اسرائیلی فوجی

اسرائیل غزہ میں حماس کے سرنگوں کے نیٹ ورک کو سمندر کے پانی میں ڈبونا چاہتا ہے

پاک صحافت امریکی اخبار وال سٹریٹ جرنل نے کہا ہے کہ صیہونی حکومت نے بڑے پیمانے پر حماس کی سرنگوں کے نیٹ ورک کو بحیرہ روم کے پانی سے بھرنے کی تیاری کر لی ہے اور اس طرح حماس کے فوجی وہاں سے نکلنے پر مجبور ہو جائیں گے۔

اس سے قبل اس اخبار نے اپنی رپورٹس میں انکشاف کیا تھا کہ اسرائیلی فوج خاص قسم کے بموں کے ذریعے حماس کی سرنگوں کو تباہ کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔

وال اسٹریٹ جرنل کا کہنا ہے کہ اسرائیلی فوج نے پانی کے کم از کم پانچ بڑے پمپ تیار کیے ہیں جن کی مدد سے ان سرنگوں کو سمندر کے پانی سے بھرنے کا منصوبہ مکمل کیا جائے گا۔ یہ واٹر پمپ ایک کلومیٹر کے فاصلے پر رکھے گئے ہیں۔

پانی کے یہ بڑے پمپ فی گھنٹہ ہزاروں کیوبک میٹر پانی پمپ کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں اور چند ہفتوں میں سرنگوں کو مکمل طور پر پانی سے بھر دیں گے۔

رپورٹ میں کہا گیا کہ ابھی تک یہ معلوم نہیں ہوسکا ہے کہ آیا اسرائیل حماس کے کنٹرول سے اپنے قیدیوں کو رہا کرنے سے پہلے اس واٹر پمپ کو استعمال کرسکتا ہے۔

ایک اسرائیلی اہلکار نے کہا کہ اسرائیلی فوج مختلف قسم کے آلات اور تکنیکوں کا استعمال کرکے حماس کی طاقت کو کم کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔

وال سٹریٹ جرنل کے مطابق اسرائیل نے امریکہ کو اس منصوبے کے بارے میں پہلی بار نومبر میں بتایا تھا لیکن فی الحال امریکی حکومت کو نہیں معلوم کہ نیتن یاہو کی حکومت کب اس منصوبے پر عمل درآمد شروع کر سکتی ہے اور ایسا بھی لگتا ہے کہ ابھی اسرائیل کی فوج نے ایسا نہیں کیا ہے۔ اس حوالے سے حتمی فیصلہ کر لیا۔

جب روئٹرز نے امریکی حکام سے اس رپورٹ کے بارے میں پوچھا تو ان کا کہنا تھا کہ یہ منطقی ہے کہ اسرائیل ان سرنگوں کو ایسی حالت میں رکھنا چاہتا ہے کہ انہیں استعمال نہ کیا جا سکے۔

یہ بھی پڑھیں

گیلنٹ

گیلنٹ: اسرائیل نے گزشتہ 75 سالوں میں ایسی جنگ نہیں دیکھی

پاک صحافت صیہونی حکومت کے وزیر جنگ یوف گیلنٹ نے غزہ کی جنگ میں اسرائیلی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے