ٹرمپ

سوشل نیٹ ورکس پر ٹرمپ کی دھمکی آمیز پوسٹ

پاک صحافت ڈونلڈ ٹرمپ نے عدالت میں اپنی بے گناہی کا اعلان کرنے کے بعد، سوشل نیٹ ورک پر ان کی دھمکی آمیز پوسٹ نے استغاثہ اور ججوں کی توجہ حاصل کی۔

پاک صحافت کے مطابق، جمعرات کو فرد جرم کی سماعت کے دوران ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے اپنی بے گناہی کے اعلان کے بعد، سوشل نیٹ ورک پر ان کی دھمکی آمیز پوسٹ کو استغاثہ اور ججوں نے نوٹس کیا۔

ٹرمپ نے عدالتی سماعت کے ایک دن بعد ٹروتھ سوشل پر ایک پوسٹ میں لکھا، ’’اگر آپ میرے بعد عدالت جائیں گے تو میں آپ کے پیچھے آؤں گا۔‘‘

اس پوسٹ کی اشاعت کے ساتھ ہی استغاثہ نے کل رات دیر گئے ایک درخواست میں یہ مسئلہ اٹھایا کہ ہوسکتا ہے کہ اس نے خفیہ سرکاری دستاویزات کو غلط طریقے سے ظاہر کرکے گواہوں کو دھمکانے کا ارادہ کیا ہو۔

واشنگٹن کی وفاقی عدالت میں دائر مقدمے میں خصوصی وکیل جیک اسمتھ نے کہا کہ ٹرمپ کے عہدے سے یہ خدشات پیدا ہوتے ہیں کہ وہ خفیہ سرکاری دستاویزات جیسے کہ استغاثہ سے موصول ہونے والے گرینڈ جیوری ٹرانسکرپٹس کو عوام کے سامنے لا سکتے ہیں۔

اس رپورٹ کے مطابق، اس مقدمے میں استغاثہ نے نشاندہی کی کہ ٹرمپ کے پاس ایسے مقدمات میں ججوں، استغاثہ اور گواہوں پر حملہ کرنے کی تاریخ ہے جو ان کے حق میں نہیں تھے، یہ کہتے ہوئے کہ اس سے گواہوں پر نقصان دہ اثر پڑ سکتا ہے یا اس کا منفی اثر پڑ سکتا ہے۔ اس معاملے میں ایک منصفانہ عدالتی نظام ہو۔

ادھر ٹرمپ کے ترجمان نے ایک بیان میں سابق صدر کے عہدے کا دفاع کیا۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ یہ پوسٹ ایک سیاسی نقطہ نظر کی نمائندگی کرتی ہے اور چین کے دوستانہ خصوصی مفاداتی گروپوں کے جواب میں ہے۔

جمعرات کو امریکہ کے سابق صدر نے الزامات کی تردید کی اور 2020 کے انتخابات کے نتائج کو کالعدم قرار دینے کی کوشش کے حوالے سے اپنے الزام کی وضاحت کے لیے عدالت میں اپنی بے گناہی کا دعویٰ کیا۔

ٹرمپ، 2024 کے صدارتی انتخابات میں ریپبلکن امیدواروں میں سے ایک کے طور پر، قوم کو دھوکہ دینے کی سازش، کانگریس کو جو بائیڈن کی جیت کی تصدیق کرنے سے روکنے اور ووٹروں کو حقِ رائے دہی سے محروم کرنے جیسے الزامات کا سامنا کر رہے ہیں۔

ٹرمپ کے خلاف اس سال یہ تیسرا مقدمہ درج کیا گیا ہے، لیکن ان کی انتخابی شکست اور کانگریس پر حملے کے درمیان ہفتوں میں اقتدار میں رہنے کی کوشش کرنے پر انہیں جوابدہ ٹھہرانے کی کوشش کرنے والا پہلا مقدمہ ہے۔

یورونیوز کے مطابق، ٹرمپ نے کہا ہے کہ انہوں نے کچھ غلط نہیں کیا ہے اور خصوصی مشیر جیک اسمتھ پر الزام لگایا ہے کہ وہ 2024 میں وائٹ ہاؤس واپس آنے کے ان کے امکانات کو ناکام بنانے کی کوشش کر رہے ہیں۔

اس نے وفاقی جج کے سامنے قصوروار نہ ہونے کی استدعا کی۔ ان کی قانونی ٹیم نے اس کیس کو ان کے اظہار رائے کے حق پر حملہ قرار دیا ہے۔

استغاثہ نے مقدمے کی سماعت تک سابق صدر کی رہائی کی شرائط پر اتفاق کیا۔

یہ بھی پڑھیں

نیوزیلینڈ

نیوزی لینڈ نے اسرائیل کے جرائم سے منسلک حماس کے اثاثے منجمد کر دیے

پاک صحافت نیوزی لینڈ نے فلسطین کے خلاف مغربی پالیسیوں کے مطابق اور غزہ میں …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے