اسرائیل

ھآرتض: نیتن یاہو کے خلاف آج کے مظاہرے میں 100,000 افراد نے شرکت کی

پاک صحافت صیہونی حکومت کے نیوز ذرائع نے بنجمن نیتن یاہو کی حکومت کے خلاف آج کے مظاہروں میں ایک لاکھ آبادکاروں کی شرکت کا اعلان کیا ہے۔

پاک صحافت کی آج (پیر) کی رپورٹ کے مطابق صہیونی اخبار “ھآرتض” نے اطلاع دی ہے کہ یروشلم میں کنیسٹ  (صیہونی حکومت کی پارلیمنٹ) کے سامنے آج کے مظاہرے میں 100,000 آباد کاروں نے شرکت کی جو نیتن یاہو کے مجوزہ عدالتی اصلاحات کے قانون کے خلاف احتجاج میں منعقد کیا گیا تھا۔

العربی الجدید ویب سائٹ نے اطلاع دی ہے کہ آج اسرائیلی پولیس نے کئی مظاہرین کو گرفتار کیا جنہوں نے کنیسیٹ کے ارکان کے گھروں کے سامنے مظاہرہ کیا تاکہ انہیں کنیسٹ جانے سے روکا جا سکے اور “عدالتی بغاوت” کو منظور نہ کرنے کے نتیجے میں۔

اس کے ساتھ ہی اس حکومت کے عدالتی نظام میں تبدیلیوں کے بل پر نظرثانی کے پہلے دور کے لیے صیہونی حکومت کی کنیسٹ (پارلیمنٹ) کے فیصلے کے ساتھ ہی متعدد مشتعل صیہونی حکمران بست کے نمائندوں کے گھروں کے سامنے دھرنا دے کر بیٹھ گئے۔ اتحاد یا پارلیمنٹ جانے کے لیے ان کی گاڑیوں کو روکا اور مظاہرہ کیا۔

“بنجمن نیتن یاہو” کی سربراہی میں انتہائی دائیں بازو کے حکمران اتحاد نے اقتدار میں آنے کے بعد سے کئی ایسے اقدامات اور فیصلے کیے ہیں، جو حزب اختلاف کے دھڑے اور صیہونی حکومت کے سربراہ کے مطابق، اس حکومت کو مزید بگاڑ کی طرف لے جانے کا سبب بنیں گے۔ اندرونی بحران اور یہاں تک کہ خانہ جنگی.. صیہونی حکومت کے عدالتی نظام میں تبدیلیوں کے لیے نیتن یاہو کی کابینہ کا فیصلہ اب حکمران اتحاد اور حزب اختلاف کے دھڑے کے درمیان سیاسی کشیدگی اور اختلافات کا باعث بنا ہے۔

گزشتہ ہفتوں میں مقبوضہ فلسطین کے شمال سے جنوب تک درجنوں شہر جن میں تل ابیب، حیفا، مقبوضہ یروشلم، بیر شیبہ، ریشون لیٹزیون اور ہرزلیہ شامل ہیں، نیتن یاہو کی انتہائی دائیں بازو کی کابینہ کے خلاف مظاہروں کا منظر پیش کر رہے ہیں۔ سنیچر کی رات ہزاروں افراد نے نیتن یاہو کی کابینہ کے خلاف تل ابیب اور مقبوضہ فلسطین کے دیگر شہروں میں ساتویں ہفتے بھی مظاہرہ کیا۔

یہ مظاہرے نیتن یاہو کی زیر قیادت انتہائی دائیں بازو کی کابینہ کے اتحاد اور صیہونی حکومت کے سابق وزیر اعظم یائر لاپڈ کی سربراہی میں حزب اختلاف کے دھڑے کے درمیان شدید تصادم کے سائے میں منعقد کیے گئے ہیں۔

صیہونی حکومت کی اپوزیشن کے رہنماؤں کا خیال ہے کہ عدالتی نظام میں تبدیلیوں کے لیے نیتن یاہو کی کابینہ کا ہدف اسے کمزور کرنا ہے اور نیتن یاہو کی کوشش ہے کہ وہ مالی بدعنوانی اور رشوت ستانی کے تین مقدمات کی سماعت کو روکے جائیں۔

صیہونی حکومت کی حکمران کابینہ کے تجویز کردہ عدالتی اصلاحاتی بل کے مخالفین نے اعلان کیا ہے کہ وہ ان اصلاحات کے خلاف احتجاج کے لیے پیر کی سہ پہر مقبوضہ علاقوں میں بڑے مظاہرے کریں گے۔

اس مظاہرے کے منتظمین نے نیتن یاہو کی کابینہ کے تجویز کردہ عدالتی اصلاحاتی بل کے خلاف ملک گیر صیہونی مظاہرے کی کال دی ہے اور جب کہ صیہونی حکومت کی کنیسٹ (پارلیمنٹ) آج اس معاملے پر ووٹنگ کے پہلے مرحلے کا انعقاد کر رہی ہے، اپوزیشن جمع ہو گئی ہے۔

یہ بھی پڑھیں

گیلنٹ

گیلنٹ: اسرائیل نے گزشتہ 75 سالوں میں ایسی جنگ نہیں دیکھی

پاک صحافت صیہونی حکومت کے وزیر جنگ یوف گیلنٹ نے غزہ کی جنگ میں اسرائیلی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے