فلسطینی عوام

حریف سیاسی دھڑوں کے درمیان شدید تصادم، صیہونی حکمرانی کے لیے اب تک کا سب سے بڑا چیلنج

پاک صحافت ہفتے کے روز تل ابیب میں ایک بار پھر صیہونی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو کی نئی حکومت کے خلاف زبردست مظاہرے کیے جا رہے ہیں۔

ایک اندازے کے مطابق سنیچر کو ہونے والے مظاہرے نیتن یاہو کی دائیں بازو کی حکومت کے خلاف اب تک کے سب سے بڑے مظاہرے ہیں۔ اسرائیل کے حریف سیاسی دھڑوں نے اس مظاہرے کی حمایت اور اس کے خلاف اپنی پوری طاقت جھونک دی ہے۔

نیتن یاہو نے سخت گیر اور دائیں بازو کی صہیونی سیاسی جماعتوں کے ساتھ مل کر اپنی حکومت بنائی ہے۔ یہ اسرائیل کی اب تک کی سب سے بنیاد پرست دائیں بازو کی حکومت ہے جس کے بارے میں خود صہیونی سیاسی حلقوں میں گہری تشویش پائی جاتی ہے۔

اسرائیلیوں کا خیال ہے کہ نیتن یاہو اپنے اوپر لگنے والے الزامات سے بچنے کے لیے اور اقتدار کے لالچ میں جمہوری نظام کی قربانی دے رہے ہیں، کیونکہ ان کے ساتھ اقتدار میں شریک دھڑے نہ تو کسی قسم کی اقدار پر یقین رکھتے ہیں اور نہ ہی جمہوریت پر یقین رکھتے ہیں۔ اس سے فلسطینیوں کے ساتھ صیہونی حکومت کا تنازع بڑھے گا اور یہ علاقہ اس کے ہاتھ سے نکل جائے گا۔

نیتن یاہو کے حریف سابق اسرائیلی وزیراعظم یائر لیپڈ دائیں بازو کی حکومت کی اپوزیشن کی قیادت کر رہے ہیں۔ لیپڈ نے صہیونی پولیس کے سربراہ سے مخالف مظاہرین کو تحفظ فراہم کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ مجھے امید ہے، آپ پولیس کو مظاہرین کے ساتھ احترام کے ساتھ پیش آنے کا حکم دیں گے، تاکہ لوگ اپنے جمہوری حق کو استعمال کرتے ہوئے اپنے احتجاج کا اظہار کرسکیں۔ یہ آپ کی ذمہ داری ہے کہ پولیس غیر جانبدار رہے اور طاقت کے زور پر کام نہ کرے۔

نیتن یاہو کی کابینہ میں شامل کئی وزراء نے مخالفین کو گرفتار کرنے اور کریک ڈاؤن کرنے کی دھمکی دی ہے۔ دائیں بازو کی جماعت ماہان جیوش کے سربراہ اِتمار بن غفار نے حزبِ اختلاف کے رہنماؤں کی گرفتاری کا مطالبہ کیا ہے، جن میں لیپڈ اور گانٹز بھی شامل ہیں، جنہوں نے ہفتے کے مظاہروں کو منظم کرنے میں اہم کردار ادا کیا تھا۔

تاہم ان دھمکیوں کا مظاہرین پر کوئی اثر نہیں ہوا اور اپوزیشن رہنماؤں نے لوگوں سے ان مظاہروں میں بڑی تعداد میں شرکت کی اپیل کی ہے۔

اسرائیل کے موجودہ سیاسی ماحول کے پیش نظر یہ پیشین گوئی کرنا مشکل نہیں ہے کہ اگر حریف دھڑوں کے درمیان کشمکش اسی طرح جاری رہی تو صیہونی حکومت کو غیر معمولی اندرونی مسائل کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے اور ناجائز حکومت اندر سے ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہو سکتی ہے۔

یہ بھی پڑھیں

فوجی

صہیونیوں نے 576 فوجیوں کی ہلاکت کا اعتراف کیا ہے

پاک صحافت غزہ کی پٹی میں ایک اور صیہونی فوجی کی ہلاکت کے ساتھ ہی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے