالک کی جی ڈی پی 31.5 سے بڑھ کر 37 فیصد ہو جائے گی۔ G-7 کی بات کریں تو اس وقت ان کی مشترکہ جی ڈی پی 29.9 فیصد ہے۔ برکس ممالک کی آبادی 3.6 بلین ہے جو کہ دنیا کی کل آبادی کا 45 فیصد ہے۔

یہ بھی پڑھیں

بات چیت

روسی اور آذربائیجان کے صدور کے درمیان بات چیت، روسی فوجیوں کی ہلاکت پر افسوس

پاک صحافت جمہوریہ آذربائیجان کے صدر الہام علییف نے روسی صدر ولادیمیر پوتن کے ساتھ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے