یوکرائنی فوج کے جرائم کا کھلا پٹارا

یوکرین

پاک صحافت ایمنسٹی انٹرنیشنل نے یوکرین پر حالیہ مہینوں میں ہونے والے جرائم کا الزام عائد کیا ہے۔

ایمنسٹی انٹرنیشنل نے اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ یوکرائنی فوج کی جانب سے استعمال کیے جانے والے ہتھکنڈے انسانی حقوق کے بین الاقوامی قوانین کی خلاف ورزی اور عام شہریوں کی زندگیوں کے لیے خطرناک ہیں۔ یوکرین کی فوج جو حربہ استعمال کر رہی ہے ان میں سے ایک رہائشی علاقوں میں ہتھیاروں کی حفاظت ہے جہاں لوگ رہتے ہیں۔

یہ پہلا موقع ہے جب کوئی بین الاقوامی ادارہ یوکرین پر جرائم کا الزام لگا رہا ہے۔ ماضی میں مغربی ممالک بالخصوص امریکا یوکرائن میں ہونے والے جرائم کا الزام روس پر عائد کرتے ہوئے کہتے تھے کہ روس ان جرائم کا ذمہ دار ہے جب کہ روسی حکام بارہا کہہ چکے ہیں کہ یوکرین کی جانب لڑنے والے فوجیوں اور نیم فوجی دستوں کو مجبور کیا گیا کہ وہ یوکرین میں ہونے والے جرائم کا ذمہ دار ہے۔ سکول اور ہسپتال بھی انہوں نے اپنے مورچے بنا لیے ہیں۔

اس کی وجہ یہ ہے کہ یوکرین کی طرف سے لڑنے والے یوکرینی فوجیوں اور فورسز کو اس بات کا علم ہے کہ روسی فوج اسکولوں اور اسپتالوں کو اپنے حملوں کا نشانہ نہیں بنائے گی، اس لیے انہوں نے ان مقامات کو اپنی عسکری سرگرمیوں کے لیے یقین دہانی کرائی اور ان جگہوں پر جو کچھ بھی ہوتا ہے، اس کا الزام جھوٹ پر ہوتا ہے۔ روسی فوج پر اور کسی کا دھیان نہیں جائے گا کہ یہ جرائم یوکرین کی طرف سے لڑنے والی روسی افواج نہیں کر رہی ہیں۔

اسی طرح یوکرین کے فوجی شہریوں کو انسانی ڈھال کے طور پر استعمال کر رہے ہیں اور انہیں رہائشی علاقوں سے نکلنے کی اجازت بھی نہیں دے رہے ہیں۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ وہ اچھی طرح جانتے ہیں کہ اگر لوگ رہائشی علاقے چھوڑ کر چلے جائیں گے تو وہ انسانی ڈھال کے طور پر کیا استعمال کریں گے۔ اسی طرح یوکرین کی فورسز ان لوگوں پر گولیاں چلاتی ہیں جو رہائشی علاقے چھوڑ کر فرار ہونا چاہتے ہیں۔ اس سے یوکرین کے رہائشی علاقوں اور شہروں میں رہنے والے لوگوں میں یہ یقین پیدا ہوا کہ جب یوکرین کی فوجیں فرار ہونے کے بعد انہیں گولی مار دیتی ہیں تو بھاگنے سے بہتر ہے کہ نہ بھاگیں، شاید صرف جان بچانے کے لیے بھاگنا نہیں۔

ایمنسٹی انٹرنیشنل کے معائنہ کاروں نے اپنی آنکھوں سے دیکھا کہ یوکرین کی افواج نے اس ملک کے 29 سکولوں کو میدان جنگ بنا دیا ہے اور وہ 29 سکولوں میں سے 22 کو میدان جنگ کے طور پر استعمال کر رہی ہیں۔ سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ کیا مغربی اور یورپی لوگ اس بات سے واقف نہیں ہیں کہ یوکرین کے فوجی اس ملک کے اسکولوں اور اسپتالوں کو جنگی محاذ اور عام شہریوں کو انسانی ڈھال کے طور پر استعمال کررہے ہیں؟ باخبر حلقوں کا خیال ہے کہ یوکرین کی حمایت کرنے والے مغربی اور یورپی ممالک بخوبی جانتے ہیں کہ یوکرین کے فوجی روسی فوجیوں کا مقابلہ کرنے کے لیے کیا کر رہے ہیں اور ان ممالک کو اس بات کا بھی علم ہے کہ یوکرینی فوجیوں اور جنگجوؤں کو مارا جا رہا ہے۔یہ عمل بین الاقوامی قوانین کی صریح خلاف ورزی ہے، لیکن جس طرح مغربی اور یورپی ممالک دنیا کے بہت سے معاملات میں دوہرا معیار اپناتے ہیں، اسی طرح یہ ممالک بھی یوکرائنی فوجیوں کے اقدامات کے حوالے سے دوہرے معیار سے کام لے رہے ہیں۔

تاہم باخبر حلقوں کا خیال ہے کہ روس یوکرین جنگ کے طول دینے کی سب سے اہم وجہ مغربی اور یورپی ممالک کی جانب سے یوکرین کی وسیع حمایت ہے اور یہ حمایت جان و مال کی بڑی تباہی کا باعث بن رہی ہے اور جب تک یہ حمایت اور دوہرا معیار برقرار رہے گا۔ اس وقت تک روس-یوکرین جنگ کے خاتمے کی توقع منطق سے بالاتر ہے۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں