کوویڈ

چین اب روزانہ کورونا کے اعداد و شمار جاری نہیں کرے گا

پاک صحافت چین کی صفر کوویڈ پالیسی ختم ہو گئی ہے اور اب یہ وائرس یہاں تیزی سے پھیل رہا ہے۔

ایک چینی ڈاکٹر نے اس صورتحال کو وبائی سونامی قرار دیا ہے۔

دریں اثنا، چین کے نیشنل ہیلتھ کمیشن نے اتوار کو کہا ہے کہ وہ اب ملک میں روزانہ کورونا انفیکشن کا ڈیٹا جاری نہیں کرے گا۔

دارالحکومت بیجنگ کے اسپتالوں میں آئی سی یو پر دباؤ بڑھتا جا رہا ہے اور ملک میں کورونا انفیکشن کے کیسز میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے۔

کمیشن کی طرف سے جاری کردہ حتمی اعداد و شمار میں ملک میں کورونا کے معاملات میں اضافہ ہونے کی بات کہی گئی تھی، لیکن کووڈ-19 کی وجہ سے کوئی موت نہیں ہوئی۔

تاہم کچھ میڈیا رپورٹس میں دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ چین میں کورونا انفیکشن سے ایک دن میں تقریباً پانچ ہزار افراد ہلاک ہو رہے ہیں۔

کورونا سے متعلق پابندیوں میں نرمی کی وجہ سے پورے ملک میں انفیکشن کی کم جانچ کی جا رہی ہے۔

چینی حکام کا خیال ہے کہ جنوری میں چین میں کورونا وبا کی ایک اور لہر آسکتی ہے۔ اس دوران لوگوں کی بڑی تعداد نئے سال میں سفر کرتی ہے۔

یہ بھی پڑھیں

حمایت

ایک آئرش اہلکار: فلسطین کے لیے ہماری حمایت استعمار اور قبضے کے مشترکہ تجربے پر مبنی ہے

پاک صحافت ڈبلن میں سن فین کے ایک قانون ساز، ڈیتی ڈولان نے اعلان کیا …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے