اسرائیل

صیہونی حکومت کی نسل پرستانہ پالیسی کے خلاف عالمی ماہرین تعلیم کا موقف

پاک صحافت بین الاقوامی علمی مہم نے ایک بیان شائع کرتے ہوئے صیہونی حکومت کے علمی بائیکاٹ اور اس کے سائنسی پروگراموں میں شرکت پر پابندی عائد کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

پاک صحافت کے مطابق الیوم کی رائے کا حوالہ دیتے ہوئے دنیا بھر کے 250 سے زائد ماہرین تعلیم نے فلسطینی عوام کے ساتھ اظہار یکجہتی کرتے ہوئے صیہونی حکومت کے خلاف بیان جاری کیا۔

اس بیان میں جو “بین الاقوامی علمی مہم” کی طرف سے جاری کیا گیا ہے، ماہرین تعلیم نے صیہونی حکومت کے علمی بائیکاٹ، اس کے سائنسی پروگراموں میں شرکت پر پابندی اور اس حکومت کے ہوائی اڈوں کو استعمال نہ کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

ماہرین تعلیم نے یہ بیان فلسطینی عوام کے خلاف صیہونی حکومت کی جارحیت میں اضافے اور اس کی نسل پرستانہ پالیسی کے جواب میں جاری کیا ہے۔

اس مہم کے سکریٹری جنرل “رمزی اودیح” نے تاکید کی کہ بین الاقوامی اکیڈمک ایسوسی ایشن صیہونی حکومت کے خلاف علمی بائیکاٹ کو فعال کرنے اور اس کے ہوائی اڈوں کے استعمال کو روکنے کے لیے پرعزم ہے۔

اس سے قبل امریکن اسٹڈیز ایسوسی ایشن، ایشین امریکن اسٹڈیز ایسوسی ایشن اور دیگر ممتاز علمی اداروں نے بھی ایسی ہی پالیسی پر عمل کرتے ہوئے صیہونی حکومت کا بائیکاٹ کیا تھا۔

یہ بھی پڑھیں

گیلنٹ

گیلنٹ: اسرائیل نے گزشتہ 75 سالوں میں ایسی جنگ نہیں دیکھی

پاک صحافت صیہونی حکومت کے وزیر جنگ یوف گیلنٹ نے غزہ کی جنگ میں اسرائیلی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے