بائیڈن

امریکی صدر جو بائیڈن کی مقبولیت کیوں کم ہو رہی ہے؟

واشنگٹن {پاک صحافت} امریکہ میں صدر کا انتخاب ہر چار سال بعد ہوتا ہے۔ پارلیمانی انتخابات ہر دو سال بعد ہوتے ہیں۔ یہ انتخابات، جو صدر کی مدت کے وسط میں ہوتے ہیں، وسط مدتی کہلاتے ہیں۔ امریکی پارلیمانی انتخابات کے انعقاد میں اب صرف تین ماہ رہ گئے ہیں جبکہ صدر جو بائیڈن کی مقبولیت میں مسلسل کمی واقع ہو رہی ہے۔

موصولہ رپورٹ کے مطابق رائے عامہ کے مختلف جائزوں کی اوسط کی بنیاد پر ٹی وی چینل سی این این نے بتایا ہے کہ اس وقت امریکی صدر جو بائیڈن کی اپروول ریٹنگ صرف 39 فیصد ہے۔ یعنی ووٹروں کی اتنی ہی تعداد ان کے کام سے خوش ہے۔ جب کہ بطور صدر ان کی کارکردگی سے ناخوش ووٹرز کی تعداد 55 فیصد تک پہنچ گئی ہے۔ اس سال جنوری کے وسط میں بائیڈن کی منظوری کی درجہ بندی 41 فیصد رہی۔ یعنی گزشتہ تین ماہ میں اس میں دو فیصد کمی آئی ہے۔ سیاسی تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ بائیڈن کی مقبولیت سے متعلق بری خبر ڈیموکریٹک پارٹی کے لیے بری خبر ہے۔ ان کے مطابق اگر ہم تاریخ پر نظر ڈالیں تو یہ بات واضح ہو جاتی ہے کہ وسط مدتی انتخابات میں حکمران جماعت کی کارکردگی کا براہ راست تعلق صدر کی مقبولیت سے ہے۔ سی این این کے تجزیے میں کہا گیا ہے کہ دو سابقہ ​​ڈیموکریٹک صدور کی وسط مدتی مدت کے وقت بائیڈن کی مقبولیت کی سطح موجودہ صدر سے کم ہے۔ یہ دونوں سابق صدور، باراک اوباما اور بل کلنٹن تھے۔ تجزیہ کاروں کے مطابق حکمران جماعت کو ویسے بھی وسط مدتی انتخابات میں نقصان ہے۔ اگر صدر کی مقبولیت بھی کم ہوئی تو بدتر نتائج کے امکانات ہیں۔

ساتھ ہی ماہرین کا خیال ہے کہ عام طور پر حکمران صدر کو جنگی ماحول کا فائدہ ملتا ہے۔ لیکن یوکرائن کی جنگ کے جاری ماحول کے باوجود جو بائیڈن کو اس سے کوئی سیاسی فائدہ اٹھاتے ہوئے نہیں دیکھا گیا۔ اس کی وجہ شاید ملک میں مہنگائی کی انتہائی بلند سطح ہے۔ مارچ میں افراط زر کی شرح 8.5 فیصد تک پہنچ گئی۔ یہ پچھلے 40 سالوں کا ریکارڈ ہے۔ اب امریکہ میں کورونا وبا کی نئی لہر آنے کا خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے۔ اگر یہ لہر پچھلی لہروں کی طرح ہے تو پھر بائیڈن انتظامیہ سے عدم اطمینان مزید بڑھ سکتا ہے۔ رائے عامہ کے حالیہ جائزوں سے ظاہر ہوا ہے کہ امریکی رائے دہندگان کی اکثریت اس بات سے خوش ہے جس طرح بائیڈن انتظامیہ نے یوکرین کے بحران سے نمٹا ہے۔ لیکن مہنگائی اور کورونا وبا کے نئے خدشات امریکی شہریوں کے بنیادی خدشات ہیں۔ بائیڈن انتظامیہ کو ان محاذوں پر ناکام قرار دیا جا رہا ہے۔

یہ بھی پڑھیں

نظر سنجی

ایک سروے کے نتائج کے مطابق: اس ملک میں بدامنی کے بارے میں امریکی عوام کی تشویش میں اضافہ ہوا ہے

پاک صحافت اپسوس کے سروے کے نتائج کے مطابق امریکہ کے سابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے