فوجی

2000 فوجیوں نے ہتھیار ڈال دیئے

ماسکو {پاک صحافت} روس کے وزیر دفاع سرگئی شوئیگو نے کہا ہے کہ ماریوپول میں آزووسٹال سٹیل ورکس میں چھپے ہوئے تقریباً 2000 یوکرینی فوجیوں نے اب تک ہتھیار ڈال دیے ہیں۔

روس کی سرکاری خبر رساں ایجنسی تاس کی رپورٹ کے مطابق اب تک سینکڑوں یوکرائنی جنگجو روسی افواج کے سامنے ہتھیار ڈال چکے ہیں، حالانکہ ماسکو اور کیف نے تعداد کے بارے میں مختلف اندازے لگائے ہیں۔

روسی فوجیوں نے 19 اپریل کو پلانٹ پر حملہ کر کے اس کے بڑے حصے کو تباہ کر دیا۔ تاہم روسی فوج کی بڑی تعداد کے باوجود یوکرین کے فوجی کئی دن کھڑے رہے۔

اس سے قبل یہ خبریں آئی تھیں کہ یوکرین نے اپنے جنگجوؤں کو اپنی جان بچانے کا حکم دیتے ہوئے کہا کہ ان کا روسی فوجیوں کا مقابلہ کرنے کا مشن اب مکمل ہو گیا ہے لیکن پلانٹ چھوڑنے والے فوجیوں کو ہتھیار ڈالنے کے لیے نہیں کہا۔

اس کے نتیجے میں یوکرائنی فوجیوں کا مستقبل غیر یقینی دکھائی دے رہا ہے۔ یوکرین کا کہنا ہے کہ وہ جنگی قیدیوں کے تبادلے کا منتظر ہے، جب کہ روس جنگی جرائم کے لیے ان میں سے کچھ کو لینے کے لیے کوشاں ہے۔

دریں اثنا، یوکرین کے جنگی جرائم کے مقدمات میں مقدمے کا سامنا کرنے والے ایک روسی فوجی نے ایک شہری کو قتل کرنے کا اعتراف کیا ہے اور اسے قید کی سزا کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں

نیوزیلینڈ

نیوزی لینڈ نے اسرائیل کے جرائم سے منسلک حماس کے اثاثے منجمد کر دیے

پاک صحافت نیوزی لینڈ نے فلسطین کے خلاف مغربی پالیسیوں کے مطابق اور غزہ میں …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے