پی ڈی ایم کے ترجمان میاں افتخار نے حکومت پر شدید تنقید کرتے ہوئے لانگ مارچ کا عندیہ دے دیا

میاں افتخار

پاکستان ڈیمو کریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کے ترجمان میاں افتخار نے حکومت پر شدید تنقید کرتے ہوئے کہا ہے کہ جنوری کے آخری ہفتے میں لانگ مارچ ہوگا، مینار پاکستان کو تالاب بنا دیا گیا ہے، حکومت نے گرفتاریاں شروع کر دی ہیں۔

اسلام آباد میں پی ڈی ایم کی اسٹیرنگ کمیٹی کا اجلاس ختم ہوگیا، اجلاس کے بعد پریس کانفرنس کرتے ہوئے ترجمان پی ڈی ایم میاں افتخار نے کہا کہ ڈی جے بٹ کو بھی گرفتار کیا گیا ہے، جلسہ روکنے کے لیے تمام کارروائیاں کی جا رہی ہیں۔

میاں افتخار نے کہا کہ حکمران اتنا ڈر گئے ہیں جلسہ لازمی ہوگا، یہ حکومت دھاندلی کی پیداوار ہے، ہم نے نہ پہلے مانا نہ آئندہ مانیں گے، تمام ادارے اپنی حدود میں رہ کر کام کریں۔

ترجمان پی ڈی ایم نے کہا کہ وزیرستان جاتے ہوئے ڈی آئی خان میں عمران خان نے کہا کہ آگے جانا مشکل ہے مجھے گرفتار کرو، ہم نے گرفتار نہ کرنے کی ہدایت دی تھی۔

میاں افتخار نے کہا کہ عمران خان شکار کرنے تو گیا ہوگا لیکن احتجاج کرنے نہیں گیا، لوگوں سے اپیل ہے ایس او پی پر عمل کریں، ماسک اور سینیٹائزر دیں گے۔

انہوں نے کہا کہ ہم گرفتاری کے لئے تیار ہیں، قانونی اور آئینی راستہ اپنائیں گے، ہم ڈرنے والے نہیں، عمران کی طرح نہیں ہیں، میاں افتخار نے کہا کہ اعتزاز احسن سینیئر آدمی ہیں، بلاول نے ان سے متعلق اچھا جواب دیا ہے، ترجمان پی ڈی ایم نے کہا کہ ہمیں الگ الگ تھریٹ ملی ہوئی ہیں، یہ الرٹ خود جاری کرتے ہیں۔

اس موقع پر مسلم لیگ ن کے رہنما احسن اقبال نے کہا کہ تھریٹ الرٹ ہوتا ہے تو شہریوں کی حفاظت کرنا حکومت کا کام ہے، عمران خان کو بھی تھریٹ آرہی تھی لیکن ہم نے تحفظ دیا، احسن اقبال نے کہا کہ تھریٹ الرٹ کے تدارک کے لئےحکومت اقدامات یقینی بنائے۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں