مسلم خواتین

بھارت: ایپ پر مسلم خواتین کی تصاویر اپ لوڈ کرنے کا معاملہ پھر بحث میں، شیو سینا کا قصورواروں کے خلاف کارروائی کا مطالبہ

نئی دہلی {پاک صحافت} ایپ پر بھارت میں مسلم خواتین کی تصاویر اپ لوڈ کرنے کا معاملہ ایک بار پھر سرخیوں میں آگیا ہے۔

شیوسینا کی راجیہ سبھا ایم پی پرینکا چترویدی نے یکم جنوری کو کہا کہ گٹ ہب پلیٹ فارم کے ذریعے سیکڑوں مسلم خواتین کی تصاویر ایک ایپ پر اپ لوڈ کی گئی ہیں۔

چترویدی نے ممبئی پولیس کے ساتھ معاملہ اٹھایا تھا اور مجرموں کو جلد سے جلد گرفتار کرنے کا مطالبہ کیا تھا۔

پرینکا چترویدی نے ٹوئٹ کرکے کہا تھا کہ میں نے سی پی ممبئی پولیس اور ڈی سی پی کرائم رشمی کرندیکر سے بات کی ہے، وہ اس معاملے کی تحقیقات کریں گے، اس بارے میں مہاراشٹر کے ڈی جی پی سے بھی بات کی ہے کہ وہ اس معاملے میں مداخلت کریں، امید ہے کہ اس میں ملوث افراد کے خلاف کارروائی ہوگی۔ -خواتین اور صنفی امتیاز کو گرفتار کیا جائے گا۔

اس پورے معاملے پر ممبئی پولیس نے کہا کہ اس نے معاملے کا نوٹس لیا ہے اور متعلقہ حکام کو کارروائی کرنے کو کہا گیا ہے۔

سوشل میڈیا صارفین کا کہنا ہے کہ ‘بلی بائی’ ایپ بھی سلی ڈیلز کی طرح کام کرتی ہے، اسے کھولتے ہی مسلم خواتین کے چہرے نظر آنے لگتے ہیں۔

مسلم خواتین، جن کی ٹوئٹر پر نمایاں موجودگی ہے، نے بُلّی بائی پر اپ لوڈ ہونے والی اپنی تصاویر کا اسکرین شاٹ ٹویٹ کیا ہے۔

دی وائر کی صحافی عصمت آرا نے پلیٹ فارم پر بنائی گئی اپنی پروفائل کا اسکرین شاٹ شیئر کرتے ہوئے لکھا کہ ’یہ بہت افسوسناک ہے کہ ایک مسلمان خاتون کی حیثیت سے مجھے نئے سال کا آغاز اسی خوف اور نفرت کے ساتھ کرنا پڑ رہا ہے۔

عصمت نے اس معاملے میں دہلی سائبر پولس میں شکایت درج کرائی ہے۔ دہلی پولیس نے ٹویٹ کیا ہے کہ وہ اس معاملے کی تحقیقات کر رہی ہے۔

وہیں مرکزی وزیر اطلاعات اشونی وشنو نے کہا ہے کہ آج صبح ہی گٹ ہب نے اطلاع دی ہے کہ اس ایپ کو بلاک کر دیا گیا ہے، پولیس افسران معاملے کی جانچ کر رہے ہیں۔

گزشتہ سال جولائی میں جب سلی ڈیلز ایپ پر اس طرح سے مسلم لڑکیوں کی تصویر اپ لوڈ کی جا رہی تھی، تب اس کے بارے میں ایف آئی آر بھی درج کرائی گئی تھی، لیکن پتہ چلا ہے کہ پولس اس معاملے میں کوئی کارروائی نہیں کر رہی ہے۔

یہ بھی پڑھیں

نیوزیلینڈ

نیوزی لینڈ نے اسرائیل کے جرائم سے منسلک حماس کے اثاثے منجمد کر دیے

پاک صحافت نیوزی لینڈ نے فلسطین کے خلاف مغربی پالیسیوں کے مطابق اور غزہ میں …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے